Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

جواب     :                        جی نہیں !  اگر کسی نے جان بوجھ کر واجب ترک کیا تو سجدۂ سَہْوْ سے وہ نقصان پورا نہ ہو گا بلکہ اعادہ یعنی دوبارہ نماز پڑھنا واجب ہے۔

سجدۂ سَہْوْ کی شرعی حیثیت

سوال   :                        سجدئہ سہو کی شرعی حیثیت کیا ہے؟

جواب     :   سجدئہ سہو واجِب ہے۔ )[1](

سوال   :                        اگر کسی نے سجدۂ سَہْوْ واجِب ہونے کے باوُجُود نہ کیا تو اس کے متعلق کیا حکم ہے؟

جواب     :                        اگر کسی نے سجدئہ سَہْوْ واجِب ہونے کے باوُجُود نہ کیا تو نَماز لوٹانا واجب ہے۔

سوال   :                        کیا کوئی ایسا واجب بھی ہے جس کے رہ جانے کی صورت میں سجدہ سَہْوْ واجب نہیں ہوتا؟

جواب     :                        جی ہاں !  کوئی ایسا واجب رہ جائے جو واجباتِ نَماز سے نہ ہو تو سجدئہ سَہْوْ واجِب نہیں ہوتا مَثَلاً ترتیب سے قرآنِ پاک پڑھنا واجِب ہے مگر اس کا تعلُّق واجباتِ نَماز سے نہیں بلکہ واجباتِ تِلاوَت سے ہے، لہٰذا اگر کسی نے نماز میں خلافِ ترتیب قرآنِ کریم پڑھا مثلاً پہلے سورۂ ناس اور بعد میں سورۂ فلق تو اس سے سجدئہ سَہْوْ واجب نہ ہو گا۔

سوال   :                      اگر کوئی فرض رہ جائے تو کیا سجدہ سَہْوْ سے اس کی بھی تلافی ہو جائے گی؟

جواب     :                      جی نہیں !  فرض ترک ہو جانے سے نَماز جاتی رَہتی ہے سجدئہ سَہْوْ سے اس کی تَلافی نہیں ہو سکتی، لہٰذا نماز دوبارہ پڑھنا ہو گی۔

سوال   :                      اگر سنّتیں یا مُسْتَحَبّات چھوٹ جائیں تو کیا اس صورت میں بھی سجدۂ سَہْوْ کر لینا چاہئے؟

جواب     :                      سنّتیں یا مُسْتَحَبّات مَثَلاً ثنا، تعوُّذ، تَسمِیہ، اٰمین، تکبیراتِ اِنْتِقالات اورتَسبیحات کے ترک سے سجدئہ سَہْوْ واجِب نہیں ہوتا، نَماز ہوجاتی ہے (لہٰذا اس صورت میں سجدۂ سَہْوْ نہ کریں )۔ )[2](  مگر دوبارہ پڑھ لینا مُسْتَحَب ہے بھول کر ترک کیا ہو یا جان بوجھ کر۔

سوال   :                      اگر ایک سے زائد واجبات ترک ہوئے ہوں تو کیا ہر ایک کے لیے الگ الگ سجدہ سَہْوْ کرنا ہو گا؟

جواب     :                      جی نہیں !  نَماز میں اگرچِہ تمام واجِب ترک ہوئے ، سَہْو کے دو ہی سَجدے سب کیلئے کافی ہیں ۔)[3](

سوال   :                      اگر امام سے نماز میں کوئی واجب چھوٹ گیا تو کیا مقتدی پر بھی سجدہ سَہْوْ واجب ہے؟

جواب     :                      جی ہاں !  اگر اِمام سے سَہْو ہوا اور سَجدئہ سَہْوْ کیا تو مُقتدی پر بھی سجدہ واجِب ہے۔)[4](

سوال   :                      اگرمُقتدی سے بحالتِ اقتِدا سَہْو واقع ہوا تو کیا اس پر سَجدئہ سَہْوْ واجِب ہے؟

جواب     :                      جی نہیں !  اگر مُقتدی سے بحالتِ اقتِدا سَہْو واقع ہوا تو اس پر سَجدئہ سَہْو واجب نہیں ۔ )[5]( اور نَماز لوٹانے کی بھی حاجت نہیں ۔

سوال   :                      کیا سجدہ سہو صرف فرض نماز میں واجب ہے یا دیگر نمازوں میں بھی واجب ہے؟

جواب     :           سجدہ سہو کا تعلق نماز سے ہے خواہ فرض ہویا سنت، وتر ہو یا نفل۔ کسی بھی نماز میں واجب ترک ہو جائے تو سجدۂ سَہْوْ واجب ہے۔

سجدہ سَہْوْ واجب ہونے کی چند صورتیں

سوال   :                      چند صورتیں بتائیے جن میں سجدہ سَہْوْ واجب ہوتا ہے۔

جواب     :                      سجدۂ سَہْوْ واجب ہونے کی چند صورتیں یہ ہیں :  

٭…تَعدیلِ ارکان (مَثَلاً رُکوع کے بعد سیدھا کھڑا ہونا یا دو سَجدوں کے درمیان ایک بار سبحٰن الله کہنے کی مقدار سیدھا بیٹھنا) بھول گئے سجدئہ سَہْو واجِب ہے۔ )[6](

٭…دعائے قُنوت یا تکبیرِ قُنوت بھول گئے سجدئہ سَہْوْ واجِب ہے۔)[7](

٭… قِراءت وغیرہ کسی موقع پر سوچنے میں تین مرتبہ  سبحٰن الله کہنے کا وَقفہ گزر گیا سجدئہ سَہْو واجِب ہو گیا۔)[8](

 



[1]    در مختار ، کتاب الصلاۃ،   باب سجود السھو،   ۲ / ۶۵۵

[2]    فتح القدیر،  کتاب الصلاۃ،   باب سجود السھو،   ۱ / ۴۳۸

[3]    ردالمحتار،   کتاب الصلاۃ،   باب سجود السھو،   ۲ / ۶۵۵

[4]    در مختار ، کتاب الصلاۃ،   باب سجود السھو،   ۲ / ۶۵۸

[5]    عالمگیری،   کتاب الصلاۃ،   الباب الثانی عشر،    ۱ / ۱۲۸

[6]    عالمگیری،  کتاب الصلاۃ،   الباب الثانی عشر،     ۱ / ۱۲۷



Total Pages: 146

Go To