Book Name:Fatawa Razawiyya jild 11

 

 

 

 

 

 

تجویز الرد عن تزویج الابعد ١٣١٥ھ

(ولی اقرب کی غیبت میں ولی ابعد کے نکاح پڑھانے کا حکم)

 

بسم الله الرحمن الرحیم

 

مسئلہ ٣٣٨ تا ٣٤٢: از پیلی بھیت محلہ منیر خاں مرسلہ حضرت مولانا مولوی وصی احمد صاحب محدث سورتی رحمۃ الله علیہ ١٠ رجب ١٣١٥ھ

سوال اول

ولی ابعد،ولی اقرب کی غیبت میں اگر نکاح کردے تو ولی اقرب در صورت خلاف مرضی اس کے فسخ کرسکتا ہے یا نہیں؟

الجواب:

ہاں جبکہ غیبت منقطعہ نہ ہو،

فی الدرالمختار فلو زوج الابعد حال قیام الاقرب توقف علی اجازتہ [1]۔واﷲ تعالٰی اعلم۔

درمختارمیں ہے اگر بعید ولی نے قریب ولی کی موجودگی میں اس کی اجازت کے بغیر نکاح کیا توقریب کی اجازت پر موقوف ہوگا۔والله تعالٰی اعلم(ت)

 


 

 



[1] درمختار باب الولی مطبع مجتبائی دہلی ١/١٩٤



Total Pages: 739

Go To