Book Name:Fatawa Razawiyya jild 17

وھو رباانتھی شامی[1]،قال فی الکفایۃ الربٰو فی الشرع عبارۃ عن فضل مال لایقابلہ عوض فی معاوضۃ مال بمال[2] انتھی۔

وہ سود ہے انتہی(شامی)،کفایہ میں کہا سودشرع میں اس مالی زیادتی کو کہتے ہیں جس کے مقابل کوئی عوض نہ ہو جبکہ یہ مالی معاوضات میں ہو انتہی(ت)

اور اس صورت میں سوددینے کا مواخذہ توظاہرہے کیونکہ(سالعہ ؎۱/)جومنجانب زیدمنوسنگھ کو پہنچیں گے یہ رقم سود ہے جو زید نے اپنے ذمہ دین تسلیم کرکے بدری پرشاد پرحوالہ کئے،غایت یہ ہے کہ زید نے خود نہیں دئیے دلوائے اور چونکہ برتقدیر صرف دوہزار کی اترائی کے موافق شرط مذکور بقدردوہزار کے سودبھی بدری پرشاد اپنے پاس سے ادا کرے گا تو اس صورت میں وہی وجہ عدم جواز کی ہے جو پہلی صورت میں تھی لہٰذا یہ اور وہ دونوں ناجائزہیں،ھذہ صورۃ الجواب واﷲ تعالٰی اعلم بالصواب۔

المجیب فقیہ الدین عفاعنہ

اصاب من اجاب                                                                                                                             ذٰلك کذٰلك                                                                                               ذلك کذالک

محمد معزاﷲ مدرس مدرسہ عالیہ رامپور        محمد منورعلی(مہر)                        محمدعنایت اﷲ عفی عنہ

الجواب صحیح والرای نجیح واﷲ تعالٰی اعلم                                                                                                 الجواب الجواب واﷲ سبحانہ اعلم بالصواب

محمدلطف اﷲ مہر                                                                                         ابوالافضال محمدفضل حق

بیشك صورت مذکورہ میں دونوں صورتیں ناجائزہیں فقط

ہدایت اﷲ خاں ولدحافظ عنایت اﷲ خاں

استفتاء:برضمیر معدلت پیرائے ارباب شریعت غرامخفی مبادکہ ایك سوال کے دوجواب متضاد موصول ہوئے یعنی حضرات دارالافتاء اہل سنت وجماعت بریلی نے جوازصورت مسئولہ کاحکم دے کر بنظر عمل بالخیر ہونے کے اس امر کو واجب العمل فرمایا اور حضرات علمائے رامپور نے اس امرواجب العمل کو ناجائز وحرام تحریر فرمایاہے زیادہ مصیبت یہ ہے کہ جس ضرورت کے واسطے استفتاء کیاگیاتھا اس کا کچھ چارہ کارنہیں بتلایا حالانکہ بفحوائے الدین یسرپیرو ملت اسلام کے واسطے آسانی کا دروازہ کھول دیا گیاہے اب نہایت ضرورہوا کہ منجملہ ہردوجوابات کے ایك جواب غلط ہوکر اس کی غلطیاں براہین قاطعہ


 

 



[1] ردالمحتار فصل فی القرض داراحیاء التراث العربی بیروت ۴/ ۱۷۴

[2] الکفایۃ مع فتح القدیر باب الربائ مکتبہ نوریہ رضویہ سکھر ۶/ ۱۴۷



Total Pages: 715

Go To