Book Name:Ameer e Ahlesunnat Ki Deeni Khidmat

تحریک کی بنیاد امیرِ اہلسنّت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے ذی قعدۃُ الحرام ۱۴۰۱ ؁ھ بمطابق ستمبر ۱۹۸۱ ؁ء میں   عروس البلاد باب المدینہ کراچی پاکستان میں   رکھی اور اس طرح مٹھی بھر لوگوں   کو ساتھ لے کر چلنے والے امیرِ اہلسنّت،  بانی دعوتِ اسلامی حضرت علامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطّار قادری دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ آج کروڑوں   مسلمانوں   کے دلوں   میں   بستے ہیں   اور اس عظیم تحریک کا مدنی پیغام تادمِ تحریر 176 ممالک تک پہنچ چکا ہے۔

شیخ طریقت،  امیر اَہلسنّت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے دین متین کی جو خدمت کی ہے وہ اپنی مثال آپ ہے،  آپ نے لوگوں   کو دعوتِ اسلامی کا ایک ایسا مشکبار مدنی ماحول عطا کیا ہے،  جس کی خوشبو سے پورا معاشرہ مہک رہا ہے اور جس کی بہاریں   ہر طرف دکھائی دے رہی ہیں  ،  اسلامی بھائیوں   کو دیکھیں   تو سبز سبز عمامے اور سفید مدنی لباس کے جلوے آنکھوں   کو ٹھنڈا کرتے نظر آتے ہیں   اور اسلامی بہنیں   مدنی برقعوں   میں   سرتاپا حیا کا پیکر بن چکی ہیں  ۔ آپ نے سنتوں   بھرے مہکے مہکے مدنی ماحول میں   آنے والوں   کی تربیت کا ایک ایسا جامع اور مضبوط نظام ترتیب دیا ہے کہ جو آتا ہے،  بس یہیں   کا ہو کر رہ جاتا ہے۔ شیخ طریقت،  امیر اَہلسنّت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے ہر خاص و عام کو دل کے مدنی گلدستے میں   سجانے کے لئے کئی مدنی پھول عطا فرمائے ہیں   جن میں   دو مدنی پھول یہ ہیں  :

پہلا مدنی پھول

شیطان ہمارا کھلا دشمن ہے،  لہٰذا اس کے خلاف ہر محاذ پر بھرپور جنگ کا اعلان کیا جائے۔ پس شیطان اور برائیوں   کے خلاف جنگ اب دعوتِ اسلامی کا نعرہ بن چکا ہے:

شیطان کے خلاف جنگ                               جاری رہے گی

غیبت کے خلاف جنگ                                جاری رہے گی

چغلی کے خلاف جنگ                                  جاری رہے گی

سود کے خلاف جنگ                                   جاری رہے گی

بے حیائی کے خلاف جنگ                            جاری رہے گی

اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ  وَجَلَّ                 اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ  وَجَلَّ                 اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ  وَجَلَّ  

دوسرا مدنی پھول

نجات تمام جہاں   کے پالنے والے خدائے احکم الحاکمین جَلَّ جَلَالُہ کی اطاعت اور مومنین پر رحم و کرم فرمانے والے نبیٔ کریم،  رءوف رحیم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی سنتوں   کے اتباع میں   ہے اور اس طرح اللہ  عَزَّ وَجَلَّ کے پیارے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی پیاری پیاری سنتوں   پر عمل کی ترغیب کے لئے یہ نعرہ بلند کیا:

سر پہ عمامہ سجا رہے گا                                     اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ  وَجَلَّ

سر پہ زلفیں   سجی رہیں   گی                         اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ  وَجَلَّ

رخ پہ داڑھی سجی رہے گی                              اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ  وَجَلَّ

حیا سے نظریں   جھکی رہیں   گی                      اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ  وَجَلَّ

قفلِ مدینہ لگا رہے گا                                     اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ  وَجَلَّ

 ایک چپ سو سکھ

پہلے تولو                پھر بولو

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!          صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

تحریک کی مضبوطی کا راز

 



Total Pages: 157

Go To