Book Name:Fatawa Razawiyya jild 10

ف: نئے سفید ہوں تو بہتر ورنہ دھُلے اُجلے اور ان میں رفویا پیوند بھی اچھا نہیں، پر جائز ہے۔ا ور ہمیانی یا تلوار کے پر تلے کا ڈر نہیں۔

م:                                                                                  ینوی اداء النسك بالجنان                                                                   وفضلہ فی القول باللسان

ت: نیت کرے حج یا عمرہ کی دل سے اور زیادہ خوبی زبان سے کہنے میں ہے ۔

ش: یعنی جامع احرام پہن کر اب جوکچھ ادا کیا چاہتا ہے (حج خواہ  عمرہ یادونوں ) اس کی نیت دل سے کرے اور زبان سے بھی الفاظ نیت کہنا بہتر ہے ، مثلا الہی میں حج کی نیت کرتا ہوں اسے میرے لئے آسان کر اور قبول فرما ۔

م:                                                                                  ملبیا جھرا من المیقات                                                                                     وذاکر اﷲ فی الحالات

ت: لبّیك کہتا ہوا بآواز میقات سے اور خدا کی یاد کرتا ہوا مختلف حالوں میں۔

ش: میقات ان مقاموں کو کہتے ہیں جو شرع مطہر نے احرام کے لیے مقرر کیے ہیں کہ باہر عــــہ۱ سے مکہ معظمہ کا قصد کرنے والے کو بے احرام ان مقاموں سے آگے بڑھنا حرام ہے ، ہندیوں کو وہ جگہ سمندر میں آتی ہے جب کوہ یلملم کی یدھ میں پہنچتے ہیں۔

ف: رکن احرام کے صرف دو ہیں، دل سے نیت اور اس کے ساتھ زبان سے وہ ذکر جس میں الله تعالٰی کی تعظیم ہو، خواہ لبیك یا کچھ اور مثل سبحان الله یا الحمدلله یا الله اکبر یا اللھم اغفرلی عــــہ۲ وغیرہ ذلک، جب یہ دونوں عــــہ۳ باتیں پائی گئیں احرام باندھ گیا اور جو کچھ محرم پر حرام تھا

عــــہ۱:  باہر سے مکہ مکرمہ کا قصد اس لیے کہا کہ اگر آفاتی یعنی باہر والا میقات کے اندر کسی مکان مثل جدّہ یا خلیص کا قصد کرکے میقات میں داخل ہو جائے تو اب آفاتی نہ رہا میقاتی ہوگیا اسے وہاں سے مکہ معظمہ میں بے احرام جانا جائز ہے ۱۲ منہ)

عــــہ۲: اشارۃ الی انہ لا یشترط کون الذکر خالصّا کما فی تحریمۃ الصلٰوۃ بل یکفی مطلقا ولو مشوبا بالدعاء ھوالصحیح[1] کما فی المسلك المتقسط ۱۲ منہ (م)۔

اس میں اشارہ ہے کہ خالص ذکر شرط نہیں ہے جیسا کہ نماز کے تحریمہ میں ہوتا ہے بلکہ دعائیہ کلمات بھی ملے ہوں تو صحیح ہے جیسا کہ مسلك متقسط میں ہے ۱۲ منہ )

 

عــــہ۳: احرام کبھی تقلید وسوقِ بدنہ سے ہوتا ہے مگرا س کے بیان میں طول تھا اور ہندیوں میں اس کا رواج نہیں لٰہذا اسی پر اکتفاء کیا گیا ۱۲ منہ)


 

 



[1] مسلك متقسط مع ارشادی الساری باب ا لاحرام دارالکتاب العربی بیروت ص۷۰



Total Pages: 836

Go To