Book Name:Ameer e Ahlesunnat Ki Deeni Khidmat

دولت شہرت چاہو نہ تم مدنی کا غم مانگو بس تم

تجھ کو ایسا کریں   معطر حضرت عطار ہیں

٭٭٭٭

مَنْقَبَتِ عطَّار

عطّاری ہوں   عطّاری

تیرا کرم ہے ذاتِ باری عطاری ہوں   عطاری

نسبت کیا ہے پیاری پیاری عطاری ہوں   عطاری

آقا دے دو بے قراری عطاری ہوں   عطاری

کرتا رہوں   میں   اشکباری عطاری ہوں   عطاری

آقا سن لو عرض ہماری عطاری ہوں   عطاری

پوری کروں   میں   ذمہ داریعطاری ہوں   عطاری

آقا تیرے صدقے واری عطاری ہوں   عطاری

نازاں   ہوں   نسبت پہ ہماری عطاری ہوں   عطاری

میں   ہوں   ضیائی میں   ہوں  رضوی سگ ہوں   غوثِ پاک کا

قادری ہوں   قادری عطاری ہوں   عطاری

درس و بیاں   سے کیوں   گھبراؤں   کیسا ڈر کیا خوف ہو

کیوں   ہو کسی کا رعب طاری عطاری ہوں   عطاری

دیتا رہوں   نیکی کی دعوت چاہتا ہوں   استقامت

گزرے یوں   ہی عمر ساری عطاری ہوں   عطاری

پیارے آقا بخشوانا نارِ دوزخ سے بچانا

عصیاں   کا ہے بوجھ بھاری عطاری ہوں   عطاری

میں    بھی  دیکھوں   مکہ مدینہ مرشد تیری آنکھوں   سے

کب آئے گی میری باری عطاری ہوں   عطاری

روضۂ اقدس منبر نور میں   بھی دیکھوں   کاش! حضور

پیاری دکھا جنت کی کیاری عطاری ہوں   عطاری

میٹھے مرشد میٹھا حرم ہو مولا اب تو ایسا کرم ہو

حسرت نکلے پھر تو ہماری عطاری ہوں   عطاری

میرے باپا میرے داتا بھر دو میرا بھی تم کاسہ

فیض تیرا ہے جگ پہ جاری عطاری ہوں   عطاری

دیدو مرشد قفل مدینہ باپا عطا ہو فکر مدینہ

میں   ہوں   منگتا میں   ہوں   بھکاری عطاری ہوں   عطاری

 



Total Pages: 157

Go To