Book Name:Guldasta e Durood o Salam

{3}قلْب کی صَفائی کے لئے ہر روز بعد نمازِصُبْح ساٹھ(60 )بار اور بعد نمازِ عَصْر تین (3) بار اور بعدنَمازِعِشاتین(3 )باروِرْد رکھے ۔

{4}دُشمنوں ، ظالِموں ، حاسِدوں اور حاکِموں کے شَر سے محفوظ رہنے کے لئے اور غم و غُربَت دُور ہونے کے لیے چالیس (40) شب مُتَوَاتر بعد نمازِعشا اِکْتالِیس (41)بار پڑھے ۔

{5} روزی میں بَرَکت کے لئے سات7 بار بعدنمازِفَجْر ہمیشہ وِرد رکھے ۔

{6} عَقِیْمَہ (یعنی بانجھ عورت) کے لئے اِکّیس(21) خُرموں (چھوہاروں ) پر سات(7)سات(7 )بار دم کرکے ایک خُرما (چھوہارا) روز کھلادے اور بعدِحیض، طُہر (یعنی پاکی کے ایام) میں ہَمْبِسْتر ہو بفَضْلِ خداعَزَّوَجَلَّنیک فَرزَند پیدا ہو ۔  

{7} اگر حامِلہ پر خَلَل (یعنی تکلیف) ہو تو سات(7) دن برابر سات(7) مرتبہ پانی پر دم کرکے پلائے ۔

{8} واسطے مُواصِلَتِ طالِب و مَطْلُوب (یعنی جائز مَحَبَّت مَثَلاً میاں بیوی میں مَحَبَّت) اور ہر مَقْصُود کے لئے آدِھی رات کے بعد باوُضو چالیس (40)بار صِدْق و یقین کے ساتھ پڑھے اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ  وَجَلَّ طْلُوبِ دلی حاصِل ہوگا ۔ (اَعْمَال رضا، ص۲۲ )

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! کثرت کے ساتھ دُرُودِپاک پڑھنے کی عادت بنانے ، صلوۃ وسنَّت کی راہ پرگامزن ہونے کیلئے دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے ہر دم وابَستہ رہئے ، اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ  وَجَلَّ بَرَکتیں اور سَعادتیں ہی سَعادتیں پائیں گے ۔ مُعاشَرَے کے کئی بگڑے ہوئے افراد دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول کی بَرَکت سے اَلْحَمْدُلِلّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ راہِ راست پر آچکے ہیں اور کتنے ہی ایسے ہیں جو دُرُودو سلام کے عاشِق بن کر ہَمہ وَقت سرکار عالی وقارصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم پرہدیۂ دُرُودوسلام نچھاور کرتے رہتے ہیں ، آپ کی ترغیب کیلئے ایسی ہی ایک صلاۃ و سلام کی عاشِقہَ کی ایمان اَفروز مَدَنی بہار گوش گزار کی جاتی ہے ۔

صَلٰوۃ وسَلام کی عاشِقہ

بابُ المدینہ (کراچی) کے علاقہ رَنچھوڑ لائن کے مُقیم اسلامی بھائی کے بَیان کا خُلاصَہ ہے کہ میری حقیقی بہن (عُمْرتقریباً 22سال)  غالِباً 1994؁ء میں دعوتِ اسلامی کے مُشکبار مَدَنی ماحول سے وابَستہ ہوگئیں ۔ اس مَدَنی تحریک کے پاکیزہ مَاحول کی بَرَکَت سے ان کی زِندگی میں مَدَنی اِنْقِلاب بَرپا ہوگیا ۔  پَنج وَقْتَہ نَماز پابَندی سے پڑھنے لگیں ، T.V.پر فلمیں ڈرامے دیکھنا چھوڑدئیے ، گھر والے اگر T.V.چَلاتے تو یہ دوسرے کمرے میں چلی جاتیں ۔ 1995؁ء میں ایک دن اچانک ان کی طَبِیعَت خراب ہوگئی ، عِلاج کروایا مگر جُوں جُوں دوا کی مرض بڑھتاگیا، حتّٰی کہ اس قَدَر کمزور ہوگئیں کہ بغیر سہارے کے بیٹھ بھی نہیں سکتی تھیں ۔ وہ دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول کی بَرَکت سے پیارے آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم   پر کثرت سے دُرُود وسلام پڑھا کرتیں ۔ جُمُعہ کے دن جب عاشِقانِ رَسول کی مَساجِدسے بعد نمازِجُمُعہ پڑھے جانے والے صلٰوۃ وسلام ...

مُصْطفٰی جانِ رَحمت پہ لاکھوں سلام

شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام(حدائقِ بخشش ، ص۲۹۵)

کی مَدْھ بھری صَدائیں ان کے کانوں تک پہنچتیں تو ان پر سُرور کی کَیفِیَّت طاری ہوجاتی ۔  وہ شدید تکلیف و کمزوری کے باوُجود کھڑکی کا سہارا لے کر پردے کی اِحْتِیاط کے ساتھ اَدَباًکھڑی ہوجاتیں اور صلوٰۃ و سلام کی صَداؤں میں گُم ہوجاتیں ۔ ان کی آنکھوں سے آنسو جار ی ہو جاتے حتٰی کہ بارہا روتے روتے ہِچْکِیاں بندھ جاتیں اور جب تک مختلف مَساجِد سے  صلوٰۃ و سلام  کی آوازیں آنا بند نہ ہوتیں وہ اسی طرح ذَوق و شَوق اور رِقّت کے ساتھ  صلوٰۃ و سلام  میں حاضِر رہتیں ۔ گھر والے انکی بیماری کیوجہ سے تَرْس کھا کر بیٹھنے کا مَشْوَرہ دیتے تو روتے ہوئے انہیں مَنْع کردیتیں ۔ ان کی زَبان پروَقْتًافوَقْتًا بِسْمِ اللّٰہ، کَلِمَۂ طَیِّبہ اور دُرُودِ پاک کا وِرْد جاری رہتا ۔

15رَمَضانُ المبارَک1415؁ ھ کو اُنہوں نے بڑی بہن سے پانی مانگا ، پانی پینے سے قَبْل دوپٹا سر پر رکھا، بِسْمِ اللّٰہ شریف پڑھی اور پھر پانی پی کر ایک دم لیٹ گئیں ۔ بہن نے سنبھالنے کی کوشِش کی تو دیکھا کہ اُن کی روح قَفَسِ عُنْصُری سے پروا ز کرچکی تھی ۔  عَرْصہ دراز تک بیمار رہنے کے باعِث میری بہن سوکھ کر کانٹا بن چکی تھی ۔  چِہْرے کی ہڈیاں نِکَل آئیں تھیں ، پُھنْسیاں بھی ہوگئی تھیں اور رَنگت سِیاہی مائل ہوچکی تھی ۔  مگر جب انہیں بعدِ وَفات غُسل دے کر کَفَن پَہنایا گیا تو ہم نے دیکھا کہ حیرت انگیز طور پرمیری بہن کا چِہر ہ پُر گوشت اور رَوشن ہوگیا اور چِہْرے کی تمام پُھنْسِیاں بھی حیرت انگیز طور پَر صاف ہوچکی تھیں ۔ اَلْحَمْدُلِلّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ یہ سب دُرُودِ پاک پڑھنے کی بَرَکتیں ہیں  ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

اے ہمارے پیارے اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ !ہمیں حُضُورصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم پر کثرت کیساتھ دُرُودِپاک پڑھنے کی توفیق عطا فرما اور ہمیں وقتِ نَزْع جلوۂ محبوبصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  میں ایمان و عافِیَّت کی موت نصیب فرما ۔ اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

٭٭٭٭

بیان نمبر : 48

ایک گُنہگار کی بَخْشِش کا سبب

حضرتِ سیِّدُنا موسیٰ کَلیمُ اللّٰہعَلٰی نَبِیِّناوَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلام کی قوم میں ایک شخص اِنْتہائی گُنہگار تھا اس نے اپنی ساری زِندگی اللّٰہعَزَّوَجَلَّ کی نافرمانیوں میں بَسر کی، جب وہ مرگیا تو بنی اسرئیل نے اسے یُونہی



Total Pages: 141

Go To