Book Name:Faizan e Farooq e Azam jild 1

رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہخوردونوش کی اشیاء ایک جگہ سے دوسری جگہ لے جاکر فروخت کرتے اور امیرالمؤمنین حضرت سیِّدُنا علی المرتضیٰ کَرَّمَ اللّٰہُ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم مزدُوری کیاکرتے تھے۔ ‘‘   ([1])

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!          صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

دوسرا باب

خاندانِ فاروقِ اعظم

اس باب میں ملاحظہ کیجئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے والدین کا تَعْارُف
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی اَزْوَاج (بِیْوِیَاں)
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی  اولاد  کا مبارک تذکرہ
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے بیٹوں کا تعارف ،  بیٹیوں کا تَعْارُف
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے پوتے ، پوتیاں اور نواسوں کا تَعْارُف
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے بھائیوں کا تعارف ،  بہنوں کا تَعْارُف
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے چند غلاموں اور خادمین کا تَعْارُف
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی رَسُولَ اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے رشتہ داری
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی اہل بیت سے رشتہ داری
  • سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کا فیضان  پاک وہند میں  ، چند فاروقی بزرگوں کا تَعْارُف

٭…٭…٭…٭…٭…٭

خاندانِ فاروقِ اعظم

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! کچھ عرصہ پہلے ایسا ہوتا تھا کہ کسی شخص کی سیرت میں   صرف اس کی ذات وصفات یا وہ معاملات جن کا تعلق بلا واسطہ اس کی ذات سے ہوتا صرف ان ہی کو بیان کیا جاتا اور اگر کسی کو اس شخصیت کے ایسے معاملات کے متعلق معلومات تلاش کرنا ہوتیں   جن کا تعلق اس کی ذات سے بالواسطہ ہے تو وہ علیحدہ سے ان کی سیرت پر لکھی گئی کتب میں   تلاش کرتا ،  لیکن وقت کے ساتھ ساتھ جہاں   مطالعے اور تلاشِ مواد(Data Searching)میں   دلچسپی کم ہوتی گئی وہیں   سیرت بیان کرنے کے انداز میں   بھی تبدیلی آتی گئی۔ فی زمانہ کسی شخصیت کی سیرت کو بیان کرتے ہوئے اس کے خاندانی پس منظر کو پیش نہ کیا جائے تو کچھ تشنگی باقی رہ جاتی ہے۔عموماً خاندان میں   والدین  ،  ازواج ، اولاد ،  اولاد کی اولاد وغیرہ کا تذکرہ کیا جاتاہےلیکن ہم نے ان کے ذکر کے ساتھ ساتھ آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکے خدام کا تذکرہ بھی کیا ہے۔کیونکہ آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکے کئی خدام ایسے ہیں   جن کی سیر ت میں   سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکی مدنی تربیت بطریق احسن نکھر کر سامنے آتی ہے۔

فاروقِ اعظم کے والدین کا تعارف

فاروقِ اعظم کے والد خطاب بن عمرو بن نفیل:

امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکے والد قریش کے رؤساء میں   سے تھے ،  قبیلہ عدی اور بنو عبد الشمس میں   جدی پشتی عداوت چلی آرہی تھی ،  عبد الشمس کا خاندان بڑا تھا اس لیے غلبہ بھی انہیں   کو حاصل رہتا تھا عدی کے تمام خاندان جن میں   خطاب بن عَمرو بھی شامل تھے مجبور ہو کر بنو سہم کے قبیلے میں   پناہ گزیں   ہوگئے۔عدی کا تمام خاندان مکہ مکرمہ میں   مقام صفا میں   رہتا تھا لیکن جب ان کے بنو سہم سے مراسم مضبوط ہوئے تو انہوں   نے اپنے تمام مکانات ان کے ہاتھ فروخت کردیےلیکن خطاب بن عَمرو کے کئی مکانات صفا میں   باقی رہے ،  اور ان ہی مکانات میں   سے ایک مکان امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکو ورثے میں   ملا جس کااحادیث مبارکہ میں   بھی ذکر ملتا ہے۔ آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکے والد بت پرستی میں   بڑے متشدد تھے ،  اسلام کی دولت سے محروم رہے البتہ ان کے بھائی یعنی سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکے سگے چچا حضرت سیِّدُنا زید بن عمرو بن نفیل رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہبہت ہی نیک پرہیزگار شخص تھے ،  آپ حضرت سیِّدُناسعید بن زید رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکے والد گرامی ہیں   جو ان خوش نصیب صحابہ کرام میں   سے ہیں   جنہیں   دنیا میں   ہی بارگاہِ رسالت سے جنت کی خوشخبری سنادی گئی تھی۔ حضرت سیِّدُنا زید بن عمرو بن نفیل رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہنے بعثت نبوی سے قبل ہی بت پرستی کو ترک فرمادیا تھا اور سچے پکے موحد بن گئے تھے۔ دو عالم کے مالِک و مختار ،  مکی مَدَنی سرکار صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  نے انہی کے متعلق ارشاد فرمایا کہ  ’’ کل بروز قیامت یہ میرے اور عیسی عَلَیْہِ السَّلَام کے درمیان ایک پوری امت کی حیثیت سے اٹھائے جائیں   گے۔ ‘‘  ([2])

فاروقِ اعظم کی والدہ حنتمہ بنت ہاشم:

سیِّدنافاروقِ اعظم کی والدہ ماجدہ کا مکمل نام حَنْتَمَہ بنت ہاشم بن مغیرہ بن عبداللہ بن عمر مخزوم ہے۔ آپ ابوجہل کی چچازاد بہن ہیں  کیونکہ ہاشم اور ہشام سگے بھائی ہیں   اور ابوجہل



[1]     اصلاح اعمال ،  ج۱ ،  ص۷۴۸۔

[2]     فضائل الصحابۃ للنسائی ،  زید بن عمرو بن نفیل ،  ص۸۱ ،  الرقم: ۸۴۔



Total Pages: 349

Go To