Book Name:Faizan e Farooq e Azam jild 1

(4)… ’’ غَزْوَۃُ الْعُشَیْرَۃ ‘‘                                        (5)… ’’ غَزْوَۃُ بَدْرِ الْکُبْرٰی ‘‘ 

(6)… ’’ غَزْوَۃُ بَنِیْ سُلَیْم ‘‘   اِسے  ’’ غَزْوَۃُ قَرْقَرَۃِ الْکُدْرْ ‘‘   بھی کہا جاتاہے۔

(7)… ’’ غَزْوَۃُ السَّوِیْقْ ‘‘ 

(8)… ’’ غَزْوَۃُ الْغَطَفَانْ ‘‘   اِسے  ’’ غَزْوَۃُ ذِی الْاَمَرّ ‘‘   بھی کہتے ہیں  ۔

(9)… ’’ غَزْوَۃُالْفُرُعْ ‘‘  جو حجاز کے علاقوں   میں    ’’ بُحْرَانْ ‘‘   کے مقام پر پیش آیا۔

(10)… ’’ غَزْوَۃُ بَنِیْ قَیْنُقَاعْ ‘‘                                 (11)… ’’ غَزْوَۃُ اُحُدْ ‘‘ 

(12)… ’’ غَزْوَۃُ حَمْرَآءِ الْاَسَدْ ‘‘                               (13)… ’’ غَزْوَۃُ بَنِیْ نَضِیْرْ ‘‘ 

(14)… ’’ غَزْوَۃُ بَدْرِ الْاَخِیْرَۃِ ‘‘   یہ  ’’ غَزْوَۃُ بَدْرِ الْمَوْعِدْ ‘‘   بھی کہلاتاہے۔

(15)… ’’ غَزْوَۃُ دُوْمَۃِ الْجَنْدَلْ ‘‘ 

(16)… ’’ غَزْوَۃُ بَنِی الْمُصْطَلِقْ ‘‘   یہ  ’’ غَزْوَۃُ الْمُرَیْسِیْعْ ‘‘   بھی کہلاتاہے۔

(17)… ’’ غَزْوَۃُ خَنْدَقْ ‘‘                                       (18)… ’’ غَزْوَۃُ بَنِیْ قُرَیْظَۃ ‘‘ 

(19)… ’’ غَزْوَۃُ بَنِیْ لِحْیَانْ ‘‘                                  (20)… ’’ غَزْوَۃُ حُدَیْبِیَّۃ ‘‘ 

(21)… ’’ غَزْوَۃُذِیْ قَرَدْ ‘‘  ۔ ’’ ق ‘‘  اور  ’’ ر ‘‘  کے زبر اور پیش دونوں   کے ساتھ۔

(22)… ’’ غَزْوَۃُ خَیْبَرْ ‘‘ 

(23)… ’’ غَزْوَۃُ ذَاتِ الرِّقَاعْ ‘‘   اسے  ’’ غَزْوَۃُ بَنِیْ مُحَارِبْ ‘‘   و  ’’ غَزْوَۃُ بَنِیْ ثَعْلَبَۃ ‘‘  بھی کہا جاتا ہے۔

(24)… ’’ غَزْوَۃُ فَتْحِ مَکَّۃَ ‘‘                                    (25)… ’’ غَزْوَۃُ حُنَیْنْ ‘‘ 

(26)… ’’ غَزْوَۃُ طَائِفْ ‘‘                                        (27)… ’’ غَزْوَۃُ تَبُوْکْ ‘‘ 

بعض محدثین کے نزدیک اِن تمام غزوات کی تقدیم وتاخیر میں   بھی اختلاف ہے جس کی تفصیل سیر وتاریخ کی کتب میں   ملاحظہ کی جاسکتی ہے۔([1])

فاروقِ اعظم کے غزوات کی تعداد:

امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ نے حسن اَخلاق کے پیکر ،  محبوبِ رَبِّ اکبر صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم   کے ساتھ تقریباً تمام غزوات میں   شرکت فرمائی ،  چنانچہ علامہ ابن اثیر جزری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْقَوِی  فرماتے ہیں  :   ’’ وَشَهِدَ الْمَشَاهِدَ كُلَّهَا مَعَ النَّبِيِّ صَلَّى اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ یعنی امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ

 



[1]    سبل الھدی والرشاد ،  الباب الثانی ،  اختلاف الناس۔۔۔الخ ،  ج۴ ،  ص۸۔



Total Pages: 349

Go To