Book Name:Beta Hoto Aisa

فِرِشتے نے دوبارہ حضرت ابراہیم عَلَيْهِالصَّلٰوۃُ وَالسَّلام سے کہا : ’’ اِسے مارئیے ۔   ‘‘ آپ نے اسے سات کنکریاں مارِیں تو اُس نے راستہ چھوڑ دیا۔   اب شیطان   ’’ تیسرے جمرے ‘‘ کے پاس پہنچا ،   حضرت ابراہیم عَلَیْہِ الصَّلَاۃُ وَالسَّلَام نے فِرِشتے کے کہنے پر ایک بار پھر سات کنکریاں ماریں تو شیطان نے راستہ چھوڑ دیا ۔   ([1]) شیطان کو تین مقامات پر کنکریاں مارنے کی یاد باقی رکھی گئی ہے اور آج بھی حاجی ان تینوں جگہوں پر کنکریاں مارتے ہیں ۔   

بیٹا قربانی کیلئے تیّار

     حضرت ابراہیمعَلَیْہِ الصَّلَاۃُ وَالسَّلَامجب حضرتِ اسمٰعیل عَلَیْہِ الصَّلَاۃُ وَالسَّلَامکو لے کر کوہِ ثَبِیْر  پرپہنچے تو انہیں  اللہ عَزَّ وَجَلَّ کے حکم کی خبر دی، جس کا ذِکر قراٰنِ کریم میں ان الفاظ میں ہے:

یٰبُنَیَّ اِنِّیْۤ اَرٰى فِی الْمَنَامِ اَنِّیْۤ اَذْبَحُكَ فَانْظُرْ مَا ذَا تَرٰىؕ-

ترجَمۂ کنزالایمان: اے میرے بیٹے میں نے خواب دیکھا میں تجھے ذَبح کرتا ہوں اب تو دیکھ تیری کیا رائے ہے؟  

فرماں بردار بیٹے نے یہ سُن کر جواب دیا:  

یٰۤاَبَتِ افْعَلْ مَا تُؤْمَرُ٘-سَتَجِدُنِیْۤ اِنْ شَآءَ اللّٰهُ مِنَ الصّٰبِرِیْنَ (۱۰۲)   (پ۲۳، اَلصّٰفٰت: ۱۰۲)

ترجَمۂ کنزالایمان:  اے میرے باپ!  کیجئے جس بات کا آپ کو حکم ہوتا ہے،  خدا نے چاہا تو قریب ہے کہ آپ مجھے صابر  (یعنی صبر کرنے والا )   پائیں گے۔ 

یہ فیضانِ نظر تھا یا کہ مکتب کی کرامت تھی

سکھائے کس نے اسمٰعیل کو آدابِ فرزندی

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!           صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

مجھے رسّیوں سے مضبوط باندھ دیجئے

 



[1]   تفسیرِ خازن ج۴ ص۲۴ مُلَخّصًا



Total Pages: 15

Go To