Book Name:Faizan e Sultan Bahoo رحمۃ اللہ تعالی علیہ

وفات و مدفن

آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ نے63 سال اس دارِفانی میں دینِ اسلام کی تعلیمات عام کیں  اورمُغل بادشاہ اورنگ زیب عالمگیر رَحْمَۃُ اللّٰہ ِ تَعَالٰی عَلَیْہ کے عَہدمیں یکم جُمادی الاُخری ۱۱۰۲ ھ بمطابق 2مارچ 1691ءشبِ جمعہ تیسرے پہر داعیٔ اَجَل کو لبَّیک کہتے ہوئے سفرِآخرت اختیارفرمایا ۔ آپ رَحْمَۃُ اللّٰہ ِ تَعَالٰی عَلَیْہ کا پہلا مزار مُبارک دریائے چناب کےمَغْربی کنارے پر واقع قلعہ قہرگان سے کچھ فاصلے پرتھا جس کے  چاروں جانب پُخْتہ دیواریں تھیں ۔

بعدِ وصال  بھی جسم وکَفن سَلامت

تقریباً 77 سال بعد۱۱۷۹ھ میں  دریائے چناب میں طُغْیانی آئی قریب تھا کہ پانی مزار مُبارک تک  پہنچ جاتا، آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ نے خواب میں اپنے سجادہ نشین کو حکم فرمایاکہ مجھے کہیں اور منتقل کردیں ۔اگلے دن مریدوں نے آپ کے جسم کو منتقل کرنے کے لئے زمین کھودنا شروع کی مگر جسم مبارک مل نہ سکا، مُرید  بڑے پریشان ہوئے اگلی رات پھر سجادہ نشین سے فرمایا: کل صبح ایک نقاب پوش بزرگ سبز لباس  میں آئیں گے  اور  قبر کی  نشاندہی  کر دیں گے ۔چنانچہ اگلے دن سبز لباس والے نقاب پوش بزرگ  تشریف لائے اور قبر مُبارک کی نشاندہی کردی ۔ ہزار ہا لوگوں  کی موجودگی میں جب جسم مبارک باہر نکالا گیا  تو سب نے دیکھا کہ آپ کا جسم وکفن مبارک صحیح سلامت ہے ، فضا میں کئی میل دُور تک خُوشبو پھیل گئی ، ریش مبارک سے پانی کے قطرے ٹپک رہے تھےاور یوں محسوس ہوتا تھا کہ جیسے  ابھی سوئے ہیں ۔([1])

اس واقعہ کے تقریباً 158سال بعد ۱۳۳۶ھ بمطابق1918ء  میں ایک بار پھر  دریائے چناب میں شدید سیلاب آیا اورپانی کی لہریں مزار مُبارک کے احاطہ کو چھونے لگیں لہٰذا آپ کے جسم مُبارک کو تیسری جگہ منتقل کرنا پڑاا س وقت بھی آپ کاجسم وکفن مُبارک صحیح سلامت تھا۔

مزار مُبارک کی تکمیل و آرائش

مزار مُبارک کی تکمیل اور تزئین و آرائش کا کام حضرت حاجی محمدامیر سُلطان رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ کےدورمیں سرانجام پایاجب سے اب تک سُلطانُ العارفین حضرت سلطان باہورَحْمَۃُ اللّٰہ ِ تَعَالٰی عَلَیْہ کا مزارمبارک قصبہ دربارِسُلطان باہونزدگڑھ مہاراجہ (تحصیل شورکوٹ جھنگ پاکستان) میں مَرجعِ خَواص وعوام ہے جہاں ہزاروں عقیدت منداپنی  گردنیں جُھکاتےاور مُرادوں سے اپنی خالی جھولیاں بھر کر جاتے ہیں ۔ ([2])

  بعدِ وصال کرامت کا ظُہور

حضرت سُلطان باہو رَحْمَۃُ اللّٰہ ِ تَعَالٰی عَلَیْہ کے مزار مُبارک کی دہلیز پر ایک بیری کا درخت تھا جس سے  زائرین (زیارت کرنے والوں ) کو پریشانی  کا سامنا کرنا پڑتا، مگر بطورِ ادب اسے نہ کاٹا جاتا۔ ایک دن ایک نابینا صاحب مزار مبارک پر حاضر ی کے لئے آئے تو ان  کی پیشانی  درخت سے ٹکرا کر زخمی ہوئی  اور خون بہنے لگا ۔خُلفا ءو مجاوروں نے انہیں تسلی دی اور  علاج کروادیااور   باہمی مشورے سے اگلے دن اس درخت کو کٹوانے کا ارادہ کرلیا تاکہ آنے والوں کوکسی قسم کی  پریشانی نہ ہو۔ حضرت سلطان باہو رَحْمَۃُ اللّٰہ ِ تَعَالٰی عَلَیْہ کے ایک خلیفہ محمدصدّیق رَحْمَۃُ اللّٰہ ِ تَعَالٰی عَلَیْہ بھی اس مشورے  میں شریک تھے جب رات ہوئی توخواب میں  حضرت سلطان باہو رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ کی زیارت سے مشرف ہوئے آپ  فرمارہے تھے : اے محمد صدّیق ! ہمارے بیری  کے درخت کو کیوں کاٹتے ہو؟ وہ خود  یہاں سے دور چلاجائے گا۔صبح دیکھا گیا تو واقعی وہ درخت اپنی جگہ  سے دس پندرہ ہاتھ کے فاصلے پر کھڑا تھا ۔ ([3])

صَلُّوا عَلَی الْحَبیب!                                                صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

ماخذ ومراجع

نمبر شمار     کتاب کا نام                              مطبوعہ

1                                      صحیح مسلم                                                                             دار المغنی  بیروت،۱۴۱۹ھ

2                                       سنن ابی داؤد                                                                               داراحیاء التراث العربی بیروت،۱۴۲۱ھ

3                                       مجمع الزوائد                                                                           دا رالفکربیروت،۱۴۲۰ھ

4                                       الشمائل  المحمدیة                                                     داراحیاء التراث العربی  بیروت

5                                       المواھِب اللدنية                                                                دار الکتب العلمیة بیروت،۱۴۱۶ھ

6                                       مدارج النبوۃ مترجم                                               ضیاء القرآن، مرکز الاولیاء لاہور، ۲۰۰۴ء

7                                       بہجةالاسرار                                                                              دار الکتب العلمیة بیروت،۱۴۲۳ھ

8                                       مناقب سلطانی                                                                           شبیر برادرز  ،مرکز الاولیاء لاہور،۱۴۲۷ھ

9                                       باہو عین یاہو                                                                                   شبیر برادرز،مرکز الاولیاء لاہور۲۰۱۰ء

10                               ابیات سلطان باہو                                                                  زاویہ پبلیشرز،مرکز الاولیاء لاہور

11                              عقل بیدار                                                                                         پروگریسو بکس مرکز الاولیاءلاہور

12                               بیٹے کو نصیحت                                                                                 مکتبۃ المدینہ بابُ المدینہ کراچی۱۴۳۱ھ

 

 



[1]    مناقب سلطانی، ص۱۷۶، ۱۷۷ ملخصاًوغیرہ

[2]    ابیات سلطان باہو، ص۳ وغیرہ

[3]    مناقب سلطانی ، ص ۲۱۹ملخصاً



Total Pages: 8

Go To