Book Name:Fatawa Razawiyya jild 17

من اکل درھما من ربٰو فھو مثل ثلث و ثلثین زنیۃ، ومن نبت لحمہ من السحت فالنار اولٰی بہ [1] رواہ الطبرانی فی الاوسط والصغیر وصدرہ ابن عساکر عن ابن عباس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُما ۔

ایك درہم سود کا کھانا تینتیس زنا کے برابر ہے جس کا گوشت حرام سے بڑھے تو نارجہنم اس کی زیادہ مستحق ہے(اس کو طبرانی نے معجم اوسط اور صغیر میں اور ابن عساکر نے ابن عباس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُما سے روایت کیا۔(ت)

حدیث(۲و۳)کہ فرماتے ہیں صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ :

لدرھم یصیبہ الرجل من الربا اعظم عنداللہ من ثلثۃ و ثلثین زنیۃ یزینھا فی الاسلام[2]۔رواہ الطبرانی

بیشك ایك درم کہ آدمی سود سے پائے اللہ عزوجل کے نزدیك سخت تر ہے تینتیس زنا سےکہ آدمی اسلام میں کرے۔ (اس کو طبرانی نے

 

عــــــہ:جواب یہاں تك دستیاب ہوا۔

 

فی الکبیر عن عبداللہ بن مسعود ایضا عن عبد اللہبن سلام رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُما ۔

معجم کبیر میں عبداللہبن مسعود سے نیز عبداللہ بن سلام رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُما سے روایت کیا۔ت)

حدیث(۴)کہ فرماتے ہیں صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ :

درھم ربا یأکلہ الرجل وھو یعلم اشھد عنداللہ من ستۃ و ثلثین زنیۃ [3]۔رواہ احمد بسند صحیح و الطبرانی فی الکبیر عن عبد اللہ بن حنظلۃ غسیل الملٰئکۃ۔

سود کاا یك درم کہ آدمی دانستہ کھائے اللہ تعالٰی کے نزدیك چھتیس زنا سے سخت تر ہےت(اس کو امام احمد نے سند صحیح کے ساتھ اور طبرانی نے معجم کبیر میں عبداللہ بن حنظلہ غسیل ملائکہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے روایت کیا۔ت)

حدیث(۵)کہ فرماتے ہیں صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ :

ان الدرھم یصیبہ الرجل من الربا اعظم عنداللہ فی الخطیئۃ من ست وثلثین زنیۃ یزنیھا الرجل [4]۔ رواہ ابن ابی الدنیا فی ذم الغیبۃ والبیھقی عن انس رضی اللہ تعالٰی عنہ۔

ایك درم کہ آدمی سود سے پائے اللہ تعالٰی کے نزدیك مرد کے چھتیس بار زنا کرنے سے گناہ میں زیادہ ہے۔(اس کو ابن ابی الدنیا نے غیبت کی مذمت میں اور بیہقی نے انس بن مالك رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے روایت کیا۔ت)

حدیث(۶)کہ فرماتے ہیں صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ :

لدرھم ربا اشد جرما عنداللہ من سبع وثلثین زنیۃ [5]۔رواہ الحاکم فی الکنی عن ام المؤمنین الصدیقۃ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُما ۔

بیشك سود کا ایك درہم اللہ عزوجل کے یہاں سینتیس زنا سے بڑھ کر جرم ہے۔(اس کو حاکم نے کنیتوں کے باب میں ام المؤمنین سیدہ عائشہ صدیقہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُما سے روایت کیا۔ت)

حدیث(۷)کہ فرماتے ہیں صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ :

الربا سبعون حوبا ایسرھا کالذی ینکح

سود ستر گناہ ہے جن میں سب سے آسان تر اس شخص

 

امہ [6]،و فی روایۃ سبعون بابا ادنا ھا کالذی یقع علٰی امہ[7]،رواہ ابن ماجۃ وابن ابی الدنیا فی ذم الغیبۃ وابن جریر ورواہ البیہقی بسند لاباس بہ باللفظ الثانی کلھم عن ابی ھریرۃ رضی اللہ تعالٰی عنہ۔ کی طرح ہے جو اپنی ماں سے نکاح کرے۔(اور ایك روایت میں ہے کہ سود کے ستر دروازے ہیں جن میں ادنٰی یہ ہے کہ وہ اپنی ماں پرپڑے۔ت)(اس کو ابن ماجہ اور ابن ابی الدنیا نے ذم الغیبۃ میں اور ابن جریر نے اور بیہقی نے اس کو ایسی سند کے ساتھ روایت کیا جس میں کوئی حرج نہیں ساتھ لفظ ثانی کے تمام نے حضرت ابوہریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے روایت کیا۔(ت)

حدیث(۸)کہ فرماتے ہیں صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ :

 



[1]                             المعجم الاوسط للطبرانی حدیث ۲۹۶۸ مکتبۃ المعارف ریاض ۳ /۵۴۱

[2]              الدرالمنثور بحوالہ طبرانی تحت آیۃ ۲/ ۲۷۹ منشورات قم ایران ۱ /۳۶۷،الترغیب والترہیب عن عبداﷲ بن سلام حدیث ۱۲ مصطفی البابی مصر ۳ /۶،مجمع الزوائد باب ماجاء فی الربا دارالکتاب بیروت ۴/ ۱۱۷

[3]      المعجم الاوسط حدیث ۲۷۰۳ مکتبۃ المعارف ریاض ۳ /۳۳۰،مسند احمد بن حنبل حدیث عبداﷲ بن حنظلہ دارالفکر بیروت ۵/ ۲۲۵

[4]       الترغیب والترھیب بحوالہ ذم الغیبۃ،والبیہقی باب الترہیب من الربا مصطفی البابی مصر ۳ /۷

[5]        کنز العمال بحوالہ الحاکم فی الکنی حدیث ۹۷۸۰ موسسۃ الرسالہ بیروت ۴/ ۱۰۹

[6] سنن ابن ماجہ باب التغلیظ فی الربا ایچ ایم سعید کمپنی کراچی ص۱۶۵،شعب الایمان حدیث ۵۵۱۹ دارالکتب العلمیۃ بیروت ۴/ ۳۹۴

[7] شعب الایمان حدیث ۵۵۲۰ دارالکتب العلمیۃ بیروت ۴/ ۳۹۴



Total Pages: 247

Go To