Book Name:Faizan e Farooq e Azam jild 1

فرمایا:   ’’ بِمَنْ نَبْدَاْ؟یعنی سب سے پہلے کس سے ابتداء کی جائے؟ ‘‘  آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہکے اصحاب نے عرض کیا:  ’’ بِنَفْسِكَ فَابْدَاْیعنی حضور! وظائف کی تقرری کا آغاز آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہاپنی ذات سے کریں   کیونکہ آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہامام ہیں  ۔ ‘‘  آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہنے فرمایا:  ’’  لَا اِنَّ رَسُوْلَ اللہِ صَلَّى اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ اِمَامُنَا فَبِرَهْطِهٖ نَبْدَاُبِاْلَاقْرَبِ فَالْاَقْرَبِنہیں  ! رسول اللہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَا لٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم امام ہیں  ۔ اس لیے سب سے پہلے ان کے خاندان سے آغاز کیا جاتا ہے ، اور ان کے بعد جو درجہ بدرجہ رشتہ دار ہوں   گے۔ ‘‘  ([1])

بنی ہاشم سے عقیدت ومحبت

 آپ کی عقیدت اور ان کے حقوق کی نگہداشت:

حضرت سیِّدُنا امام زہری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْقَوِی سے روایت ہے  ، فرماتے ہیں  :   ’’ كَانَ عُمَرُ اِذَا اَتَاهُ مَالُ الْعِرَاقِ اَوْ خُمْسُ الْعِرَاقِ ،  وَلَمْ يَدْعُ رَجُلاً مِّنْ بَنِیْ هَاشِمٍ عَزْباً اِلَّا زَوَّجَهُ ،  وَلَا رَجُلاً لَيْسَ لَهُ خَادِمٌ اِلَّا اَخْدَمَهُ یعنی

 

 امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمرفاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے پاس جب بھی عراق سے مال جزیہ یا خمس آتا آپ بنی ہاشم کے کسی غیر شادی شدہ شخص کی شادی کر دیتے اور جس کے پاس خادم نہ ہوتا اسے خادم عطا فرمادیتے۔ ‘‘  ([2])

تمہارے آستانے سے کوئی لوٹا نہیں   خالی:

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!کیا شان ہے ساداتِ کرام ،  ان کے نانا جان صَلَّی اللّٰہُ تَعَا لٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم اور اہل بیت کرام کی! اس سخی گھرانے کے ساتھ جو بھی حسنِ سلوک کرتا ہے وہ محروم نہیں   رہتا بلکہ اس پر انعام واکرام کی ایسی بارش ہوتی ہے کہ محتاج اور غمگین لوگوں  کے دلوں   کی مُرجھائی کَلیاں   کھِل اٹھتی ہیں    ، گردشِ ایام کی زد میں   آکر سنسان وویران ہوجانے والے باغات میں   بہار آجاتی ہے۔جس نے بھی ان مُبَارَک ہستیوں   سے حُسنِ سلوک کیا وہ بے شمار پریشانیوں   سے نجات پاکر شاداں   وفرحاں   ہوگیا۔ اور کیوں   نہ ہو کہ کریموں   سے تعلق رکھنے والے پر بھی ضرور کرم کیا جاتاہے ۔اہل بیت کرام چمنستانِ کرم کے مہکتے پھول ہیں   ان کی خوشبو سے عالَمِ اسلام مہک رہا ہے ،  ان ہی درخشاں   ستاروں   کی روشنی سے نہ جانے کتنے بھولے بھٹکے مسافروں   کو نشانِ منزل ملا۔ میرے آقا اعلیٰ حضرت  ، عظیم البرکت ،  پروانۂ شمعِ رسالت شاہ امام احمد رضا خان عَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن  ،  اہل بیتِ اطہار کی شان بیان کرتے ہوئے فرماتے ہیں   :

کیا بات رضا اس چمنستان کرم کی۔۔۔ زہراء ہے کلی جس میں   حسین اور حسن پھول

تیری نسل پاک میں   ہے بچہ بچہ نور کا۔۔۔ تو ہے عین نور تیرا سب گھرانا نور کا

یَا اللہ عَزَّ وَجَلَّ! ہمیں   اِن نُفُوسِ قُدْسِیَّہ کے صدقے دین ودنیا کی بھلائیاں   عطا فرما ، ان ساداتِ کرام کا باادب بنا ،  بے ادبوں   سے ہم سب کو محفوظ فرما ۔   اللہ عَزَّ وَجَلَّ ہمیں   ان کی غلامی میں   استقامت عطا فرمائے اور ہمارا خاتمہ بالخیر فرما۔

   آمِیْنْ بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْنْ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صحابہ کا گدا ہوں   اور اہلِ بیت کا خادم

یہ سب ہے آپ کی نظرِ عنایت یا رسول اللہ

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!          صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

ساتواں باب۔۔ (حصہ سوم)

فاروقِ اعظم کا عشقِ رسول

(اُمہات المومنین  سے عقیدت و محبت )

اس باب میں ملاحظہ کیجئے۔۔۔۔۔۔

اُمہارت المؤمنین رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُنَّ کا خصوصی شرف

سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی اُمہارت المومنین سے عقیدت و محبت

سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی اُمہارت المومنین کی مالی خیرخواہی

اُمّ المؤمنین سیدہ عائشہ  ْصدیقہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہَا کے نزدیک سیدنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ  کا مقام و مرتبہ

سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہاور اُمہارت المؤمنین کی نگہبانی

اُمہارت المؤمنین رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُنَّ کا مبارک حج

اُمہارت المؤمنین رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُنَّ کے لیے حج کے خصوصی انتظامات

سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی اُمّ المؤمنین کی گستاخی کرنے والے کو سزا

 



[1]    کتاب الاموال لابی عبید ، کتاب مخارج الفی۔۔۔الخ ، تدوین عمر الدیوان ۔۔۔ الخ ،  ص۲۳۶ ،  الرقم:  ۵۴۹۔

[2]    ریاض النضرۃ ،  ج۱ ،  ص۳۴۰ ، کتاب الاموال لابی عبید ، کتاب الخمس و احکامہ ، با ب سھم ذی القربی۔۔۔الخ ، ص۳۴۵ ، الرقم: ۸۵۵۔



Total Pages: 349

Go To