Book Name:Fatawa Razawiyya jild 10

برتن وامثالہا سے ہوسکتا ہے، دہلی کے متاخرین علماء نے یہ حیلہ لکھا مگر نظرِ فقہی میں یہ بھی صحیح نہیں آتا، فقیر غفرلہ المولی القدیر نے اس کی تحقیق منیر اپنے فتاوٰی میں ذکر کی یہاں اسی قدر کافی کہ کفارے میں مال دینا چاہئے اور دین کہ ساقط کردیا مال نہیں۔تبیین الحقائق میں ہے:

لوکان لہ دین علی فقیر فابرأہ منہ سقط زکٰوتہ عنہ لانہ کا لھلاك فلو ابرأہ عن البعض سقط زکٰوۃ ذٰلك البعض لما قلنا وزکٰوۃ الباقی لاتسقط عنہ ولو نوٰی بہ الاداء عن الباقی لان الساقط لیس بمال والباقی یجوز ان یکون مالافکان الباقی خیرامنہ فلایجوز الساقط عنہ[1]۔

اگر کسی کا فقیر پر قرض تھا معاف کرکے قرض سے اسے بری کردیا تو اس قرض کی زکٰوۃ ساقط ہوجائے گی کیونکہ ہلاك ہونے والے مال کی طرح ہے اور اگر کچھ معاف کیا تومذکورہ دلیل کی بنا پر اتنے حصّہ کی زکٰوۃ ساقط ہوجائے گی لیکن باقی حصّہ کی زکوٰۃ ساقط نہ ہوگی اگر چہ وُہ ساقط ہونیوالے حصہ کو باقی کی زکوٰۃ میں شمار کرے کیونکہ ساقط ہونے والا مال نہیں اور باقی رہنے والے کا مال ہونا ممکن ہے اوربقیہ حصہ اس سے بہتر ہے لہذا اس سے اسقاط جائز نہ ہوگا۔ (ت)

بلکہ ضرور ہے کہ وہ دین اس سے وصول کرکے قبضہ میں لاکر کفارے میں دیں۔  درمختار میں ہے :

اوصی لصلواتہ وثلث  مالہ دیون علی المعسرین فترکہا الوصی لھم عن الفدیۃ لم تجزہ ولابد من القبض ثم التصدق علیھم [2]اھ وتمام الکلام علی ازالۃ الاوھام فی فتاوٰنا فلیرا جعھا من یتخالج فی صدرہ شئی ولایعجل، واﷲتعالٰی اعلم۔

کسی نے اپنی نمازوں کے لئے وصیت کی اس حال میں کہ اس کا ثلث مال تنگ دستوں پر قرض تھا تو وصی نے نمازوں کے فدیہ کے طور پر ان تنگ دستوں کاقرض چھوڑ دیا تو یہ کافی نہ ہوگا کیونکہ پہلے اس مال پر قبضہ ضروری ہے اس کے بعد ان پر صدقہ کرنا جائز ہوگا اھ ازالہ اوہام کے لئے تفصیلی گفتگو ہمارے فتاوٰی میں ہے، جس کے سینے میں کوئی شے کھٹك رہی ہو وہ اس کامطالعہ کرے اور جلد بازی سے کام نہ لے۔ واﷲتعالٰی اعلم

مسئلہ ۲۲۸:         از بلگرام ضلع ہردوئی محلہ میدان پورہ مرسلہ حضرت سید ابراہیم میاں صاحب ۱۴رمضان المبارك ۱۳۱۱ھ

شبِ سہ شنبہ ۱۲ رمضان المبارك کو ہم لوگوں کی آنکھ قریب ساڑھے چار بجے کُھلی، جلد جلد ہم لوگوں نے


 

 



[1] تبیین الحقائق     کتاب الزکوٰۃ     المطبعۃ الکبری الامیریۃ مصر         ۱/۲۵۸

[2] درمختار         فصل فی وصایا الذمی وغیرہ    مجتبائی دہلی۲/۳۳۴



Total Pages: 836

Go To