Book Name:Fatawa Razawiyya jild 13

 

 

 

 

بابُ النفقۃ

(نفقہ کا بیان)

 

مسئلہ١٥٣:          ٩ ربیع الاول شریف١٣٠٩ھ

کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ زید نے اپنی عورت کو تین طلاقیں دیں اور عدت گزرچکی اب عورت کانفقہ زید پر واجب ہے یانہیں؟بینواتوجروا(بیان کیجئے اجر پائیے۔ت)

الجواب:

اگر فی الواقع عدت گزرچکی(یعنی حاملہ تھی تو وضع حمل ہوگیا ورنہ طلاق کے بعد تین حیض شروع ہوکر ختم ہولئے)تواب نفقہ واجب نہیں کہ مطلقہ کا نفقہ عدت تك ہے بعد عدت کوئی علاقہ باقی نہیں جس کے سبب نفقہ لازم ہو،فی ردالمحتار النفقۃ تابعۃ للعدّۃ[1](ردالمحتار میں ہے:عورت کا نفقہ عدت کے تابع ہے۔ت)واﷲ تعالٰی اعلم۔

مسئلہ١٥٤:           از ٹونك محلہ قافلہ مرسلہ مولوی سید ولی اﷲ صاحب                    ٢١شوال١٣٠٩ھ

بعدعالی جناب فیض مآب حضرت مولٰنا وبالفضل اولانا قبلہ وکعبہ ام مولٰنا احمد رضاخاں صاحب ادام اﷲ فیضہ،پس از تسلیم نیاز معروض می دارد۔نقل اقرار نامہ بذریعہ ہذا خدمت شریف میں ابلاغ ہے بروئے اس کے


 

 



[1] ردالمحتار باب النفقۃ داراحیاء التراث العربی بیروت ٢/٦٦٩



Total Pages: 688

Go To