We have moved all non-book items like Speeches, Madani Pearls, Pamphlets, Catalogs etc. in "Pamphlet Library"

Book Name:Fatawa Razawiyya jild 17

 

 

 

 

رسالہ
کِفْلُ الفقیہِ الفاھِم فی احکامِ قِرطاسِ الدِّراھمِ
۱۳۲۴ھ
(کاغذی نوٹ کے احکام کے بارے میں سمجھدار فقیہ کا حصہ)

 

 

 

مسئلہ ۲۱۷:

ما قولکم دام طولکم فی ھذا القرطاس المسکوك المسمی بالنوط والسؤال عنہ فی مواضع الاول ھل ھو مال ام سند من قبیل الصک،الثانی ھل تجب فیہ الزکٰوۃ اذا بلغ نصابا فاضلا وحال علیہ الحول ام لا، الثالث ھل یصح مھرا،الرابع ھل یجب القطع بسرقتہ من حرز،الخامس ھل یضمن بالاتلاف بمثلہ او بالدراہم،السادس ھل یجوز بیعہ بدراہم او دنانیر او فلوس،السابع اذا استبدل

آپ کا کیا ارشاد ہے آپ کا فضل ہمیشہ رہے اس کا غذ کے باب میں جس پر سکہ ہوتا ہے اور اسے نوٹ کہتے ہیں،اور اس میں متعدد باتیں دریافت کرنی ہیں،۱اول کیا وہ مال ہے یا دستاویز کی طرح کوئی سند،۲دوم جب وہ بقدر نصاب ہوا اور اس پرسال گزرجائے تو اس پر زکوٰہ واجب ہوگی یانہیں،۳سوم کیا اسے مہر مقرر سکتے ہیں،۴چہارم اگر کوئی اسے محفوظ جگہ سے چرائے تو اس کا ہاتھ کاٹنا واجب ہوگا یانہیں،۵پنجم اگر اسے کوئی تلف کردے تو عوض میں اسے نوٹ ہی دینا ٹھہرے گا یا روپے، ۶ششم کیا روپوں یا اشرفیوں یا پیسوں کے عوض اس کی بیع جائز ہے،۷ہفتم اگر مثلًا کسی کپڑے سے

 


 

 



Total Pages: 715

Go To