Book Name:Rasail e Madani Bahar

ڈاکٹروں سے بہت علاج کروایا جب کوئی دواکارگر نہ ہوئی توڈاکٹروں نے آپریشن تجویز کر دیا۔ میں نے دعوت ِاسلامی کے مدنی قافلوں میں بغیر آپریشن ہی بیماروں کی صحت یابی کے ایمان افروز واقعات سنے تو میں آپریشن کروانے سے قبل دعوتِ اسلامی کے تحت سنّتوں کی تربیت کے لیے سفرکرنے والے تین دن کے مدنی قافلے کا مسافر بن گیا۔ عاشقانِ رسول کی صحبت میں رہ کرمیں نے اپنی شفایابی کی دعائیں مانگیں ۔ قافلے سے واپسی پرجب گھر پہنچا تو میری حیرت کی انتہانہ رہی کہ میری ناک کی ہڈی کامسئلہ حل ہو چکا تھا اور مجھے سانس لینے میں کسی قسم کی دشواری نہیں ہو رہی تھی۔ تادمِ تحریراس واقعہ کوتقریباًسولہ ماہ گزرچکے ہیں اَلْحَمْدُلِلّٰہِ  عَزَّوَجَلَّ  مجھے دوبارہ کبھی سانس لینے میں پریشانی نہیں ہوئی۔

 اللّٰہ  عَزّوَجَلَّ کی امیرِاہلسنّت  پَررَحمت ہواوران کے صد قے ہماری مغفِرت ہو۔

صَلُّوْاعَلَی الْحَبِیب!              صلَّی اللّٰہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد

(9)کمر کے درد سے خَلاصی

        باب المدینہ (کراچی) کے علاقے ملیر میں یٰسین اسکوائر کے رہائشی اسلامی بھائی کے بیان کاخلاصہ ہے :  دعوت ِاسلامی کے مدنی ماحول سے وابستہ ہونے سے پہلے مجھے اکثر کمر میں درد کی شکایت رہتی تھی۔ ڈاکٹروں حکیموں سے علاج کروانے کے باوجود کچھ افاقہ نہ ہوا ۔مجھ پر اللّٰہ  تَعَالٰی کا کرم ہوا اور میں دعوتِ اسلامی کے مشکبار مدنی ماحول سے وابستہ ہوگیا۔ مدنی ماحول میں اپنی اور ساری دنیا کے لوگوں کی اصلاح کی کوشش کے لیے مدنی قافلوں میں سفرکا ذہن ملا مزید مجھے بتایا گیا کہ مدنی قافلوں میں عاشقانِ رسول کی صحبت میں رہ کر کی جانے والی دعائیں قبول ہوتی ہیں چنانچہ میں نے آج سے تین سال پہلے اپنی کمر کی تکلیف سے چھٹکارا حاصل کرنے کی نیت سے مدنی قافلے میں سفر اختیار کیا۔ ہمارا مدنی قافلہ مدینۃ الاولیاء ( ملتان) کے مضافات میں پہنچا۔ عاشقانِ رسول کی صحبت میں سنّتیں سیکھتے ہوئے میں نے اپنی شفایابی کے لیے گڑگڑا کر دعائیں مانگیں ۔ مدنی قافلے سے واپسی پر مجھے محسوس ہواکہ درد میں کچھ افاقہ ہوا ہے۔ گھرپہنچنے پر تو میری خوشی کی انتہاء نہ رہی اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ  عَزَّوَجَلَّ  مجھے کمر کے درد سے نجات مل چکی تھی۔ وہ دن اور آج کا دن ہے دوبارہ کبھی کمر درد کی شکایت نہیں ہوئی۔

اللّٰہ   عَزّوَجَلَّ کی امیرِاہلسنّت  پَررَحمت ہواوران کے صد قے ہماری مغفِرت ہو۔

صَلُّوْاعَلَی الْحَبِیب!    صلَّی اللّٰہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد   

(10)اَولاد کی خُوشخبری مل گئی

        بابُ المدینہ (کراچی) میں رہائش پذیر اسلامی بھائی کے تحریری بیان کا خلاصہ ہے : دینی ماحول سے دوری کے باعث میری حالت ایسی ہو چکی تھی کہ  ایک مرتبہ دعوتِ اسلامی کے مدنی ماحول سے وابستہ کچھ اسلامی بھائی نیکی کی دعوت کے سلسلے میں میرے پاس تشریف لائے۔ افسوس! میں نے اُن کی بات سننے کے بجائے اُن کا مذاق اڑانا شروع کر دیا۔ خدا  عَزَّوَجَلَّ  کا کرنا ایسا ہوا کہ ایک دن اتفاقاً میں دعوتِ اسلامی کے عالمی مدنی مرکز فیضانِ مدینہ (باب المدینہ کراچی) میں ہونے والے ہفتہ وار سنّتوں بھرے اجتماع میں حاضر ہو گیا۔ وہاں ہونے والے سنّتوں بھرے بیان، ذکر اور رِقّت انگیز دُعا نے بہت متأثر کیا جس کی بدولت کچھ ہی دنوں بعد میں مدنی قافلے کا مسافر بن گیا۔ قافلے میں سفر کی برکت سے جہاں سنّتیں سیکھنے کا موقع ملا وہیں یہ برکت بھی حاصل ہوئی کہ اَلْحَمْدُلِلّٰہ ِ عَزَّوَجَلَّ  مجھے اولاد کی خوشخبری بھی مل گئی حالانکہ میں ایک عرصے سے اولاد کی نعمت سے محروم تھا۔ کرم بالائے کرم یہ کہ دورانِ قافلہ خواب میں شیخِ طریقت، امیرِاہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہکی زیارت بھی نصیب ہو گئی۔

اللّٰہ عَزّوَجَلَّ کی امیرِاہلسنّت  پَررَحمت ہواوران کے صد قے ہماری مغفِرت ہو۔

صَلُّوْاعَلَی الْحَبِیب!            صلَّی اللّٰہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد   

(11)آوارہ گردی چھوٹ گئی

       بابُ المدینہ (کراچی)کے مُقیم اسلامی بھائی کے بیان کالُبِّ لُباب پیشِ خدمت ہے : دعوتِ اسلامی کے مدنی ماحول میں آنے سے قبل میں گناہوں کی تاریک گھاٹیوں میں بھٹکتا پھر رہا تھا، لڑائی جھگڑاکرنا‘ چوری کرنا‘ آوارہ گردی کرنا میری عادت میں شامل تھا۔ میری ان حرکتوں کی وجہ سے گھراورمحلے والے مجھ سے بیزار تھے۔ آخرکارایک دن میری قسمت جاگ اٹھی، ہوا یوں کہ دعوتِ اسلامی کے ایک مُبلّغ اسلامی بھائی سے میری ملاقات ہوئی انہوں نے انفرادی کوشش کرتے ہوئے مدنی قافلے میں سفر کرنے کی ترغیب دلائی، ان کی انفرادی کوشش رنگ لائی اور میں نے ہاتھوں ہاتھ تین دن کے مدنی قافلے کی نیت کرلی اوراپنی نیت کوعملی جامہ پہناتے ہوئے مدنی قافلے کا مسافر بھی بن گیا مدنی قافلے میں عاشِقانِ رسول کی صحبت کی برکت سے مجھے فکرِ آخرت نصیب ہوئی۔ میں نے تمام گناہوں سے توبہ کی اور میٹھے میٹھے آقا صَلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ و سلَّم کی پیاری پیاری سنّت داڑھی شریف بھی چہرے پرسجالی اور سرپرعمامہ شریف کا تاج سجانے کی بھی نیت کرلی۔ یہ بیان دیتے وقت میں مدنی قافلہ ذِمّہ دارکی حیثیت سے مدنی کاموں کی دھومیں مچانے میں مصروف ہوں ۔

صَلُّوْاعَلَی الْحَبِیب!            صلَّی اللّٰہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد   

(12)پیدائشی مرض جاتا رہا

        نکیال (ضلع کوٹلی، کشمیر) کے علاقے پلیارنی کالونی میں رہائش پذیر اسلامی بھائی مدنی قافلے کی بدولت حاصل ہونیوالی برکات کچھ یوں بیان کرتے ہیں کہ دعوتِ اسلامی کے مشکبار مدنی ماحول سے وابستگی سے قبل میری بد اعمالیاں عروج پر تھیں ۔ علم ِدین سے دوری کے باعث زندگی کی انمول سانسیں فضولیات و لغویات میں ضائع کر رہا تھا، نماز جیسے اہم فریضے کی ادائیگی سے بھی یکسرغافل تھا، نیز میری چھوٹی بہن کی ایک آنکھ پیدائشی طور پر خراب تھی صبح جب بیدار ہوتی تو اس کی آنکھ نہ کھلتی۔ پانی سے دھونے کے بعد بھی بڑی مشکل سے کچھ آنکھ کھلتی۔ جیسے جیسے اس کی عمر بڑھتی جا رہی تھی ہماری پریشانی میں اضافہ ہوتا جا رہا تھا۔ اس پریشان کن مرض سے نجات کے لئے بہت سے ڈاکٹرز سے چیک اپ کروایا ان کی تجویز کردہ ادویات بھی استعمال کیں مگر مرض میں کمی



Total Pages: 81

Go To