Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

سوال   :                        کیا آیتِ سجدہ پڑھنے یا سننے سے فوراً سجدہ کرنا ضروری ہے یا بعد میں بھی کر سکتے ہیں ؟

جواب     :                        اگر آیتِ سجدہ نماز میں پڑھی گئی تو سجدہ بھی نماز میں فوراً کرنا واجب ہے اور اگر آیتِ سجدہ بَیرونِ نماز (یعنی نماز کے باہَر) پڑھی تو فوراً سجدہ کر لینا واجِب نہیں ۔ ہاں بہتر ہے کہ فوراً کر لے اور وُضو ہو تو تاخیر مکروہِ تنزیہی۔ )[1]( اور اگر کسی وجہ سے فوراً سجدہ نہ کرسکے تو پڑھنے و سننے والے کو یہ کہہ لینا مُسْتَحَب ہے:  سَمِعْنَا وَ اَطَعْنَا٭۫ غُفْرَانَکَ رَبَّنَا وَ اِلَیۡکَ الْمَصِیۡرُ)۲۸۵((پ۳، البقرۃ: ۲۸۵) ترجَمۂ کنز الایمان:  ہم نے سُنا اور مانا، تیری معافی ہو اے رب ہمارے اور تیری ہی طرف پھرنا ہے۔ )[2] (  

سوال   :                      مدارس میں طالب علم قرآنِ کریم یاد کرنے کے لیے ایک ہی آیت ایک ہی جگہ بیٹھے بیٹھے بار بار پڑھتے ہیں تو کیا آیتِ سجدہ بار بار پڑھنے اور سننے سے بار بار سجدہ کرنا ہو گا؟

جواب     :                      جی نہیں !  ایک ہی مجلس میں سجدے کی ایک آیت کو بار بار پڑھا یا سنا تو ایک ہی سجدہ واجِب ہو گا، اگرچِہ چند شخصوں سے سنا ہو یونہی اگر آیت پڑھی اور وُہی آیت دوسرے سے سنی جب بھی ایک ہی سجدہ واجِب ہو گا۔)[3](

سوال   :                      اگر کوئی پوری سورت تلاوت کرے مگر آیتِ سجدہ نہ پڑھے تو اس کے متعلق کیا حکم ہے؟

جواب     :                      پوری سورت پڑھنا اور آیتِ سجدہ چھوڑ دینا مکروہِ تحریمی ہے اور صرف آیتِ سجدہ کے پڑھنے میں کراہت نہیں ، مگر بہتر یہ ہے کہ دو ایک آیت پہلے یا بعد کی ملالے۔)[4](

سجدۂ تِلاوت کا طریقہ

سوال   :                      سجدے کا مسنون طریقہ کیا ہے؟

جواب     :                      سجدے کا مسنون طریقہ یہ ہے کہ کھڑے ہو کر اَللهُ اَکْبَر کہتے ہوئے سجدے میں جایئے اور کم سے کم تین بار سُبْحٰنَ رَبِّیَ الْاَعْلٰی کہئے، پھر اَللهُ اَکْبَر کہتے ہوئے کھڑے ہو جایئے، پہلے پیچھے دونوں بار اَللهُ اَکْبَر کہنا سنّت ہے اور کھڑے ہو کر سجدے میں جانا اور سجدے کے بعد کھڑا ہونا یہ دونوں قِیام مُسْتَحَب ہیں ۔)[5]( لہٰذا بیٹھ کر بھی سجدۂ تلاوت کر سکتے ہیں ۔

سوال   :                      کیا سجدۂ تلاوت میں یہ نیت ہونا ضروری ہے کہ یہ سجدہ فلاں آیت کا ہے؟

جواب     :                      جی نہیں !  سجدۂ تلاوت کی نیّت میں یہ ضروری نہیں کہ فُلاں آیت کا سجدہ ہے بلکہ مُطلَقاً سجدۂ تلاوت کی نیّت کافی ہے۔

سوال   :                        کیا سجدۂ تلاوت میں اَللهُ اَکْبَر کہتے وقت کانوں کو ہاتھ لگائے جاتے ہیں ؟

جواب     :                        جی نہیں !  سجدۂ تلاوت میں اَللهُ اَکْبَر کہتے وقت کانوں کو ہاتھ نہیں لگائے جاتے۔)[6](

آیاتِ سجدہ کے فوائد

سوال   :                        اگر کوئی سجدے والی تمام آیات اکٹھی پڑھے تو اس کی کیا فضیلت ہے؟

جواب     :                        بہارِ شریعت میں ہے کہ جس مقصد کے لیے ایک مجلس میں سجدہ کی سب (یعنی عَزَّ وَجَلَّ 4) آیتیں پڑھ کر سجدے کرے اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  اس کا مقصد پورا فرما دے گا۔ خواہ ایک ایک آیت پڑھ کر اس کا سجدہ کرتا جائے یا سب کو پڑھ کر آخِر میں عَزَّ وَجَلَّ 4 سجدے کرلے۔)[7](

٭…٭…٭

سورۂ اخلاص کی فضیلت

 



[1]    بہارِ شریعت،   سجدۂ تلاوت کا بیان،   ۱ / ۷۳۳ ملتقطاً

[2]    ردالمحتار،   کتاب الصلاۃ،   باب سجود التلاوۃ،   ۲ / ۷۰۳

 

[3]    درمختارو رد المحتار،   کتاب الصلاۃ،   باب سجود التلاوۃ،    ۲ / ۷۱۲

[4]    در مختار،   کتاب الصلاۃ،   باب سجود التلاوۃ،   ۲ / ۷۱۷

[5]    درمختار،   کتاب الصلاۃ،   باب سجود التلاوۃ،   ۲ / ۶۹۹

[6]    تنویر الابصار،   کتاب الصلاۃ،   باب سجود التلاوۃ،   ۲ / ۷۰۰

[7]    بہارِ شریعت،   سجدۂ تلاوت کا بیان،   ۱ / ۷۳۸



Total Pages: 146

Go To