Book Name:Imamay kay Fazail

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِ اللّٰہ  مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہ  الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط                    

المد ینۃ العلمیۃ

              از :  بانیِ دعوتِ اسلامی ، عاشق اعلیٰ حضرت شیخِ طریقت، شامیرِ اہلسنّت حضرت علّامہ مولانا ابوبلال محمد الیاس عطاؔر قادری رضوی ضیائی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ                                                                                                                                                

        اَلْحَمْدُلِلّٰہِ  عَلٰی اِحْسَا نِہٖ وَ بِفَضْلِ رَسُوْلِہٖ صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ تبلیغِ قرآن و سنّت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک ’’دعوتِ اسلامی‘‘ نیکی کی دعوت، اِحیائے سنّت اور اشاعتِ علمِ شریعت کو دنیا بھر میں عام کرنے کا عزمِ مُصمّم رکھتی ہے، اِن تمام اُمور کو بحسنِ خوبی سر انجام دینے کے لئے متعدَّد مجالس کا قیام عمل میں لایا گیا ہے جن میں سے ایک مجلس    ’’المد ینۃ العلمیۃ‘‘ بھی ہے جو  دعوتِ اسلامی کے علماء و مُفتیانِ کرام کَثَّرَ ھُمُ  اللّٰہ  تعالٰی پر مشتمل ہے ، جس نے خالص علمی، تحقیقی اور اشاعتی کام کا بیڑا اٹھایا ہے۔  اس کے مندرجہ ذیل چھ شعبے ہیں :  

        (۱)شعبۂ کتُبِ اعلیٰ حضرت

        (۲)شعبۂ درسی کُتُب  

        (۳)شعبۂ اصلاحی کُتُب

        (۴)شعبۂ تفتیشِ کُتُب

        (۵)شعبۂ تخریج

        (۶)شعبۂ ترا      جِم

        ’’ا لمد ینۃ العلمیۃ‘‘کی اوّلین ترجیح سرکارِ اعلٰی حضرت اِمامِ اَہلسنّت، عظیم البَرَکت، عظیمُ المرتبت، پروانۂ شمعِ رِسالت، مُجَدِّدِ دین و مِلَّت، حامیٔ سنّت ، ماحیٔ بِدعت، عالِمِ شَرِیْعَت، پیرِ طریقت، باعثِ خَیْر و بَرَکت، حضرتِ علاّمہ مولیٰنا الحاج الحافِظ القاری الشّاہ امام اَحمد رَضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن کی گِراں مایہ تصانیف کو عصرِ حاضر کے تقاضوں کے مطابق حتَّی الْوُسعٰ سَہْل اُسلُوب میں پیش کرنا ہے ۔ تمام اسلامی بھائی اور اسلامی بہنیں اِس عِلمی ، تحقیقی اور اشاعتی مدنی کام میں ہر ممکن تعاون فرمائیں اورمجلس کی طرف سے شائع ہونے والی کُتُب کا خود بھی مطالَعہ فرمائیں اور دوسروں کو بھی اِس کی ترغیب دلائیں ۔

        اللہ  عَزَّ وَجَلَّ ’’دعوتِ اسلامی‘‘ کی تمام مجالس بَشُمُول’’المد ینۃ العلمیۃ‘‘ کو دن گیارہویں اور رات بارہویں ترقّی عطا فرمائے اور ہمارے ہر عملِ خیر کو زیورِ اخلاص سے آراستہ فرماکر دونو ں جہاں کی بھلائی کا سبب بنائے۔ ہمیں زیرِ گنبدِ خضرا  شہادت، جنّت البقیع میں مدفن اور جنّت الفردوس میں جگہ نصیب فرمائے ۔                         اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

      رمضان المبارک ۱۴۲۵ھ     

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِ اللّٰہ  مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

’’ عمامہ شریف باندھنا سنّت ہے  ‘‘ کے 22 حُروف کی نسبت سے اس کتاب کو پڑھنے کی ’’22  نیّتیں ‘‘

 فرمانِ مصطفی صَلَّی اللُّہ تَعَالٰی عَلَیہ وَ اٰلہٖ وَسَلَّم :    نِیَّۃُ الْمُؤْمِنِ خَیْرٌ مِّنْ عَمَلِہ  مسلمان کی نیّت اس کے عمل سے بہتر ہے۔ (معجم کبیر ، ۶/ ۱۸۵، حدیث :  ۵۹۴۲)

 دو مَدَنی پھول :

 (۱) بِغیر اچّھی نیّت کے کسی بھی عملِ خیر کا ثواب نہیں ملتا۔  

(۲سسجتنی اچّھی نیّتیں زِیادہ، اُتنا ثواب بھی زِیادہ۔  

        (۱)ہر بارحمد و (۲)صلوٰۃ اور(۳)تعوُّذو(۴)تَسمِیّہ سے آغاز کروں گا۔ (اسی صَفَحَہ پر اُوپر دی ہوئی دو عَرَبی عبارات پڑھ لینے سے چاروں نیّتوں پر عمل ہوجائے گا)۔ (۵)رِضائے الٰہی عَزَّوَجَلَّ کیلئے اس کتاب کا اوّل تا آخِر مطالَعہ کروں گا۔  (۶، ۷) حتَّی الْوَسْعْ اِس کا باوُضُو ، باعمامہ اور (۸) قِبلہ رُو مُطالَعَہ کروں گا (۹) قرآنی آیات اور (۱۰)اَحادیثِ مبارَکہ کی زِیارت کروں گا (۱۱) جہاں جہاں ’’ اللّٰہ ‘‘ کا نام پاک آئے گا وہاں عَزَّوَجَلَّ  اور(۱۲) جہاں جہاں ’’سرکار‘‘کا اِسْمِ مبارَک آئے گا وہاں صَلَّی اللُّہ تَعَالٰی عَلَیہ وَ اٰلہٖ وَسَلَّم پَڑھوں  گا۔  (۱۳)(اپنے ذاتی نسخے پر) عِندَالضَّرورت خاص خاص مُقامات پر انڈر لائن کروں گا۔ (۱۴)(اپنے ذاتی نسخے پر)  ’’یادداشت‘‘ والے صَفَحَہ پر ضَروری نِکات لکھوں گا۔ (۱۵) کتاب مکمل پڑھنے کیلئے روزانہ چند صَفَحات پڑھ کر علمِ دین حاصل کرنے کے ثواب کا حقدار بنوں گا۔ (۱۶)دعوتِ اسلامی کے مدنی قافلوں میں سفر کروں گا۔  (۱۷)مدنی انعامات پر عمل کرتے ہوئے اس کا کارڈ بھی جمع کروایا کروں گا۔ (۱۸) دوسروں کویہ کتابپڑھنے کی ترغیب دلاؤں گا۔  (۱۹، ۲۰) اس حدیثِ پاک ’’تَھَادَوْا تَحَابُّوْا‘‘ ایک دوسرے کو تحفہ دو آپس میں محبت بڑھے گی ۔ ‘‘(مؤطا امام مالک ، ۲/ ۴۰۷، حدیث :  ۱۷۳۱) پر عمل کی نیت سے(ایک یا حسبِ توفیق) یہ کتاب خرید کر دوسروں



Total Pages: 101

Go To