Book Name:Ameer e Ahlesunnat Ki Deeni Khidmat

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!          صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

٭٭٭٭

علمی خدمات

اس حصے میں   آپ پڑھیں   گے:

  (1,2 مدرسۃُ المدینہ للبنین و للبنات

  (3,4 مدرسۃُ الْمدینہ   (بالِغان و بالغات) 

  (5  مدرسۃُ المد ینہ آن لائن                  (6 دارُ المدینہ

  (7,8 جامعاتُ المدینہ للبنین و للبنات

  (9 دارُ الافتاء اہلِ سُنَّت                    (10 دارُ الافتاء ہاتھوں   ہاتھ

  (11 تَخَصُّصْ فِی الْفِقْہ                                                             (12 تخصص فی الفُنُون

  (13 مجلس توقیت                                                                         (14 مجلس تحقیقاتِ شرعیہ

  (15 مختلف کورسز

     اسلامی بھائیوں   کے لیے کورسز

      اسلامی بہنوں   کے لئے کورسز

علمی خدمات

علم کی برکت:

حضرت سیدنا عبد اللہ  ابن عباس رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا   فرماتے ہیں   کہ حضرت سیدنا سلیمان عَلٰی نَبِیِّنَا وَ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو اختیار دیا گیا کہ وہ علم،  مال اور سلطنت میں   سے جو چاہیں   پسند فرما لیں   تو انہوں   نے علم کو پسند فرمایا۔ پس علم اختیار کرنے کی برکت سے انہیں   مال و دولت اور حکومت و سلطنت کی نعمتیں   بھی عطا فرما دی گئیں  ۔   ([1] 

معلوم ہوا کہ علم،  مال و دولت اور حکومت و سلطنت سے افضل ہے کیونکہ مال و دولت اور حکومت و سلطنت کی بقا علم سے وابستہ ہے۔ چنانچہ،  

علم اور مال میں   فرق:

امیر المومنین حضرت سیِّدُنا علی المرتضیٰ کَرَّمَ اللّٰہُ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم سے منقول ہے کہ علم مال سے سات صورتوں   میں   افضل ہے:

٭…  علم انبیائے کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی میراث ہے اور مال فرعونوں   کی۔

٭…  علم خرچ کرنے سے کم نہیں   ہوتا مگر مال خرچ کرنے سے کم ہو جاتا ہے۔

٭…  مال حفاظت کا محتاج ہوتا ہے جبکہ علم علم والے کی حفاظت کرتا ہے۔

٭…  بندہ مرتا ہے تو اس کا مال دنیا ہی میں   رہتا ہے جبکہ علم قبر میں   ساتھ جاتا ہے۔

٭…  مال مومن اور کافر دونوں   کو حاصل ہوتا ہے مگر علمِ دین صرف مومن کو حاصل ہوتا ہے۔

 



[1]    تاريخ مدينة دمشق،  ج۲۲،  ۲۷۵



Total Pages: 157

Go To