Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

٭…  پھر بدستور تہبند و لفافہ یعنی چادر لپیٹیں ۔

٭…  پھر آخر میں سینہ بند پستان کے اوپر والے حصے سے ران تک لا کر کسی ڈوری سے باندھیں ۔

تجہیز و تکفین اور نمازِ جنازہ پڑھنے کی فضیلت

سوال …:                     کیا تجہیز و تکفین اور نمازِ جنازہ پڑھنے کی فضیلت بھی مروی ہے؟

جواب …:                       جی ہاں !  تجہیز و تکفین اور نمازِ جنازہ پڑھنے کی فضیلت بہت سی روایات میں مروی ہے۔ چنانچہ،

٭…  امیر المومنین حضرت سیِّدُنا علی المرتضیٰ کَرَّمَ اللّٰہُ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم سے مروی ہے کہ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کے پیارے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے ارشاد فرمایا کہ جو کسی میت کو نہلائے، کفن پہنائے، خوشبو لگائے، جنازہ اُٹھائے، نماز پڑھے اور (نہلاتے وقت) جو ناقص بات نظر آئے اسے چھپائے وہ گناہوں سے ایسا پاک ہو جاتا ہے جیسے ماں کے پیٹ سے پیدا ہوا ہو۔)[1](

٭…  سرکارِ مدینہ، قرارِ قلب وسینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ عظمت نشان ہے:  جو شخص (ایمان کا تقاضا سمجھ کر اور حصولِ ثواب کی نیت سے) اپنے گھر سے جنازہ کے ساتھ چلے، نمازِ جنازہ پڑھے اور دفن تک جنازہ کے ساتھ رہے، اس کے لئے دو قیراط)[2](ثواب ہے جس میں ہر قیراط اُحد (پہاڑ) کے برابر ہے اور جو شخص صرف نمازِ جنازہ پڑھ کر واپس آجائے (اور تدفین میں شریک نہ ہو) تو اس کے لئے ایک قیراط ثواب ہے۔)[3](

 نمازِ جنازہ کی شرعی حیثیت

سوال …:                     نمازِ جنازہ کی شرعی حیثیت کیا ہے؟

جواب …:              نمازِ جنازہ فرضِ کفایہ ہے۔ یعنی اگرکسی ایک نے بھی ادا کر لیا تو سب کی طرف سے ہوگیا ورنہ جن جن کو خبر پہنچی تھی اور نہیں آئے وہ سب گناہ گار ہوں گے۔)[4](

سوال …:                     کیا نمازِ جنازہ کے لئے جماعت شرط ہے؟

جواب …:              جی نہیں !  نمازِ جنازہ کے لئے جماعت شرط نہیں ، ایک شخص بھی پڑھ لے تو فرض ادا ہو جائے گا۔ )[5](

سوال …:                     اگر کوئی نمازِ جنازہ کا فرض ہونا نہ مانے تو اس کے متعلق کیا حکم ہے؟

جواب …:              اگر کوئی نمازِ جنازہ کا فرض ہونا نہ مانے تو وہ کافر ہے۔

نمازِ جنازہ کی شرائط

سوال …:                     نماز جنازہ کے صحیح ہونے کی شرائط بتائیے؟

جواب …:              نماز جنازہ کے صحیح ہونے کے لیے دو قسم کی شرائط ہیں :  ایک تو وہ ہیں جن کا تعلق نمازی سے ہے اور دوسری وہ ہیں جن کا تعلق میت سے ہے۔

سوال …:                     نمازی سے متعلق کیا شرائط ہیں ؟

جواب …:              نمازی سے متعلق وہی شرائط ہیں جو عام نمازی کی ہیں :

                         ٭…  بدن، جگہ اور کپڑوں کا پاک ہونا ٭…  ستر عورت

                        ٭…  قبلہ رُو ہونا     ٭…  نیت کا ہونا ٭…  اس میں وقت اور تکبیرِ تحریمہ شرط نہیں ۔

سوال …:                     میت سے متعلق شرائط کیا ہیں ؟  

جواب …:              میت سے متعلق شرائط یہ ہیں :  

٭…  میّت کا مسلمان ہونا۔

٭…  میّت کے بدن و کفن کا پاک ہونا۔

٭…  جنازہ کا وہاں موجود ہونا یعنی کُل یا اکثر یا نصف (آدھا بدن) مع سر کے موجود ہونا، لہٰذا غائب کی نماز نہیں ہو سکتی۔

 



[1]    ابن ماجہ،   كتاب الجنائز،   باب ماجاء فی غسل الميت،   ۲ / ۲۰۱ ، حدیث: ۱۴۶۲

[2]    قیراط اصل میں نصف دانق یعنی درہم کے بارھویں حصے کو کہتے ہیں۔ (عمدۃ القاری ، ۱۴ / ۴۸۳)

[3]    مسلم،   كتاب الجنائز،   باب فضل الصلاة علی الجنازة،   ص ۴۷۲،   حديث: ۵۶ - (۹۴۵)

[4]    فتاویٰ تاتارخانیہ،   کتاب الصلاۃ،   الفصل الثانی والثلاثون،   ۲ / ۱۵۳

[5]    عالمگیری،   کتاب الصلاۃ،   الباب الحادی والعشرون،   الفصل الخامس،   ۱ / ۱۶۲



Total Pages: 146

Go To