Book Name:Sarkar ka Andaz e Tableegh e Deen

بَہُت بڑے عالَم حضرتِ سیِّدُنازید بن سَعْنَہرضی اللّٰہ تعالٰی عنہ سرکارِ دو عالمصَلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے قدموں سے لپٹ گئے اور ہمیشہ کے لیے غلامی کا پٹّا گلے میں ڈال لیا ،دولتِ اِیمان سے دامَن بھر لیا اوراِس خوشی میں اپنا آدھا مال بھی سرکار صَلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے غلاموں پر نچھاور کر دیا۔

بزرگانِ دین کا صبروتحمل اورحسنِ اخلاق

عرض:اسلام کی اشاعت میں بزرگانِ دین کی مساعی ٔ جمیلہ اورحسنِ اَخلاق وتَحَمُّل و بُرد باری کے کچھ واقعات بیان فرما دیجیے ۔

ارشاد:ہمارے بزرگانِ دین رَحِمَہُمُ اللّٰہُ الْمُبِین علم وعمل کے پیکر ہوتے تھے۔ ہر ایک کے ساتھ حسنِ اخلاق سے پیش آتے یہاں تک کہ غیر مسلم ان کے حسنِ اخلاق اور اعلیٰ کردار سے متاثر ہوکر دامنِ اسلام میں آجاتے چنانچہ تذکرۃ الاولیا میں ہے کہ حضرتِ سیِّدُنا بایزید بسطامیقُدِّسَ سِرُّہُ السّامی کا ایک یہودی پڑوسی تھا وہ کہیں سفر میں چلا گیا اور اِفلاس کی وجہ سے اس کی بیوی چَراغ تک روشن نہیں کرسکتی تھی اور تاریکی کی وجہ سے اس کا بچّہ تمام رات روتا رہتا۔ آپ رَحْمَۃُ اللّٰہ ِتعالٰی علیہ ہر رات اس کے یہاں چَراغ رکھ آتے اور جس وقت وہ یہودی سفر سے واپَس آیا تو اس کی بیوی نے تمام واقعہ سنایا جس کو سن کر اس نے کہا کہ یہ بات کس قدر افسوس ناک ہے کہ اِتنا عظیم

 



Total Pages: 32

Go To