Book Name:Fatawa Razawiyya jild 27

 

 

 

 

 

مناظرہ و رَدِّ بدمذہباں

 

مسئلہ ۳۳:                              از فقیر محمد مہدی حسن قادری مبارکی                           ۱۹ رمضان ۳۶ ۱۳ھ

اس طرف دیوبندیوں کے امام در باطن بلکہ بعض مقام پر کھلے بند مولوی محمد علی کانپوری سابق ناظم ہیں جو ظاہرًا صوفی کہلاتے ہیں ایك شخص صاحبِ دل پیر طریقت کا مرید تھا دیوبندیوں یعنی ناظم صاحب کی ذریات نے ان کے پیر کو فاتحہ قیام کی وجہ سے بدعتی بنا کر دوبارہ بیعت مولوی محمد علی سے کرادیا مگر جب آپ حضرات کے نام لیواؤں نے اس مرید کو سمجھایا کہ دوبارہ مرید ہونا پیر طریقت سے پھر جانا گناہ ہے اس پر اس نے اول پیر کے پاس جا کر توبہ کی تو دیوبندیوں اور ناظم صاحب کی ذریات نے یہ فساد مچایا کہ اب وہ مرید مسلمان نہ رہا،کیونکہ محمد علی کے ایسے شخص سے مرید ہو کر پھر پیر اول کے پاس چلا گیا،تو درحقیقت کیا ہے؟ مکرریہ کہ مولوی محمد علی سابق ناظم ندوہ کس عقیدہ کے بزرگ ہیں؟ حضور جواب جلد مرحمت فرمائیں والسلام۔

الجواب :

بسم اﷲ الرحمن الرحیم ط ۔نحمدہ و نصلی علٰی رسول الکریم ط

پیر طریقیت جامع شرائط صحت بیعت سے بلاوجہ شرعی انحراف ارتداد طریقیت ہے اور شرعًا معصیت کہ بلاوجہ ایذاء و اختقار مسلم ہے،اور وہ دونوں حرام۔اﷲ عزوجل فرماتا ہے:


 

 



Total Pages: 682

Go To