Book Name:Guldasta e Durood o Salam

حَجَبَ عَنْ اَبْصَارِ الْقَاصِرِیْنَ عَنْ شَرِیْفِ الْمَقَامَاتِ، یعنی حُضُورصلَّی اللّٰہ تعالٰی عَلَیْہ واٰلہٖ وسَلَّم زِندہ ہیں ، آپ پر روزی پیش کی جاتی ہے ، ساری لذَّت والی چیزوں کا مزہ اورعِبادتوں کا سُرور پاتے ہیں لیکن جو لوگ بُلَنْد دَرَجوں تک پہنچنے سے قاصِر ہیں ان کی نِگاہوں سے اوجھل ہیں  ۔ ( نور الایضاح مع مراقی الفلاح ، ص۳۸۰  )

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

            رَئیسُ الْمُحَدِّثِینحضرتِ مُلاّ علی قاری عَلَیْہِ رَحْمَۃُاللّٰہ الْباری فرماتے ہیں  :  ’’ فلَاَ فَرْقَ لَہُمْ فِی الْحَالَیْنِ وَلِذَا قِیْلَ اَوْلِیَائُ اللّٰہِ لَایَمُوْتُوْنَ وَلٰکِنْ یَّنْتَقِلُوْنَ مِنْ دَارٍ اِلٰی دَارٍ، یعنی اَنبیائے کرامعَلَیْھِمُ الصَّلٰوۃُوالسَّلام کی قبلِ وصال اور بعدِ وصال کی زِندگی میں کوئی فرق نہیں  ۔ اسی لئے کہا جاتا ہے کہ محبوبانِ خدا مرتے نہیں بلکہ ایک گھر سے دوسرے گھر میں منتقل ہوجاتے ہیں  ۔ ‘‘

(مرقاۃ، کتاب الصلاۃ ، باب الجمعۃ، ۳ /  ۴۵۹ ، تحت الحدیث : ۱۳۶۶)

            ایک اور مقام پر ارشاد فرماتے ہیں  : ’’ لِاَ نَّہٗ حَیٌّ یُرْزَقُ وَیُسْتَمَدُّ مِنْہُ الْمَدَدُ الْمُطْلَقُ، یعنی بیشک حُضُور صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمزِندہ ہیں ، آپ کو روزی پیش کی جاتی ہے اور آپ سے ہر قسم کی مَدد طلب کی جاتی ہے  ۔ ‘‘ (مرقاۃ، کتاب المناسک، باب حرم المدینۃحرسہااللّٰہ تعالٰی، ۵ / ۶۳۲، تحت الحدیث : ۲۷۵۶)

مانگیں گے مانگے جائیں گے مُنہ مانگی پائیں گے

سرکار میں نہ ’’لَا‘‘ہے نہ حاجت ’’اگر ‘‘کی ہے   (حدائقِ بخشش، ص۲۲۵)

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!میرے آقا اعلیٰ حضرت امامِ  اَہلسُنَّت امام احمد رضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحمٰن نے حَیاتِ اَنبیائعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَ السّلامکے اسلامی عَقیدے کو اپنے ایک کلام میں اِنتہائی پیارے اَنداز میں بیان کیا ہے ۔ آپ فرماتے ہیں  :

اَنبیا کو بھی اَجل آنی ہے                                               مگر ایسی کہ فَقَط آنی ہے

پھر اُسی آن کے بعد اُن کی حَیات                                  مِثلِ سابق وہی جسمانی ہے

رُوح تو سب کی ہے زِندہ ان کا                                       جسمِ پُر نور بھی رُوحانی ہے

اوروں کی رُوح ہو کتنی ہی لطیف                                    اُن کے اَجسام کی کب ثانی ہے

پاؤں جس خاک پہ رکھ دیں وہ بھی                                رُوح ہے پاک ہے نُورانی ہے

اُس کی اَزواج کو جائز ہے نکاح                                      اُس کا  تَرْکَہ بٹے جو فانی ہے

یہ ہیں حَیِّ اَبَدِی اِن کورضاؔ                                          صِدقِ وعدہ کی قضا مانی ہے

                 (حدائقِ بخشش، ص۳۷۲)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

جَنَّت کا پَروانہ

            حضرت سَیِّدمحمد کُردی عَلَیْہِ رَحْمَۃُاللّٰہ الْقَوِیارشاد فرماتے ہیں  : ’’میری والدئہ مَاجدہ نے خبر دی کہ میرے والدِ ماجد (یعنی حضرت سیِّد محمد کُردی کے نانا جان) جن کا نام محمدتھاانہوں نے مجھے وَصِیَّت کی تھی کہ جب میرا اِنتقال ہوجائے اور مجھے غُسل دے لیا جائے تو چَھت سے میرے کَفن پر ایک سَبز رنگ کا رُقعہ گرے گا جس میں لکھا ہوگا ’’ھٰذِہٖ بَرَائَ ۃُ مُحَمَّدِنِ العَالِمِ بِعِلْمِہٖ مِنَ النَّار یعنی محمدجو عالمِ ہے اس کو اِس کے علم کے سبب جہنم سے چھٹکارا مل گیا ہے  ۔ ‘‘اُس رُقعے کو میرے کَفن میں رکھ دینا ۔ ‘‘چُنانچہ غُسل کے بعد رُقعہ گِرا ، جب لوگوں نے رُقعہ پڑھ لیا تو میں نے اسے اِن کے سینے پررکھ دیا  ۔ اُس رُقعے میں ایک خاص بات یہ تھی کہ جس طرح اسے صفحہ کے اوپر سے پڑھاجاتا تھااسی طرح صفحہ کے پیچھے سے بھی پڑھا جاتا تھا ۔  میں نے اپنی والدئہ ماجدہ سے پوچھا کہ نانا جان کا عمل کیا تھا؟ اَمّی جان نے فرمایا :  ’’ کَانَ اَکْثَرُ عَمَلِہٖ دَوَامُ الذِّکْرِمَعَ کَثْرَۃِ الصَّلٰوۃِ عَلَی النَّبِی، یعنی اُن کا یہ عمل تھاکہ وہ ہمیشہ ذِکرُاللّٰہ کرنے کے ساتھ ساتھ دُرُودِپاک کی کثرت بھی کیا کرتے تھے ۔ ‘‘

 (سعادَۃ الدارین، الباب الرابع ، اللطیفۃ السادسۃ التسعون، ص۱۵۲ )

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

            اے ہمارے پیارے اللّٰہعَزَّوَجَلَّ!ہمیں حَیاتِ انبیائے کرام  عَلَیْھِمُ الصَّلٰوۃُوالسَّلام  کے بارے میں اِسلامی عَقیدہ اِختیار کرنے اور ذِکر و دُرُود کی کثرت کرنے کی توفیق عطا فرما ۔

 اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

٭٭٭٭

بیان نمبر  : 13

رِزْق میں کُشادگی کا راز

            سَعَادَۃُ الدَّارَیْنمیں ہے جَائَ رَجُلٌ اِلَی النَّبِیِّ ایک شخص دَربارِ رسالت میں حاضِر ہوافَشَکَا اِلَیْہِ الْفَقْرَ وَضِیْقَ الْعَیْشِ وَالْمَعَاشِاور فَقر و فاقہ اورتنگیٔ مَعاش کی شِکایت کی تو مَحبوبِ ربِّ ذُوالجَلال ، شَہنشاہِ خُوش خِصالصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے فرمایا : ’’اِذَادَخَلْتَ مَنْزِلَکَ فَسَلِّمْ اِنْ کَانَ فِیْہِ اَحَدٌ اَوْ لَمْ یَکُنْ فِیْہِ اَحَدٌ، یعنی جب تم اپنے گھر میں داخل ہو تو السَّلامُ عَلَیْکُمْ کہہ لیا کروچاہے گھر میں کوئی ہو یا نہ ہو ۔ پھر مجھ پر سَلام کہا کرو اورایک مرتبہ ’’قُلْ ھُوَ اللّٰہُ اَحَدٌ‘‘پڑھ لیا کرو ۔ ‘‘اس شخص نے ایسا ہی کیا تو اللّٰہعَزَّوَجَلَّنے اس پر رِزق کھول دیا حتی کہ اس کے ہمسایوں اور رِشتہ داروں کو بھی اس رِزق سے حصّہ پہنچا ۔   (سعادۃ الدارین، الباب الثانی فیما ورد فی فضل الصلاۃ والتسلیم الخ ، حرف الجیم، ص۸۴)

 



Total Pages: 141

Go To