Book Name:Fatawa Razawiyya jild 29

 

 

 

 

 

حقوق العباد

 

مسئلہ ۱۹:                 از شہر بریلی محلہ لودی ٹولہ مسئولہ نظیر احمد شہر کہنہ       شنبہ ۲۳ شعبان ۱۳۳۴ھ

کوئی شخص اگر کسی کی عورت کے ساتھ بدفعلی کرے اور اس عو رت کے خاوند سے معافی چاہے تو کیا معاف ہوجائے گا یا تو بہ بھی اس پر لازم ہوگی ؟ اگر فقط توبہ کرنے سے گناہ معاف ہوجائے تو اس وقت میری عرض یہ ہے کہ حق العباد تو معاف نہیں ہوتا تاوقتیکہ صاحبِ حق سے معافی نہ لے کیا یہ حق العباد نہیں ہے؟ مفصّلًا تحریر فرمائیں۔بینوا توجروا(بیان فرمائیے اجردیئے جاؤ گے۔ت)

الجواب:

عورت جس کا شوہر ہو یا باپ بھائی وغیر ہم اولیاء جن کو اس امر سے عار پہنچے فرض کیجئے وہ دس شخص ہیں تو اس کے ساتھ معاذ الله بدکاری اگر بے اس کی رضا کے ہے تو بارہ حقوق میں گرفتاری ہے ایك حق مولٰی عزوجل کا کہ اس کی نافرمانی کی دوسرا اس عورت کا کہ اس کی عصمت خراب کی تیسرا اس کے شوہر کا یوں ہی باقی دس حقداروں کا جب تك یہ سب معاف نہ کریں معاف نہ ہوگا۔بحالیکہ ان کو اطلاع پہنچ جائے اور اگر برضائے زن ہے تو عورت اور یہ دونوں گیارہ سخت حقوق میں گرفتار ہوئے ایك حق مولٰی عزوجل کا دس ان دسوں کے او راس صورت میں عورت کا حق نہ ہوگا کہ وہ راضی ہے اور عورت زنا کے باعث نکاح سے خارج نہیں ہوتی مگر اس حالت میں کہ شوہر کے باپ یا بیٹے سے یہ امر واقع ہو تو


 

 



Total Pages: 750

Go To