We have moved all non-book items like Speeches, Madani Pearls, Pamphlets, Catalogs etc. in "Pamphlet Library"

Book Name:Fatawa Razawiyya jild 11

 

 

 

باب الولی

(ولی کا بیان)

 

 

بسم الله الرحمن الرحیم

نحمدہ ونصلی علٰی رسولہ الکریم

 

مسئلہ ٣٠٦:                            از کھنڈوا ضلع نماڑ                                        ١٦ جمادی الاولٰی ١٣٠٥ھ

کیافرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ لڑکی نابالغہ جس کی عمر آٹھ برس کی ہے،باپ اس کا اس کی شیرخوارگی میں انتقال کرگیا،پرورش ا س کی ماں نے کی اور وہی اس کی وارث وکفیل ہے،ایك چچا اس کا ہے وہ لڑکی کے باپ مرحوم سے تخمینًا چالیس سال سے بالکل علیحدہ ہے،کسی نوع کا واسطہ وتعلق باہمی نہیں۔اس لڑکی کا نکاح بے اجازت والدہ وعم کے ایسے مقام پر لے جاکر پڑھادیا جہاں ماں موجود نہ تھی،پس یہ نکاح جائز ہے یا نہیں؟ بینوا تو جروا۔

الجواب:

تقریرسوال سے واضح کہ اس لڑکی کا دادا یا کوئی جوان بھائی نہیں۔پس صورت مستفسرہ میں اس کا چچا ہی ا س کا ولی ہے جس کے ہوتے ماں کو بھی اختیار نہیں۔اور چچا کا باپ سے جداوبے علاقہ ہونا اس کی ولایت شرعیہ کو ساقط نہیں کرتا غایت درجہ قطع رحم ہوگا اس کی نہایت گناہ اور گناہ مسقط ولایت نہیں۔تنویر الابصار میں ہے:


 

 



Total Pages: 739

Go To