Book Name:Fatawa Razawiyya jild 10

یا انڈے پکانا، بیچنا، خریدنا، کھانا، جُوں کے ہلاك پر کسی طور باعث ہونا مثلًا مارنا، پھینکنا، کسی کو اس کے مارنے کا اشارہ کرنا، کپڑا اس کے مرجانے کے لیے دھونا یا دھوپ میں ڈالنا،

وسمہ عــــہ۱ یا مہندی کا خضاب لگانا، بال خطمی سے دھونا، گوند وغیرہ سے جمانا سب ناجائز ہے۔ اسی طرح تمام چھوٹے بڑے گناہ کو ہمیشہ بُرے ہیں اور احرام میں بہت زیادہ بُرے۔

م:                                                                                  وحکم مرأۃ کذالکنّما                                                                                            احرامھا فی وجھھا فلزم

ان لاتغطیہ وفی لباسھا                                                                                       المخیط تبقی وغطاء راسھا

ت: اور اسی طرح عورت کا حکم ہے لیکن اس کا احرام صرف چہرے میں ہے تو لازم ہو اکہ منہ چھپائے اور سِلے کپڑوں میں رہے۔ سرڈھکے۔

ش: یعنی اوپر جو باتیں گزریں ان میں عورت مثل مرد کے ہے مگر اسے سِلے کپڑے پہننا، سرڈھکنا روا ہے صرف چہرے پر کپڑا نہ عــــہ۲   آنے دے۔

ف: پردہ نشین عورت کوئی پنکھا وغیرہ منہ سے بچاہوا سامنے رکھے اور عورتیں لبیك بآواز  عــــہ۳ نہ کہیں،

عــــہ۱: مہندی دو وجہ سے حرام ہوئی: ایك تو خوشبو ہے، دوسرے اس کے لگانے سے بال چھپ جاتے ہیں توسر یا منہ کا ڈھانکنا ہوا، اور وسمہ اگر چہ خوشبو نہیں بال چھپائے گا، پھر سیاہ خضاب ہمیشہ ناجائز ہے مگر جہاد میں ، تو محرم کو بدرجہ اولیٰ ناجائز ہوا۔ حدیث میں ہے: دوسری حدیث میں ہے:

"وہ جنت یك بو نہ سونگھیں گے[1]۔"ہاں اگر کوئی رقیق تیل بے خوشبو جس سے بال کالے نہ ہوں لگایا جائے تو وہ اس اختلاف قاری وعلائی پر ہوگا جو اوپر گزرا، والله تعالٰی اعلم ۱۲ منہ)

عــــہ۲:کپڑے سے مراد ہر چھپانے والی چیز ہے، پنکھے کا مسئلہ اس پر دلیل ہے ۱۲ منہ)

عــــہ۳: بآواز کے یہ معنیٰ نہیں کہ چلا کر نہ ہو بلکہ یہ مراد ہے کہ آپ ہی سنے کسی اجنبی مرد کے کان تك نہ جائے کہ


 

 



[1] کنز العمال محظورات الخضاب حدیث۱۷۳۳۲موسسۃ الرسالہ بیروت۶ /۶۷۱



Total Pages: 836

Go To