Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

(3)… جس نے اپنے مال کی زکوٰۃ ادا کردی اس سے مال کا شر دور ہو گیا ۔ )[1](

(4)…زکوٰۃ اسلام کا پُل ہے۔)[2](

زکوٰۃ نہ دینے کے نقصانات

(1)… جو قوم زکوٰۃ نہ دے گی اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  اسے قحط میں مبتلا فرمائے گا۔)[3](

(2)… خشکی و تری میں جو مال تلف ہوتا ہے، وہ زکوٰۃ نہ دینے سے تلف ہوتا ہے۔)[4](

(3)… جس مال کی زکوٰۃ نہیں دی گئی قیامت کے دن وہ مال گنجا سانپ بن کر مالک کو دوڑائے گا۔)[5](

٭…٭…٭

صدقۂ فِطر

صدقۂ فطر سے مراد

سوال …:                     صدقۂ فطر سے کیا مراد ہے؟

جواب …:   صدقۂ فطر سے مراد وہ صدقہ ہے جو رمضان المبارک کے بعد نمازِ عید کی ادائیگی سے قبل دیا جاتا ہے ۔

صدقۂ فطر کی شرعی حیثیت

سوال …:                     صدقۂ فطر کی شرعی حیثیت کیا ہے؟

جواب …:                       صدقۂ فطر واجب ہے)[6]( صحیح بخاری میں ہے کہ سرکارِ والا تَبار صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے مسلمانوں پر صدقۂ فطر مقرر کیا۔)[7](

سوال …:                     صدقہ فطر کس پر واجب ہے؟

جواب …:                       صدقہ فطر ہر اس آزاد مسلمان پر واجب ہے جو مالک ِ نصاب ہو اور اس کانصاب حاجتِ اصلیہ سے فارغ ہو۔)[8](مالِکِ نِصاب مَرد اپنی طرف سے، اپنے چھوٹے بچّوں کی طرف سے اور اگر کوئی مَجْنُون (یعنی پاگل) اولاد ہے (خواہ بالِغ ہی ہو) تو اُس کی طرف سے بھی صدقۂ فطر ادا کرے۔ ہاں !  اگر وہ بچّہ یامَجْنُون خود صاحِبِ نِصاب ہے تو پھراُ س کے مال میں سے فِطْرہ اداکردے۔)[9](

سوال …:                     صدقۂ فطر کب واجب ہوتا ہے؟

جواب …:                       صدقۂ فطر عیدکے دن صبح صادق طلوع ہوتے ہی واجب ہو جاتا ہے۔ )[10](

سوال …:                     صدقۂ فطر کب واجب ہوا؟

جواب …:    دو ہجری میں رمضان کے روزے فرض ہوئے اور اسی سال عید سے دو دن پہلے صدقۂ فطرکا حکم دیا گیا۔ )[11](

سوال …:                     کیا صدقۂ فطر کا ذکر قرآنِ پاک میں بھی ہے؟

جواب …:                       جی ہاں !  صدقۂ فطر کا ذکر 30ویں پارے کی سورہ اعلیٰ میں کیا گیا ہے۔ چنانچہ مروی ہے کہ مدینے کے تاجدار صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے اس آیت کریمہ:  



[1]    المعجم الاوسط،   ۱ / ۴۳۱،   حدیث: ۱۵۷۹

[2]    المعجم الاوسط،   ۶ / ۳۲۸،   حدیث: ۸۹۳۷

[3]    المعجم الاوسط،   ۳ / ۲۷۵ ، حدیث: ۴۵۷۷

[4]    الترغیب و الترھیب،   کتاب الصدقات،   الترھیب من منع الزکوۃ    الخ،  ۱ / ۳۰۸،   حدیث:۱۶

[5]    مسند احمد ، ۳ / ۶۲۶،   حدیث: ۱۰۸۵۷

[6]    در مختار،   کتاب الزکوۃ،   باب صدقۃ الفطر،   ۳ / ۳۶۲

[7]    بخاری،   کتاب الزکوٰۃ،   باب فرض صدقۃ الفطر،   ۱ / ۵۰۷،   حديث: ۱۵۰۳  ملخصاً

[8]    در مختار،   کتاب الزکوۃ،  باب صدقۃ الفطر،   ۳ / ۳۶۵