Book Name:Guldasta e Durood o Salam

المعجزۃ والخصائصالخ، ۱ / ۱۰۴، والمواہب اللدنیۃ وشرح الزرقانی، الفصل الاول فی کمال خلقتہالخ، ۵ / ص۲۶۳، ۲۶۴)

شش جہت سمت مقابل شب و روز ایک ہی حال        دُھوم ’’والنجم‘‘میں ہے آپ کی بینائی کی

فرش تا عرش سب آئینہ ضمائر حاضر                       بس قسم کھائیے اُمّی تری دانائی کی                     (حدائقِ بخشش، ص۱۵۴)

دہن شریف

حضرت ہِنْد بن اَبی ہالہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعالٰی عَنْہ کا بیان ہے کہ آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے رُخسار نرم و نازُک اور ہَموار تھے اور آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا مُنہ فَراخ، دانت کُشادہ اور روشن تھے ۔ جب آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم گُفتگُو فرماتے تو آپ کے دونوں اگلے دانتوں کے دَرمیان سے  ایک نُور نکلتا تھا اور جب کبھی اندھیرے میں آپ مُسکرا دیتے تو دَندانِ مُبارک کی چَمک سے روشنی ہو جاتی تھی ۔ (الشمائل المحمدیۃ، باب ماجاء فی خلق رسول اللّٰہ، ص ۲۷، حدیث : ۱۴ملخصاً)

وہ دَہن جس کی ہر بات وَحی ٔخُدا                  چشمۂ علم و حکمت پہ لاکھوں سلام(حدائقِ بخشش، ص۳۰۲)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! مختصر یہ کہ حُضُور صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم صنعت ِخداوَندی کے اَعلیٰ ترین نُمُونہ اور جمال و کمالِ الٰہی کے مَظہرِ اَتم اور حُسن و جمال میں بے مِثْل و بے مثال ہیں اَوَّلین و آخرین میں نہ کوئی ایسا تھا نہ ہے نہ ہوگا ۔  ہمیں بھی چاہیے کہ ایسے من موہنے سوہنے آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے ہر وَقت گُن گاتے رہیں اور اپنی زِندگی کو آپصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  کی پیاری پیاری  سُنَّتوں کے مُطابق بسر کریں  ۔ سُنَّتوں پر عمل کا جذبہ پانے اور دنیاو آخرت کی بہتری کا ذہن بنانے کے لئے دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے وابستہ ہوجائیے ۔ اَلْحَمْدُ لِلّٰہعَزَّوَجَلَّ دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول کی بَرَکت سے کتنے ہی بَدمَذْہب توبہ کرکے سچے عاشقِ رسول بن گئے ۔ چُنانچہ اس ضِمْن میں ایک مَدَنی بہارمُلاحظہ فرمائیں ۔

حق کا مُتلاشی

            وزیرآباد(ضِلع گوجرانوالہ، پنجاب، پاکستان) کے ایک اسلامی بھائی کی تَحریر کاخُلاصہ ہے  : میں عَقائد کے مُتعلِّق تردُّد کا شکار تھا، مَذہبِ حق کی تلاش میں بھٹکتا پھر رہا تھا مگر مجھے کچھ سجھائی نہ دے رہا تھا کہ کون سا مَذہب حق ہے ؟ حتی کہ میں نے مساجد میں نماز پڑھنا ہی ترک کر دیا ۔ اب گھر پرہی نماز پڑھ لیا کرتا ۔ ایک عرصے تک یہی سلسلہ جاری رہا، پھر محلہ کی مسجد کے امام صاحِب کے سمجھانے پر دوبارہ مسجد میں نماز پڑھنے لگا، ایک دن مسجد میں کچھ اسلامی بھائیوں نے مجھے قلبی سُکون حاصل کرنے کے لئے ہفتہ وار سنَّتوں بھرے اِجتماع میں شرکت کی ترغیب دلائی تو میں نے اجتماع میں شرکت کرنا شُروع کر دی ۔  اجتماعات میں ہونے والی قرآنِ پاک کی تلاوت ، نعت، بیانات اور آخر میں ہونے والی رِقّت اَنگیز دُعاؤں نے رَفتہ رَفتہ میرے دل کے زنگ کو دُور اور میرے سینے کو عشقِ رسول سے معمور کر دیا ۔  مجھ پر اہلِسُنَّت وجماعت کا حق ہونا واضح ہو گیا ۔  میں نے زِندگی میں پہلی بار دعوتِ اسلامی کے زیرِ اِہتمام ہونے والے 30 روزہ اجتماعی اِعتکاف میں شرکت کی سَعادت حاصل کی تو مجھ پر آفتابِ نیم روز سے بڑھ کر روشن ہو گیا کہ اَہلِ سُنَّت و جماعت ہی حق پر ہیں ۔ اَلْحَمْدُلِلّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ اب مجھے قلبی سُکون حاصل ہے ۔ اب تو میں نہ صرف مسجد میں نماز پڑھتا ہوں بلکہ درسِ فیضانِ سُنَّت کی سعادت بھی پارہا ہوں ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

            اے ہمارے پیارے اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ!ہمیں نبیِّکریم ، رَء ُوْفٌ رَّحیم صلَّی اللّٰہ تَعالٰی عَلَیْہ وَاٰلہٖ وَسلَّمکی مَحَبَّت میں جھوم جھوم کردُرُود وسلام کے نذرانے پیش کرنے کی توفیق عطافرما، گناہوں سے بچتے ہوئے نیکیاں کرنے اور آپ کی پیاری پیاری  سُنَّتوں پر عمل کرتے ہوئے تادمِ حیات دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے وابستہ رہنے کی توفیق عطافرما ۔  

اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

٭٭٭٭

ماخذ مراجع

کتاب                                              مصنف  / مؤلف                                   مطبوعہ

قرآن پاک                                            کلام الہٰی                                              مکتبۃ المدینہ کراچی

کنزالایمان                                           ااعلیٰ حضرت امام احمد رضاخان، متوفی ۱۳۴۰ھ                     مکتبۃ المدینہ کراچی

االدر المنثور                                         امام جلال الدین بن ابی بکر سیوطی، متوفی ۹۱۱ھ                  دار الفکر، بیروت ۱۴۰۳ھ

تفسیرطبری                                          امام ابو جعفر محمد بن جریر طبری ، متوفی ۳۱۰ھ                   دار الکتب العلمیہ، بیروت  ۱۴۲۰ھ

التفسیر الکبیر                                         امام فخر الدین محمد بن عمر بن حسین رازی، متوفی ۶۰۶ھ             دار احیاء التراث العربی، بیروت ۲۰ ۴ ۱ ھ

روح البیان                                          مولی الروم شیخ اسماعیل حقی بروسی، متوفی۱۱۳۷ھ                داراحیاء التراث العربی بیروت

اللباب فی علوم الکتاب                                 ابوحفص عمر بن علی ابن عادل حنبلی ، متوفّٰی۸۸۰ھـ               دارالکتب العلمیہ۱۴۱۹ھـ

خزائن العرفان                                        صدر الافاضل مفتی نعیم الدین مراد آبادی، متوفّٰی ۶۷ ۳ ۱ ھ            مکتبۃ المدینہ کراچی

کوثر الخیرات                                          حضرت علّامہ مولانا محمد اشرف سیالوی متوفی ۱۴۳۴ھ             ضیاء القرآن پبلی کیشنز، لاہور

صحیح بخاری                                        امام ابوعبد اللّٰہ  محمد بن اسماعیل بخاری ، متوفی ۲۵۶ھ               دارالکتب العلمیہ، بیروت ۱۴۱۹ھ

صحیح مسلم                                         امام ابو الحسین مسلم بن حجاج قشیری، متوفی ۲۶۱ھ                دارابن حزم ۱۴۱۹ھ

سنن الترمذی                                        امام ابو عیسیٰ محمد بن عیسیٰ ترمذی، متوفی ۲۷۹ھ                   دار المعرفہ، بیروت۱۴۱۴ھ

سنن ابن ماجہ                                        ابو عبد اللّٰہ  محمد بن یزید ابن ماجہ، متوفی ۲۷۳ھ                  دار المعرفہ، بیروت۱۴۲۰ھ

سنن أبی داود                                          امام ابو داؤد سلیمان بن اشعث سجستانی، متوفی ۲۷۵ھ              دار احیاء التراث العربی، بیروت ۱۴۲۱ھ

 



Total Pages: 141

Go To