Book Name:Guldasta e Durood o Salam

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!کس قَدر خُوش بَخت ہے وہ شخص جو حُضُور عَلَیْہِ السَّلامکی بارگاہ میں دُرُودِ پاک پڑھ کرخود کو اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی دس رَحمتوں کا سزاوار بنالیتا ہے حالانکہ اَوَّلین و آخرین کی اِنتہائی تَمنَّا تو یہ ہوتی ہے کہ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی ایک خاص رَحمت ہی ان کو حاصل ہوجائے تو زَہے نصیب ، بلکہ اگر عقلمند سے  پوچھا جائے کہ ساری مَخلُوق کی نیکیاں تیرے نامۂ اعمال میں ہوں تجھے یہ پسند ہے یا یہ کہ اللّٰہعَزَّوَجَلَّ کی ایک خاص رَحمت تجھ پر نازل ہوجائے تو یقینا وہ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّکی ایک خاص رَحمت کو پسند کرے گا ۔  اور پھر یہ فَضیلت تو ایک بار دُرُودِ پاک پڑھنے والے کو حاصل ہوگی کہ اس پر اللّٰہ تَبارَکَ وَ تَعالٰیکی سلامتی اور دس رَحمتوں کا نُزُول ہوگا تواس بندۂ مؤمن کے کیا کہنے جو آپ  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم پر کثرت سے دُرُودِ پاک پڑھتاہوگا ۔

مُفَسّرِ شہیر حکیمُ الْاُمَّت حضر  تِ مُفْتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الحنّان ’’مراٰۃ المناجیح ‘‘ میں اس حدیث پاک کے تحت فرماتے ہیں  : ’’ رَبّ کے سلام بھیجنے سے مُراد یاتو بذریعہ ملائکہ اسے سَلام کہلوانا ہے یاآفتوں اورمُصیبتوں سے سلامت رکھنا ۔  حُضُور عَلَیْہِ السَّلام کویہ خُوشخبری اس لیے دی گئی کہ آپ کو اپنی اُمَّت کی راحت سے بہت خُوشی ہوتی ہی جیسے کہ اپنی اُمَّت کی تکلیف سے غم ہوتا ہے ۔ مذکورہ حدیث اس آیت کی مؤید ہے  ۔ ‘‘

وَ لَسَوْفَ یُعْطِیْكَ رَبُّكَ فَتَرْضٰىؕ(۵) (پ ۳۰، الضحیٰ : ۵)

ترجمۂ کنز الایمان  : اور بے شک قریب ہے کہ تمہارارَبّ تمہیں اتنا دے گا کہ تم راضی ہوجاؤ گے  ۔ (مراٰۃ ، ۲ / ۱۰۲)

          حضرتِ صدر الْافاضِل مولانا سیِّدمحمد نعیم الدین مُراد آبادی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللّٰہِ الہَادِی خَزائنُ العرفان میں اس آیتِ کریمہ کے تَحت فرماتے ہیں  :  ’’اللّٰہتعالیٰ کا اپنے حبیب  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے یہ وعدۂ کریمہ ان نعمتوں کو بھی شامل ہے جو آپ کو دُنیا میں عطا فرمائیں ۔ کمالِ نفس اور علومِ اَوَّلین و آخرین اور ظہورِ امر اور اِعلائے دِین اور وہ فُتوحات جو عہدِ مُبارک میں ہوئیں اور عہدِ صحابہ میں ہوئیں اور تاقیامت مسلمانوں کو ہوتی رہیں گی اور دعوت کا عام ہونا اور اسلام کا مَشارق و مَغارب میں پھیل جانا اور آپ کی اُمَّت کا بہترینِ اُمَم ہونا اور آپ کی وہ کرامات و کمالات جن کا اللّٰہ ہی عالِم ہے اور آخرت کی عزَّت و تکریم کو بھی شامل ہے کہ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ نے آپ کو شفاعتِ عامّہ و خاصّہ اور مقامِ محمود وغیرہ جلیل نعمتیں عطا فرمائیں  ۔ مسلم شریف کی حدیث میں ہے نبیِّ کریم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے دونوں دَستِ مُبارک اُٹھا کر اُمَّت کے حق میں رو رو کر دُعا فرمائی اور عرض کی اَللّٰھُمَّ اُمَّتِیْ اُمَّتِیْ، اللّٰہعَزَّوَجَلَّ نے جبریل عَلَیْہِ السَّلام کو حکم دیا کہ محمد ( صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم) کی خِدْمت میں جا کر دریافت کرو رونے کا کیا سبب ہے باوجود یہ کہ اللّٰہعَزَّوَجَلَّ جانتا ہے ، جبریل عَلَیْہِ السَّلام نے حسبِ حکم حاضِر ہو کر دریافت کیا تو سیّدِ عالَم  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے انہیں تمام حال بتایا اور غمِ اُمَّت کا اِظہار فرمایا، جبریلِ امین نے بارگاہِ الٰہی میں عرض کی کہ تیرے حبیب یہ فرماتے ہیں باوجود یہ کہ وہ خوب جاننے والا ہے ۔ اللّٰہعَزَّوَجَلَّ نے جبریل عَلَیْہِ السَّلام کو حکم دیا جاؤ اور میرے حبیب ( صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم) سے کہو کہ میں آپ کو آپ کی اُمَّت کے بارے میں عنقریب راضی کروں گا اور آپ کوگِراں خاطِر نہ ہونے دوں گا ، حدیث شریف میں ہے کہ جب یہ آیت نازِل ہوئی تو سیّدِ عالَم  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے فرمایا کہ جب تک میرا ایک اُ مَّتِی بھی دوزخ میں رہے ، میں راضی نہ ہوں گا ۔ آیتِ کریمہ صاف دلالت کرتی ہے کہ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ  وہی کرے گا جس میں رسول راضی ہوں ۔ ‘‘

ڈر تھاکہ عصیاں کی سزا اب ہوگی یا روزِ جزا

دی ان کی رَحمت نے صدا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں (حدائقِ بخشش، ص۱۱۰)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!        صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

پانچ کو پانچ سے پہلے غنیمت جانو !

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! یقینا زِندگی بے حدمُختصر ہے ، جو وَقت مل گیا سو مل گیا، آئندہ وقت ملنے کی اُمّیدرکھنا دھوکا ہے ۔ کیا معلوم آئندہ لمحے ہم موت سے ہم آغوش ہوچکے ہوں  ۔ رحمت عالم ، نور مجسّم، شاہ بنی آدم  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم فرماتے ہیں  : ’’اِغْتَنِمْ خَمْساً قَبْلَ خَمْسٍ، پانچ چیزوں کو پانچ چیزوں سے پہلے غنیمت جانو!‘‘

شَبَابَکَ قَبْلَ ہِرَمِکَ                                                                                                                                                                                   جوانی کو بڑھاپے سے پہلے  ۔

وَصِحَّتَکَ قَبْلَ سَقَمِکَ                                                                                                                                                          صِحَّت کو بیماری سے پہلے  ۔

وَغِنَاکَ قَبْلَ فَقْرِکَ                                                                                                                                                            مال داری کوتنگدستی سے پہلے  ۔

وَفَرَاغَکَ قَبْلَ شُغْلِک                                                                                                                                                                               فُرصت کومَشغُولیَّت سے پہلے ۔

وَحَیَاتَکَ قَبْلَ مَوْتِکَ                                                                                                                                                                               اور زِندگی کوموت سے پہلے ۔

(مستدرک، کتاب الرقاق ، ۵ / ۴۳۵، حدیث :  ۷۹۱۶ )

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! شیخِ طریقت امیرِاہلسنَّت بانیِ دعوتِ اسلامی حضرت علاّمہ مولانا ابوبلال محمد الیاس عطارقادری رَضَوی دَامَت بَرکاتہُم العالیہ اپنے  رسالہ ’’اَنمول ہیرے ‘‘میں ارشاد فرماتے ہیں  : ’’ واقعی صِحَّت کی قَدر بیمار ہی کر سکتا ہے اور وقت کی قَدر وہ لوگ جانتے ہیں جوبے حَد مصروف ہوتے ہیں ورنہ جو لوگ ’’فُرصتی ‘‘ہوتے ہیں ان کو کیا معلوم کہ وقت کی کیا اَھَمِّیَّت ہے ! ‘‘

            لہٰذا وَقت کی قدرکرتے ہوئے فُضول باتوں ، فُضول کاموں اور فُضول دوستوں سے کنارہ کشی اِختیار کیجئے اور اپنے آپ کو ایسے کاموں میں مَشغول کرلیجئے جس میں اللّٰہعَزَّوَجَلَّاور اس کے رسول   صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی رضا و خُوشنودی پوشیدہ ہو ۔  

            یاد رہے کہ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی رضا اسی صورت میں حاصل ہو سکتی ہے کہ جب اس کے پیارے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ہم سے راضی ہوں اور حضور عَلَیْہِ السَّلام کو راضی کرنے کا ایک



Total Pages: 141

Go To