Book Name:Faizan e Khadija tul Kubra

ہوئے اور وہ پہلے فرزند ہیں جنہوں نے اولادِ اطہار رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُم میں سب سے پہلے انتقال فرمایا۔ ([1])

حضرتِ سیِّدُنا عَـبْدُ الله رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ

آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ مکہ مُکَرَّمَہ زَادَھَا اللہُ شَرَفًا وَّتَعْظِیْـمًا میں بعدِ ظُہُور اسلام پیدا ہوئے اور عہدِ طفولیت میں ہی انتقال فرما گئے۔ ([2]) صحیح قول کے مطابق طیب وطاہِر آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ کے لقب ہیں۔ ([3])

حضرتِ سیِّدَتُنا زینب رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا

رسولِ پاک صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی شہزادیوں میں آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا سب سے بڑی ہیں، مروی ہے کہ جب پیارے آقا صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی عمر مُبَارَک 30 برس تھی اس وقت آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا کی وِلادت ہوئی، زمانہ اسلام پایا اور مُشَرَّف بَہ اِسْلام بھی ہوئیں، غزوۂ بدر کے بعد مَدِیْنَۃُ الْمُنَوَّرَہ زَادَھَا اللہُ شَرَفًا وَّتَعْظِیْـمًا کی طرف ہجرت کی، اپنے خالہ زاد حضرتِ ابوالعاص بن ربیع رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ کے ساتھ رشتۂ ازدواج میں منسلک ہوئیں، آٹھ۸ ہجری کے شروع میں انتقال فرمایا اور دارِ فنا (دنیا) سے دارِ بقا (آخرت) کی طرف روانہ ہوئیں۔ ([4]) آپ کے ہاں ایک بیٹے حضرتِ علی بن ابوالعاص رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُمَا اور ایک بیٹی حضرتِ امامہ بنتِ ابوالعاص رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُمَا کی وِلادت ہوئی۔ ([5])

حضرتِ سیِّدَتُنا رقیہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا

جب پیارے آقا صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی عمر مُبَارک 33 سال تھی تب آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا کی وِلادت ہوئی، حضرتِ عثمان بن عفان رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ کے ساتھ نِکاح ہوا۔ ([6]) حضرتِ زيد بن حارثہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ جس دن جنگ بدر میں مسلمانوں کی فتح کی خوش خبری لے کر مَدِیْنَۃُ الْمُنَوَّرَہ زَادَھَا اللہُ شَرَفًا وَّتَعْظِیْـمًا پہنچے اسی دن آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا نے 20 برس کی عمر پا کر انتقال فرمایا۔([7]) آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا کے شکم اطہر سے حضرت عثمان رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ کے ایک فرزند حضرتِ عبد الله رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ پیدا ہوئے، چار ہجری  میں ان کا بھی انتقال ہو گیا۔ ([8])

حضرتِ سیِّدَتُنا اُمِّ کلثوم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا

حضرتِ سیِّدَتُنا رقیہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا کے انتقال فرمانے کے بعد ربیع الاوّل تین۳ ہجری میں حُضُورِ اقدس صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے حضرتِ عثمانِ غنی رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہُ سے آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنۡہَا کا نِکاح کر دیا۔ حضرتِ سیِّدُنا عثمانِ غنی رَضِیَ اللہُ  تَعَالٰی عَنۡہُ کی آپ رَضِیَ اللہُ



[1]   مدارج النبوة، قسم پنجم، باب اول در ذکر اولادِ کرام،۲۔ / ۴۵۱، ملتقطاً.

[2]   المرجع السابق.

[3]   المواهب اللدنية، المقصد الثانى، الفصل الثانى فى ذكر اولاده الكرام   الخ، ۱ / ۳۹۷.

[4]   شرح الزرقانى على المواهب، المقصد الثانى، الفصل الثانى فى ذكر اولاده الكرام   الخ ، ۴ / ۳۱۸، ملتقطًا.

[5]   المواهب اللدنية، المقصد الثانى، الفصل الثانى فى ذكر اولاده الكرام الخ، ۱ / ۳۹۲، ملتقطًا

[6]   المرجع السابق.

[7]   شرح الزرقانى على المواهب، المقصد الثانى، الفصل الثانى فى ذكر اولاده   الخ، ۳ / ۳۲۴، ملتقطًا

[8]   امتاع الاسماع، فصل فى ذكر ابناء بنات   الخ، ۵ / ۳۵۵، ملتقطًا.



Total Pages: 39

Go To