Book Name:Fatawa Razawiyya jild 19

باطل الا بین الدائن ومدیونہ،فی الدارالمختار بطل الصلح ان اخرج احد الورثۃ وفی الترکۃ دیون بشرط ان تکون الدین لبقیتہم لان تملیك الدین من غیر من علیہ الدین باطل [1] اھ اقول:ولا یقتصر الفساد علی التصریح بھٰذا الشرط کما یوھمہ ظاھر تقیید التنویر بل ھو ومایؤدی مؤداہ سواء فان المدار علی وقوع تملیك الدیون من غیر المدیون وھو حاصل فیما لوصالح بشیئ عن کل مابقی من الترکۃ کما قررنا ویرشدك الیہ ما فی ردالمحتار لوظہر فیہا دین ان کان الصلح وقع علی غیر الدین لایفسد وان وقع علی جمیع الترکۃ یفسد کما لو کان الدین ظاھرا وقت الصلح [2] اھ ملخصا،فقد جعل الصلح علی جمیع الترکۃ کالصلح بتصریح الشرط المذکور وبالجملۃ فالفساد لایتوقف علی التنصیص بادخال الدین فی الصلح بل الجواز متوقف علی الافصاح باخراجہ و لہذا قال البزازی کما فی الشامی ان کان مخرجا من الصلح لایفسد و الا یفسد [3] اھ علق الصحۃ علی

باطل ہے،درمختارمیں ہے جب ترکہ میں قرض شامل ہوں تو کسی ایك وارث کو بقیہ ترکہ سے لاتعلق کرکے باقی وارثوں کے لئے کرنے کی،صلح باطل ہے کیونکہ مقروض کے غیر کو قرض کا مالك بنانا باطل ہے اھ،اقول:(میں کہتاہوں کہ) فساد کا انحصار اس تصریح کردہ شرط پر نہیں جیسا کہ تنویر الابصار کے قید کے بیان پر ظاہرا وہم ہوتاہے بلکہ یہ اور جو اس کا ہم معنی ہو متساوی الحکم ہیں کیونکہ فساد کا دار ومدار غیر مقروض کو قرض کا مالك بنانا ہے اور وہ باقی وارثوں کو ترکہ کی کسی شئی پر صلح میں حاصل ہے جیساکہ ہم نے تقریر کی ہے اور اس میں ردالمحتار کا بیان تیری رہنمائی کرے گا کہ اگر ترکہ میں دین معلوم ہے اور صلح دین کے غیر پر ہوئی تو فاسد نہ ہوگی،اور اگر تمام ترکہ پر صلح ہوئی تو فاسد ہوگی جیسا کہ صلح کے وقت دین ظاہر ہونے پر وہ فاسد ہوتی ہے اھ ملخصا۔تو ردالمحتار نے جمیع ترکہ پر صلح کر شرط مذکور پر صریحاصلح جیسا قرار دیا خلاصہ یہ ہے کہ صراحتا قرض کو صلح میں شامل کرنے پر فساد موقوف نہیں بلکہ صلح کا جواز صراحتا قرض کو صلح سے خارج کرنے پر موقوف ہے جیسا کہ فتاوٰی شامی میں البزازی کا قول ہے کہ قرض کو صلح سے خارج کیا تو صلح فاسد نہ ہوگی ورنہ فاسد ہوگی اھ،انہوں نے جواز کو صراحتًا

 


 

 



[1] درمختار کتاب الصلح فصل فی التخارج مطبع مجتبائی دہلی ۲ /۱۴۵

[2] ردالمحتار کتاب الصلح داراحیاء التراث العربی بیروت ۴ /۴۸۳

[3] ردالمحتار کتاب الصلح داراحیاء التراث العربی بیروت ۴ /۴۸۳



Total Pages: 692

Go To