Book Name:Ihtiram e Muslim

سواری میں  شریک تھے۔دونوں  حضرات کا بیان ہے کہ جب سرکارِ نامدار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی پیدل چلنے کی باری آتی تو ہم دونوں  عرض کرتے کہ سرکار !  آپ سوارہی رہئے ،  حضور کے بدلے ہم پیدل چلیں  گے۔ ارشاد ہوتا  : ’’تم مجھ سے زِیادہ طاقتور نہیں  ہو اور میں  بہ نسبت تمہارے ثواب سے بے نیاز نہیں  ہوں۔‘‘ (یعنی مجھ کو بھی ثواب چاہئے پھر میں  کیوں  پیدل نہ چلوں  ! ) (شرحُ السّنۃ ج۵ ص۵۶۶حدیث۲۶۸۰)

 مَدَنی قافِلے میں  سفر کیجئے

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو !  عاشقانِ رسول کے مَدَنی قافلے میں  مسلسل سفرکی سعادت اور مَدَنی انعامات کا  رسالہ پر کرکے ہرمَدَنی ماہ جمع کروانے کی برکت سے  اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ  بطفیل مصطفٰے  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  اپنی نشست دوسروں  کو پیش کرنے کیلئے ایثار کا جذبہ پیدا ہوگااور اس کی برکت سے  اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ   سفر حج و دیدارِ مدینہ بھی نصیب ہوگااور اِثنائے سفر بھی مد ینے کے مسافروں  کیلئے منٰی شریف ،   مزدلفہ شریف،   عرفات شریف اور مکّۂ مکرَّمہ و مدینۂ منوَّرہ زَادَھَا اللہُ شَرَفاً وَّ تَعْظِیْماً    میں  دیوانگی کے ساتھ نشستیں  پیش کرتے رہنے کی سعادتیں  ملتی رہیں گی۔    ؎ 

یارب !  سوئے مدینہ مستانہ بن کے جاؤں

اُس شمع دو جہاں  کا پروانہ بن کے جاؤں

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب !                        صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

زِیادہ جگہ نہ گھیرئیے

            اجتماعات وغیرہ میں  جہاں  لوگ زیادہ ہوں  وہاں  اپنی سہولت کیلئے زیادہ جگہ گھیر کر دوسروں  کیلئے تنگی کا باعث نہیں بننا چاہئے۔ چنانچِہ حضرت سیِّدُنا سہل بن معاذ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا کا بیان ہے ،  میرے والد گرامی رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ فرماتے ہیں  کہ ہم پیارے آقا صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کے ساتھ جہاد میں  گئے تو لوگوں  نے منزلیں تنگ کردیں  (یعنی ضرورت سے زیادہ جگہ گھیر لی)اور راستہ روک لیا۔اِس پر  رَسُولُ اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی علیہ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  نے ایک آدَمی کو بھیجا کہ وہ یہ اعلان کرے،  ’’بیشک جو منزلیں  تنگ کرے یا راستہ روکے تو اُس کا کچھ جہاد نہیں۔‘‘(ابوداوٗد ج۳ ص۵۸ حدیث۲۶۲۹)

آنیوا لے کیلئے سَرَکنا سُنّت ہے

     جو لوگ پہلے سے بیٹھے ہوں  اُن کے لئے سنت یہ ہے کہ جب کوئی آئے تو اس کیلئے سرکیں  ۔ حضرتِ سیِّدُنا واثلہ بن خطاب رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ سے رِوایت ہے کہ ایک شخص تاجدارِ مدینہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی خدمت میں  حاضرہوا۔ آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ مسجد میں  تشریف فرما تھے ۔ رَحمتِ دو عالم ،  نورِ مجسم،   شاہِ بنی آدم،  رسولِ مُحْتَشَم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اُس کیلئے اپنی جگہ سے سرک گئے۔اُس نے عرض کی :   یَا رَسُولَ اللہ !  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی علیہ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  جگہ کشادہ موجود ہے،  (آپ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے سرکنے کی تکلیف کیوں  فرمائی !  )فرمایا : ’’مسلمان کا حق یہ ہے کہ جب اُس کا بھائی اُسے دیکھے اُس کیلئے سرک جائے۔‘‘(شُعَبُ الْاِیمان ج۶ ص۴۶۸ حدیث۸۹۳۳)

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو ! عاشقانِ رسول کے مَدَنی قافلے میں  مسلسل سفرکی سعادت اور ہر مَدَنی ماہ مَدَنی انعامات کا رسالہ پر کر کے جمع کروانے کی بَرَکت سے  اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ  بطفیل مصطَفٰے  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی علیہ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  تھوڑی سی جگہ میں  برکت ہوگی دوسروں  کیلئے سرکنے کی سنت پر عمل کا ذِہن بنے گااور  اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ  جنَّتُ الْبَقِیع میں  کُشادَہ ترین جگہ نصیب ہوگی۔    ؎     

زاہدینِ دُنیا بھی رَشک کرتے عاصی پر

میں  بقیعِ غرقد میں  دَفن ہو اگر جاتا

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب !                      صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

 دوسروں  سے چُھپا کر بات کر نا

 



Total Pages: 14

Go To