Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

ثابت ہوگی۔)[1](

سوال …:                      کیاحیات کا عقیدہ حدیث سے بھی ثابت ہے؟

جواب …:                                             جی ہاں !  حیات کا عقیدہ حدیث سے بھی ثابت ہے۔ چُنانچِہ اللہ عَزَّ وَجَلَّ کے مَحبوب، دانائے غُیُوب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے دو فرامین مبارکہ پیشِ خدمت ہیں :

سوال :   اَلْاَنْبِیَآءُ اَحْیَآءٌ فِیْ قُبُوْرِھِمْ یُصَلُّوْنَ۔ یعنی انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام اپنی اپنی قبروں میں زندہ ہیں اور نَماز پڑھتے ہیں ۔)[2](

2 :   اِنَّ اللّٰهَ حَرَّمَ عَلَى الْاَرْضِ اَنْ تَاْكُلَ اَجْسَادَ الْاَنْبِيَآءِ فَنَبِیُّ اللّٰهِ حَیٌّ يُّرْزَقُ۔ یعنی اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  نے زمین پر حرام ٹھہرا دیا ہے کہ وہ انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام کے جسموں کو کھائے، پس اللہ کا (ہر) نبی زندہ ہے اور رزق دیا جاتا ہے۔)[3](

سوال …:                    کیا انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام نے موت کا ذائقہ چکھا ہے؟

جواب …:                                         جی ہاں !  تصدیقِ وعدۂ الٰہیہ کے لیے ایک آن کو انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام پر موت طاری ہوئی، پھر وہ بدستور زندہ ہوگئے ۔ )[4](چنانچہ اعلیٰ حضرت نے کیا خوب اس کی منظر کشی کی ہے:

انبیا کو بھی اجل آنی ہے                                               مگر ایسی کہ فقط آنی ہے

پھر اسی آن کے بعد ان کی حیات                                مثل سابق وہی جسمانی ہے

سوال …:                    انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام اور شہدائے عظام رَحِمَہُمُ اللّٰہُ السَّلَام کی حیات میں کیا فرق ہے؟

جواب …:                                         انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام اور شہدائے عظام رَحِمَہُمُ اللّٰہُ السَّلَام کی حیات میں فرق یہ ہے کہ اللہ   عَزَّ وَجَلَّ  نے انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام کو جو زندگی عطا فرمائی ہے وہ شہیدوں کی زندگی سے کہیں بڑھ کر اَرفع واعلیٰ ہے۔ )[5]( یہی وجہ ہے کہ شہیدوں کا ترکہ تقسیم کر دیا جاتا ہے اور ان کی بیویاں عدت کے بعد دوسروں سے نکاح کر سکتی ہیں ۔ مگر انبیائے کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کا نہ ترکہ تقسیم ہوتا ہے اور نہ ہی ان کی بیویاں عدت کے بعد دوسروں سے نکاح کرسکتی ہیں ۔  )[6](

سوال …:                    کیا کوئی نبی اب بھی حیاتِ ظاہری کے ساتھ زندہ ہے؟

جواب …:                                         چار انبيائے كرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام حياتِ ظاهري كے ساتھ زنده هيں ۔ ان ميں سے دو یعنی حضرت سیِّدُنا عيسيٰ عَلَیْہِ السَّلَام اور حضرت سیِّدُنا ادريس عَلَیْہِ السَّلَام آسمانوں پر هيں اور دو یعنی حضرت سیِّدُنا خضر عَلَیْہِ السَّلَام اور حضرت سیِّدُنا الياس عَلَیْہِ السَّلَام زمين پر هيں ۔)[7](

٭…٭…٭

عِلْمِ اَنْبیا و رُسُل

سوال …:                    کیا اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کے نبی غیب کی باتیں بھی جانتے ہیں ؟

جواب …:  جی ہاں !  اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  نے اپنے نبیوں کو بہت سی غیب کی باتوں کا علم عطا فرمایا ہے۔جیسا کہ ارشادِ باری تَعَالٰی ہے:  

وَ  مَا  كَانَ  اللّٰهُ  لِیُطْلِعَكُمْ  عَلَى  الْغَیْبِ  وَ  لٰكِنَّ  اللّٰهَ  یَجْتَبِیْ  مِنْ  رُّسُلِهٖ  مَنْ  یَّشَآءُ   ۪- (پ۴، اٰل عمران: ۱۷۹)   ترجمۂ کنز الایمان:   اور اللہ کی شان یہ نہیں کہ اے عام لوگو تمہیں غیب کا علم دے دے ہاں اللہ چُن لیتا ہے اپنے رسولوں سے جسے چاہے۔ اور بالخصوص سرکارِ دو عالم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  کے علم کے متعلق یوں ارشاد فرمایا:  وَعَلَّمَکَ مَا لَمْ تَکُنْ تَعْلَمُ ؕ     (پ۵، النسآء:  ۱۱۳ترجمۂ کنز الایمان:   اور تمہیں سکھادیا جو کچھ تم نہ جانتے تھے۔

سوال …:                    اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کے علمِ غیب اور نبیوں رسولوں کے علمِ غیب میں کیا فرق ہے؟

جواب …:                                         اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کا علم اور اس کا ہر کمال ذاتی ہے، کسی کا دیا ہوا نہیں ۔ جیسا کہ فرمانِ باری تَعَالٰی ہے:  اِنَّمَا الْغَیْبُ لِلّٰهِ  (پ۱۱، یونس:  ۲۰)  ترجمۂ کنز الایمان:   تم فرماؤ غیب تو اللہ کے لیے ہے۔  جبکہ نبیوں اور رسولوں کا علمِ غیب عطائی ہے یعنی انہیں یہ علم اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  نے عطا فرمایا ہے۔

 



[1]    مقامِ رسول،   ص ۴۹۷ ملخصاً

[2]    مسند ابی یعلی،   ۳ / ۲۱۶،   حدیث:۳۴۱۲

[3]    ابن ماجہ،   کتاب الجنائز،   ذکر وفاتہ و دفنہ ، ۲ / ۲۹۱،   حدیث: ۱۶۳۷

[4]    بہارِ شریعت،   عقائد متعلقہ نبوت،   ۱ / ۵۸

[5]    حاشیۃ الصاوی علی تفسیر الجلالین،   پ۳