Book Name:Faizan e Farooq e Azam jild 1

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!          صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

 

اٹھارہواں باب

فضائل فاروقِ اعظم بزبان اولیائے امتِ

اس باب میں ملاحظہ کیجئے۔۔۔۔

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا امام جعفر صادق رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

 شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا امام زین العابدین رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُناسفیان ثوری رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا امام مالک بن انسرَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا امام حسنرَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا زید بن علیرَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا مالک بن انسرَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا حضور داتا گنج بخشرَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا اعلی حضرترَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان برادراعلی سیِّدُنا رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا مفتی احمد یار خان نعیمی رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ

شان فاروقِ اعظم بزبان امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ

٭…٭…٭…٭…٭…٭

فضائل فاروقِ اعظم بزبان اولیاءِ امتِ

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے فضائل ومناقب سے متعلق احادیث مبارکہ ،  صحابہ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان  کے محبت وعقیدت بھرے اقوال اِسی کتاب کے باب  ’’ عشقِ رسول ‘‘  صفحہ ۴۱۹پرملاحظہ کیے جاسکتے ہیں   ،  اب یہاں   صحابہ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان  کے علاوہ دیگر اکابرین امت کے وہ اقوال بیان کیے جاتے ہیں   جو بلا واسطہ یا بالواسطہ سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی شان میں   ہیں  ۔

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا امام جعفر صادق

میرا اس سے کوئی واسطہ نہیں  :

حضرت سیِّدُنا امام جعفر صادق عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْخَالَقْ فرماتے ہیں  :   ’’ اَنَا بَرِيْءٌ مِمَّنْ ذَكَرَ اَبَا بَكْرٍ وَ عُمَرَ اِلَّا بِخَيْرٍ یعنی اس شخص سے میرا کوئی واسطہ نہیں   جو امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا ابوبکر صدیق رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ وسیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکا ذکر خیر وخوبی کے ساتھ نہ کرے۔ ‘‘  ([1])

جو ابوبکروعمرکی فضیلت نہیں   جانتاوہ جاہل ہے:

حضرت سیِّدُنا امام جعفر صادق عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْخَالَقْ فرماتے ہیں  :   ’’ مَنْ لَمْ یَعْرِفْ فَضْلَ اَبِیْ بَکْرٍ وَعُمَرَ فَقَدْ جَھَلَ السُّنَّۃَ یعنی جو امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا ابوبکر صدیق وعمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی فضیلت کی معرفت نہیں   رکھتا وہ سنت سے جاہل ہے۔ ‘‘  ([2])                     

شان فاروقِ اعظم بزبان سیِّدُنا امام زین العابدین

عہدِ رسالت میں   شیخین کا مقام:

حضرت سیِّدُنا ابو حازم رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ  اپنے والد سے روایت کرتے ہیں   کہ ایک شخص حضرت سیِّدُنا علی بن حسین امام زین العابدین رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ  کی خدمت میں   حاضر ہوا اور عرض کیا:   ’’ مَا کَانَ مَنْزِلَۃُ اَبِیْ بَکْرٍ وَعُمَرَ مِنْ رَسُوْلِ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ یعنی حضرت سیِّدُنا ابوبکر صدیق رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہوسیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکا رسول اللہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَا لٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے زمانے میں   کیا مقام ومرتبہ تھا؟ ‘‘   فرمایا:   ’’ کَمَنْزِلِھِمَا الْیَوْمَ ھُمَا ضَجِیْعَاہُ یعنی عہدِ رسالت میں   ان کا مقام ومرتبہ وہی تھا جو آج ہے کہ دونوں   اس وقت بھی رسول اللہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَا لٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے دوست تھےا ور آج مزار میں   بھی دونوں   رسول اللہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَا لٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے دوست ہیں  ۔ ‘‘  ([3])

 



[1]   تاریخ الخلفاء ،  ص۹۶۔

[2]   مناقب امیر المومنین عمر بن الخطاب ، الباب العشرون ، ص۴۲۔

[3]   مناقب امیر المومنین عمر بن الخطاب ، الباب العشرون ، ص۴۳۔



Total Pages: 349

Go To