Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

جواب …:                       سَحَری سے مراد وہ کھانا ہے جو رمضان المبارک میں رات کے آخری حصے سے صبح صادق تک روزہ رکھنے کے لیے کھایا جاتا ہے۔

سوال …:                     سَحَری کب تک کر سکتے ہیں ؟

جواب …:                       سَحَری میں تاخِیر کرنا مُسْتَحَب ہے اور دیر سے سَحَری کرنے میں زیادہ ثواب مِلتا ہے مگر اتنی تاخیر بھی نہ کی جائے کہ صبحِ صادق کا شُبہ ہونے لگے۔

سوال …:                     سَحَری میں تاخیر سے مُراد کونسا وَقت ہے؟

جواب …:                       سَحَری میں تاخیر سے مُراد رات کا چھٹا حِصّہ ہے۔

سوال …:                     رات کا چَھٹا حِصّہ کیسے معلوم ہو سکتا ہے؟

جواب …:                       غُروبِ آفتاب سے لے کر صُبح صادِق تک رات کہلاتی ہے۔ مَثَلا کسی دِن سات بجے شام کو سُورج غُروب ہوا اورپھر چار بجے صُبحِ صادِق ہوئی تو اِس طرح غروبِ آفتاب سے لے کر صُبحِ صادِق تک جو نو گھنٹے کا وَقفہ گُزرا وہ رات کہلایا۔ اب رات کے اِ ن نو گھنٹوں کے برابر برابر چھ حِصّے کئے تو ہر حِصّہ ڈیڑھ گھنٹے کا ہوا۔ اب رات کے آخِری ڈیڑھ گھنٹے (یعنی اڑھائی بجے تا چار بجے) کے دوران صُبحِ صادِق سے پہلے پہلے جب بھی سَحَری کی، وہ تاخیر سے کرنا ہوا۔

سوال …:                     جو لوگ صُبحِ صادِق کے بعد فَجر کی اذانیں ہورہی ہوں اور کھاتے پیتے رہیں ان کے متعلق کیا حکم ہے؟

جواب …:                       وہ لوگ جو صُبحِ صادِق کے بعد فَجر کی اذانیں ہورہی ہوں اور کھاتے پیتے رہیں ان کا روزہ نہیں ہوتا کیونکہ روزہ بند کرنے کا تَعلُّق اَذانِ فَجر سے نہیں بلکہ صبحِ صادق کے شروع ہونے سے ہے، لہٰذا صُبحِ صادِق سے پہلے پہلے کھانا پینا بند کرنا ضَروری ہے۔

اے ہمارے پیارے اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  !  ہمیں اپنی پسند کا روزہ دار بنا کر مدینے میں روزہ کی حالت میں اپنے پیارے محبوب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے قدموں میں موت اور جنت البقیع میں مدفن نصیب فرما۔    اٰمین

٭…٭…٭

زکٰوۃ

زکوٰۃ سے مراد

سوال …:                     زکوٰۃ سے کیا مراد ہے؟

جواب …:                                          زکوٰۃ شریعت کی جانب سے مقرر کردہ اس مال کو کہتے ہیں جسے اپنا ہر طرح کا نفع ختم کرنے کے بعد رضائے الٰہی کے لئے کسی ایسے مسلمان فقیر کی ملکیت میں دے دیا جائے جو نہ تو خود ہاشمی ہو اور نہ ہی کسی ہاشمی کا آزاد کردہ غلام ہو ۔)[1](

سوال …:                     ہاشمی سے کیا مراد ہے؟

جواب …:                                          اس سے مراد حضرت علی وجعفر وعقیل اور حضرت عباس وحارث بن عبدا لمطلب کی اولادیں ہیں ۔ ان کے علا وہ جنہوں نے نبی کریم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی اِعانت (مدد) نہ کی مثلاً ابولہب کہ اگرچہ یہ کافر بھی حضرت عبد المطلب کا بیٹا تھا مگر اس کی اولادیں بنی ہاشم میں شمار نہ ہوں گی۔)[2](

سوال …:                     زکوٰۃ کس پرفرض ہے؟

جواب …:                       زکوٰۃ دیناہر اُس عاقل، بالغ اور آزاد مسلمان پر فرض ہے جو سال بھر نصاب کا مالک ہو اور وہ نصاب اس کے قبضے میں ہونے کے ساتھ ساتھ اس کی حاجتِ اصلیہ (یعنی ضروریاتِ زندگی) سے زائد بھی ہو۔ نیز اس پر ایسا قرض بھی نہ ہو کہ اگر وہ قرض ادا کرے تو اس کا نصاب باقی نہ رہے۔)[3](

سوال …:                     نصاب کا مالک ہونے سے کیا مراد ہے؟

جواب …:                       نصاب کا مالک ہونے سے مراد یہ ہے کہ اس شخص کے پاس ساڑھے سات تولے سونا یا ساڑھے باون تولے چاندی یا اتنی مالیت کی رقم یا اتنی مالیت کا مالِ تجارت ہو ۔

سوال …:                     حاجتِ اصلیہ سے کیا مراد ہے؟

جواب …:                                          حاجتِ اصلیہ سے مراد وہ چیزیں ہیں جن کی عموماً انسان کو ضرورت ہوتی ہے اور ان کے بغیر گزر اوقات میں شدید تنگی ودشواری محسوس ہوتی ہے جیسے رہنے



[1]    در مختار،   کتاب الزکوۃ،   ۳ / ۲۰۳ تا ۲۰۶ ملتقطاً

[2]    بہارشریعت،   مال زکوٰۃ کے مصارف،   ۱ / ۹۳۱

[3]    بہارشریعت،   زکوٰۃ کا بیان،   ۱ / ۸۷۵ تا ۸۸۰  ملتقطاً



Total Pages: 146

Go To