Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

سوال …:                    کیا انبیائے کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے معجزات کا تذکرہ قرآنِ مجید میں بھی ہے؟

جواب …:                                         جی ہاں !  انبیائے کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے بہت سے معجزات کا ذکر قرآنِ مجید میں بھی ہے:  مثال کے طور پر چند معجزات یہ ہیں :  

1 :       حضرت سیِّدُنا موسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام کے عصا کا اژدہا بن جانا۔ چنانچہ فرمانِ باری تَعَالٰی ہے:  

فَاَلْقٰى عَصَاهُ فَاِذَا هِیَ ثُعْبَانٌ مُّبِیْنٌۚۖ(۱۰۷)  ترجمۂ کنز الایمان:  تو موسٰی نے اپنا عصا ڈال دیا وہ فوراً ایک ظاہر اژدھا ہوگیا۔  (پ۹، الاعراف:  ۱۰۷)

2 …:       حضرت سیِّدُنا عیسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام کا بیماروں کو تندرست اور مردوں کو زندہ کرنا۔چنانچہ فرمانِ باری تَعَالٰی ہے:  

وَ اُبْرِئُ الْاَكْمَهَ وَ الْاَبْرَصَ وَ اُحْیِ الْمَوْتٰى بِاِذْنِ اللّٰهِۚ- (پ۳،اٰل عمران: ۴۹) 

ترجمۂ کنز الایمان:   اور میں شفا دیتا ہوں مادر زاد اندھے اور سپید داغ والے کو اور میں مُردے جلاتا ہوں اللہ کے حکم سے۔

3 …:      اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کے محبوب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا چاند کو دو ٹکڑے کرنا۔ چنانچہ فرمانِ باری تَعَالٰی ہے:

اِقْتَرَبَتِ السَّاعَةُ وَ انْشَقَّ الْقَمَرُ(۱) (پ۲۷، القمر: ۱)   ترجمۂ کنز الایمان:  پاس آئی قیامت اور شق ہوگیا چاند ۔

٭٭٭

تعدادِ اَنْبیا و رُسُل

سوال …:                    نبیوں اور رسولوں کی تعداد کے متعلق ہمارا عقیدہ کیا ہے؟

جواب …:                                         نبیوں اور رسولوں کی کوئی تعداد معین کرنا جائز نہیں کیونکہ اس بارے میں مختلف روایتیں آئی ہیں اور نبیوں کی کسی خاص تعداد پر ایمان لانے میں یہ احتمال ہے کہ کسی نبی کی نبوت کا انکار ہو جائے یا غیر نبی کو نبی مان لیا جائے اور یہ دونوں باتیں کفر ہیں ۔)[1](  اس لیے یہ اعتقاد رکھنا چاہئے کہ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کے ہر نبی پر ہمارا ایمان ہے۔کیونکہ مسلمان کے لیے جس طرح اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  کی ذات و صفات پر ایمان لانا ضروری ہے۔ اسی طرح ہر نبی کی نبوت پر بھی ایمان لانا ضروری ہے۔

٭…٭…٭

عصمتِ اَنْبیا و رُسُل

(نبیوں کا گناہوں اور عیبوں سے پاک ہونا)

سوال …:                    کیا کسی نبی اور رسول سے کوئی گناہ ممکن ہے؟

جواب …:                                         نبی اور رسول سے کوئی گناہ ممکن نہیں کیونکہ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  نے ان حضرات کو گناہوں سے محفوظ رکھنے کا وعدہ فرمایا ہے۔ اس سبب سے ان حضرات کا گناہ میں مبتلا ہونا شرعاً محال (ناممکن) ہے ۔)[2](

سوال …:                    کیا نبیوں اور رسولوں کے علاوہ بھی کوئی گناہوں سے محفوظ ہے؟

جواب …:                                         جی ہاں !  نبیوں اور رسولوں کے علاوہ فرشتے بھی گناہوں سے محفوظ ہوتے ہیں ۔ کسی نبی اور فرشتے کے سوا کوئی معصوم نہیں ۔ )[3](

سوال …:                    بعض لوگ ولیوں اور اماموں کو بھی معصوم سمجھتے ہیں ، کیا یہ درست ہے؟

جواب …:  جی نہیں ایسا سمجھنا درست نہیں بلکہ ولیوں اور اماموں کو نبیوں کی طرح معصوم سمجھنا بددینی و گمراہی ہے۔ )[4](

٭…٭…٭

فضیلتِ اَنْبیا و رُسُل

سوال …:                    کیا انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام فرشتوں سے بھی افضل ہیں ؟

جواب …:                                          جی ہاں !  انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَام تمام مخلوق یہاں تک کہ تمام فرشتوں سے بھی افضل ہیں ۔)[5](

 



[1]    شرح العقائد النسفیۃ،   مبحث اول الانبیاء آدم علیہ السلام ،  ص۳۰۲وبہارِ شریعت،   عقائد متعلقہ نبوت،   ۱ / ۵۲ موضحا

[2]    بہارِ شریعت،   عقائد متعلقہ نبوت،   ۱ / ۳۸ 

[3]    النبراس ،  مبحث الملائکہ علیھم السلام ، ص۲۸۷

[4]    بہارِ شریعت،   عقائد متعلقہ نبوت،   ۱ / ۳۸

[5]    بہارِشریعت،   عقائد متعلقہ نبوت،   ۱ / ۴۷  



Total Pages: 146

Go To