Book Name:Faizan e Farooq e Azam jild 1

حضرت سیِّدُنا غالب رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ

حضرت سیِّدُنا فہر رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ

حضرت سیِّدُنا مالک رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ

حضرت سیِّدُنا مالک رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ حضرت سیِّدُنا ابراہیم عَلٰی نَبِیِّنَاوَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام   کی ۵۸ویں   پشت میں   تھے۔

آپ کی والدہ کا نسب نامہ:

 آپ کی والدہ کا مکمل نام حَنْتَمَہ بنت ہاشم بن مغیرہ بن عبداللہ بن عمر مخزوم ہے۔ آپ ابوجہل کی چچازاد بہن ہیں   کیونکہ ہاشم اور ہشام سگے بھائی ہیں  اور ابوجہل اور حارث ہشام کی اولاد ہیں   ،  جب کہ ہاشم حَنْتَمَہ کے والد اور فاروقِ اعظم کے نانا ہیں  ۔لہٰذا ابو جہل آپ کا سگا بھائی نہیں   بلکہ آپ کے چچا یعنی ہشام کا بیٹا ہے۔([1])

فاروقِ اعظم کے قبیلے کی شرف یابی:

امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ قبیلہ عدی بن کعب سے تعلق رکھتے تھے جو قریش کا عدنانی قبیلہ تھا۔ اس قبیلے کی شرافت وبزرگی نے اسے ہاشم ،  امیہ ،  تیم اور مخزوم جیسے ممتاز قبائل میں   شامل کردیا تھا۔اگرچہ اس قبیلے کے پاس کوئی مذہبی یا سیاسی منصب ومرتبہ نہیں   تھا اور نہ ہی مال ودولت میں   وہ ان قبیلوں   کے مساوی تھے البتہ عزت  ،  شرف اور بزرگی میں   وہ قبیلہ بنی عبد شمس کے مقابل تھے۔یہی وجہ تھی کہ ان دونوں   قبائل میں   سالہا سال سے منافرت (دشمنی)قائم تھی۔آپ کے قبیلے والے تعداد میں   تھوڑے اور بڑے قبائل کے حریف نہ ہونے کی وجہ سے علم وحکمت و دور اندیشی میں   اپنا ایک خاص مقام ومرتبہ رکھتے تھے۔ نیز امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کو آپ کے اسی علم وحکمت کے سبب سفارت کاری اور عدالت کے ضروری عہدے دے دیے گئے۔یہی وجہ ہے کہ آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے خاندان میں   حضرت سیِّدُنا زید بن عمرو بن نفیل رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ جیسی عظیم شخصیات پیدا ہوئیں   جنہوں   نے اپنے حکمت ودانش مندی سے بت پرستی ترک کردی ،  بتوں   کا ذبیحہ کھانا چھوڑ دیااور پکے موحد (  اللہ1کی توحید کے قائل)بن گئے۔([2])

فاروقِ اعظم کا نامِ نامی اسم گرامی

فاروقِ اعظم کا نام نامی اسم گرامی:

دورِ جاہلیت اور دورِاسلام دونوں   میں   آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کا نام  ’’ عمر  ‘‘  ہی رہا۔  ’’ عمر ‘‘   کے معنی ہیں    ’’ آباد رکھنے والا ‘‘   یا  ’’ آباد کرنے والا ‘‘  ۔حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے سبب چونکہ اسلام آباد ہونا تھا اس لیے   اللہ عَزَّ وَجَلَّ نے پہلے ہی آپ کو ’’  عمر ‘‘   نام عطا فرمادیا اور اسلام آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے سبب آباد ہوالہٰذا آپ اسم بامسمی ہیں  ۔  ’’ انسانی زندگی کی مدت  ‘‘  کو بھی ’’  عمر ‘‘   کہتے ہیں   یعنی  ’’ جسم کی آبادی کا زمانہ ‘‘  ۔ سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کا عہدِ خلافت چونکہ اِسلام کی آبادی کا زمانہ ہے اِس اعتبار سے بھی آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ اِسم بامسمی ہوئے۔([3])

آسمانوں   ،  انجیل ،  تورات اور جنت میں   آپ کا نام:

مروی ہے کہ امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کانام آسمانوں   میں    ’’ فاروق ‘‘   انجیل میں    ’’ کافی ‘‘   تورات میں    ’’ مَنْطَقُ الْحَق ‘‘   اور جنت میں    ’’ سراج ‘‘   ہے۔([4])

بارگاہِ رسالت سے عطا کردہ نام:

اُمّ المؤمنین حضرت سیدتنا عائشہ صدیقہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہَا سے روایت ہے فرماتی ہیں  :   ’’ سَمَّى رَسُوْلُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ  وَسَلَّم عُمَرَ الْفَاُروْقَ یعنی رسول اللہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَا لٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا عمر فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کا نام  ’’ فاروق ‘‘   رکھا۔          ([5])

فاروقِ اعظم کی کنیت

فاروقِ اعظم کی کنیت:

آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی کنیت  ’’ ابو حفص ‘‘   ہے اگرچہ آپ کی اولاد میں   سے کسی کا نام ’’  حفص ‘‘   نہیں   ہے۔([6])

کنیت کی وجوہات

کنیت رکھنا سنت ہے:

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! کنیت رکھنا سنت مبارکہ ہے اور ابتدائے اسلام سے یہ سلسلہ صحابہ کرام ،  تابعین ،  تبع تابعین اور اسلاف کرام میں   چلا آرہا ہےاور آج بھی عشاق اس سنت



[1]     اسد الغابۃ ،  عمر بن خطاب ،  ج۴ ،  ص۱۵۶ ملخصاً ،  تھذیب الاسماء  ،  عمر بن خطاب ،  ج۲ ،  ص۳۲۴۔

[2]     اخبار مکۃ للازرقی ، ذکر رباع بنی عدی بن کعب ،  ج۲ ،  ص۲۵۸ ،  ریاض النضرۃ ،  ج۲ ،  ص۳۳۷۔

[3]     مرآۃ المناجیح ،  ج۸ ،  ص۳۶۰ ،  ریاض النضرۃ  ، ج۱ ، ص۲۷۲۔

[4]     ریاض النضرۃ  ، ج۱ ، ص۲۷۳۔

[5]     تھذیب الاسماء  ،  عمر بن الخطاب ،  ج۲ ،  ص۳۲۵۔

[6]     مستدرک حاکم  ،  کتاب معرفۃ الصحابۃ ،  ذکر مناقب ابی حذیفہ ،  ج۴ ،  ص۲۳۹ ،  حدیث: ۵۰۴۲ ملتقطا۔



Total Pages: 349

Go To