Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

کا گھر، پہننے کے کپڑے، سواری، علمِ دین سے متعلق کتابیں اور پیشے سے متعلق اوزار وغیرہ۔ )[1](

سوال …:                     زکوٰۃ کے فرض ہونے کے لیے سال گزرنے میں قَمری (یعنی چاند کے) مہینوں کا اعتبار ہوگا یا شمسی مہینوں کا؟

جواب …:                       زکوٰۃ کے فرض ہونے کے لیے سال گزرنے میں قَمری (یعنی چاند کے) مہینوں کا اعتبار ہوگا نہ کہ شمسی مہینوں کا، بلکہ شمسی مہینوں کا اعتبار حرام ہے۔ )[2](

سوال …:                     کتنی زکوٰۃ دینا فرض ہے؟

جواب …:                                          نصاب کا چالیسواں حصہ (یعنی 2.5%) زکوٰۃ کے طور پر دینا فرض ہے۔

سوال …:                     زکوٰۃ کب فرض ہوئی؟

جواب …:                                          زکوٰۃ2ہجری میں روزوں سے قبل فرض ہوئی ۔)[3](

سوال …:                     کیا زکوٰۃ کی فرضیت قرآن و سنت سے ثابت ہے؟

جواب …:                                          جی ہاں !  زکوٰۃ کی فرضیت کتاب وسنّت سے ثابت ہے۔ چنانچہ،

٭…  اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  قرآنِ پاک میں ارشاد فرماتا ہے :

وَاَقِیۡمُوا الصَّلٰوۃَ وَاٰتُوا الزَّکٰوۃَ (پ۱، البقرۃ: ۴۳)         ترجمۂ کنز الایمان:  اور نماز قائم رکھو اور زکوٰۃ دو۔

صدر الافاضل حضرت مولانا سیدمحمد نعیم الدین مراد آبادی عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْہَادِی اس آیت کے تحت تفسیر خزائن العرفان میں لکھتے ہیں :  اس آیت میں نمازو زکوٰۃ کی فرضیت کا بیان ہے ۔

٭…  شہنشاہِ مدینہ، قرارِ قلب و سینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے جب حضرت سیدنا معاذ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کو یمن کی طر ف بھیجاتو ارشاد فرمایا:  ان کو بتاؤ کہ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  نے ان کے مالوں میں زکوٰۃ فرض کی ہے جو ان کے مال داروں سے لے کر فقرا کو دی جا ئے گی۔ )[4](

سوال …:                    اگر کوئی زکوٰۃ کو فرض نہ مانے تو اس کے متعلق کیا حکم ہے؟

جواب …:                                          اگر کوئی زکوٰۃ کو فرض نہ مانے تو وہ کافر ہے۔ )[5](

سوال …:                                      کیا زکوٰۃ دینے سے مال میں کمی ہوجاتی ہے؟

جواب …:                                          جی نہیں !  زکوٰۃ دینے سے مال میں کمی نہیں ہوتی بلکہ مال پہلے سے بھی بڑھ جاتا ہے، لہٰذا زکوٰۃ دینے والے کو یہ یقین رکھتے ہوئے خوشدلی سے زکوٰۃ دینی چاہیے کہ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  اس کو بہتر بدلہ عطا فرمائے گا۔ چنانچہ، اللہ  عَزَّوَجَلَّ  کے مَحبوب، دانائے غُیوب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ عظمت نشان ہے:  صدقہ سے مال کم نہیں ہوتا۔)[6](اگرچہ ظاہری طور پر مال کم ہوتا نظر آتا ہے لیکن حقیقت میں بڑھ رہا ہوتا ہے جیسے درخت سے خراب ہونے والی شاخیں تراشنے سے بظاہر درخت میں کمی نظر آتی ہے لیکن یہ تراشنا اس کی نشوونما کا سبب ہے ۔ مُفَسِّرِ شَہِیر، حکیمُ الامَّت مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْحَنَّان فرماتے ہیں :  زکوٰۃ دینے والے کی زکوٰۃ ہر سال بڑھتی ہی رَہتی ہے۔ یہ تجرِبہ ہے جو کسان کھیت میں بیج پھینک آتا ہے وہ بظاہِر بوریاں خالی کر لیتا ہے لیکن حقیقت میں مع اضافہ کے بھر لیتا ہے۔ گھر کی بوریاں چوہے، سُرسُری وغیرہ کی آفات سے ہلاک ہو جاتی ہیں یا یہ مطلب ہے کہ جس مال میں سے صَدَقہ نکلتا رہے اُس میں سے خرچ کرتے رہو اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  بڑھتا ہی رہے گا، کُنویں کا پانی بھرے جاؤ تو بڑھے ہی جائے گا۔ )[7](

سوال …:                    زکوٰۃ دینے کے فوائد کیا ہیں ؟

جواب …:                                          زکوٰۃ دینے کے فوائد دو طرح کے ہیں کچھ وہ ہیں جو قرآنِ پاک میں بیان ہوئے ہیں اور بعض حدیثِ پاک میں مروی ہیں ۔ چنانچہ،

 



[1]    ھدایۃ،   کتاب الزکوۃ،   ۱ / ۹۶

[2]    فتاوی رضویہ،   ۱۰ / ۱۵۷  ماخوذاً

[3]    در مختار،   کتاب الزکوۃ،   ۳ / ۲۰۲

[4]    ترمذی،   کتاب الزکوۃ،   باب ما جاء فی کراھیۃ اخذ خیار المال فی الصدقۃ،   ۲ / ۱۲۶،   حدیث:۶۲۵ ملخصاً

[5]    عالمگیری،   کتاب الزکوۃ،   الباب الاول،  ۱ / ۱۷۰

[6]    المعجم الاوسط،   ۱ / ۶۱۸،   حدیث: ۲۲۷۰

[7]    مراٰۃ المناجیح،   ۳ / ۹۳



Total Pages: 146

Go To