We have moved all non-book items like Speeches, Madani Pearls, Pamphlets, Catalogs etc. in "Pamphlet Library"

Book Name:Fatawa Razawiyya jild 17

 

 

 

 

                                                                                                                                                                                                                                                                                                            

باب الاستصناع

(بیع استصناع کا بیان)

 

مسئلہ ۲۴۴:                            مسئولہ حافظ یعقوب خاں صاحب                                                ۱۶ ربیع الآخر ۱۳۱۲ھ

کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ بڑھئی نے اقرار کیا کہ فلاں قسم کی کُرسیاں ایك درجن ایك ماہ کے اندربقیمت مبلغ  ؎ کودوں گا اور جب تك تمھاری کُرسیاں تیار نہ کروں اور کسی کا یااپنا مال نہ بناؤں گا اگر وعدہ خلافی کروں تو کُرسیاں مذکورہ بقیمت(للعہ عہ/)کو دوں گا،پس بڑھئی نے وعدہ خلافی کی یعنی اور کسی کامال بنایا اور کُرسیاں بھی ایك ماہ کے بعد دیں پس اس صورت میں حسب اقرار(للعہ عہ/)کو درجن لینا درست ہے یانہیں؟

الجواب:

صورت مستفسرہ میں وہ کرسیاں اس عقد کی بنا پر نہ(للعہ عہ /)درجن کو لینا جائز نہ   ؎کو بلکہ اس عقد کا فسخ کرنا واجب ہے کہ یہ عقد فاسد ہوا اور عقد فاسد گناہ ہے اور گناہ کا ازالہ فرض،ہاں اگر چاہیں تو عقد کو فسخ کرکے اب یہ کُرسیاں بعقد جدید باہمی رضامندی سے جتنے کو ٹھہر جائیں خریدلیں،وجہ یہ ہے کہ کسی سے کوئی چیز اس طرح بنوانا کہ وہ اپنے پاس سے اتنی قیمت کو بنادے یہ صورت استصناع کہلاتی ہے کہ اگر اس چیز کے یوں بنوانے کا عرف جاری ہے اوراس کی قسم وصفت وحال وپیمانہ وقیمت وغیرہا کی ایسی صاف تصریح ہوگئی ہے کہ کوئی جہالت آئندہ منازعت کے قابل نہ رہے اوراس میں کوئی میعاد


 

 



Total Pages: 715

Go To