Book Name:Fatawa Razawiyya jild 15

۴۲۔عبدالرحمن بن غنم                                           ۴۳۔عدی بن ربیعہ
۴۴۔عرباض بن ساریہ                             ۴۵۔عصمہ بن مالک
۴۶۔عقبہ بن عامر                                    ۴۷۔عقیل بن ابی طالب
۴۸۔امیر المؤمنین علی                               ۴۹۔امیر المؤمنین عمر
۵۰۔عوف بن مالك اشجعی                          ۵۱۔ام المؤمنین صدیقہ
۵۲۔ام کرز                                               ۵۳۔مالك بن حویرث
۵۴۔مالك بن سنان والد ابی سعید خدری     ۵۵۔محمد بن عدی بن ربیعہ
۵۶۔معاذ بن جبل                                     ۵۷۔امیر معاویہ
۵۸۔مغیرہ بن شعبہ                                   ۵۹۔ابن ام مکتوم
۶۰۔ابو منظور                                            ۶۱۔ابو موسٰی اشعری
۶۲۔ابوہریرہ
اور
نو صحابی تذییلات میں:
۶۳۔حاطب بن ابی بلتعہ                             ۶۴۔عبداﷲ ابن ابی اوفٰی
۶۵۔عبداﷲ بن زبیر                                ۶۶۔عبداﷲ بن سلام
۶۷۔عبداﷲبن عمرو بن عاص                   ۶۸۔عبادہ بن صامت
۶۹۔عبید بن عمرو لیثی                                ۷۰۔نعیم بن مسعود
۷۱۔ہشام بن عاص رضی اﷲ تعالٰی عنہم اجمعین۔

ختم نبوت پر دیوبندی عقیدہ:

ان احادیث کثیرہ وافرہ شہیرہ متواترہ میں صرف گیارہ حدیثیں وہ ہیں جن میں فقط نبوت کا انہیں الفاظ موجودہ قرآن عظیم سے ذکر ہے جن میں آج کل کے بعض ضُلّال قاسمانِ کفر و ضلال نے تحریف معنوی کی اور معاذ اﷲ حضور کے بعد اور نبوتوں کی نیو جمانے کو خاتمیت بمعنی نبوت بالذّات لی یعنی معنی خاتم النبیین صرف اس قدر ہیں کہ حضور اقدس صلی اﷲ تعالی علیہ وسلم نبی بالذّات ہیں اور انبیاء نبی بالعرض،باقی زمانے میں تمام انبیاء کے بعد ہونا حضور کے بعد اور کسی کو نبوت ملنی ممتنع ہونا یہ معنی ختم نبوت نہیں اور صاف لکھ دیا کہ حضور کے بعد بھی کسی کو نبوت مل جائے تو ختم نبوت کے اصلًا منافی نہیں اس کے رسالہ ضلالت مقالہ کا خلاصہ


 

 



Total Pages: 742

Go To