Book Name:Fatawa Razawiyya jild 9

 

 

 

 

رسالہ

الحُجّۃ الفائحۃ لطیب التعین والفاتحۃ  ١٣٠٧ھ

(دن متعین کرنے اور فاتحہ کے عمدہ ہونے پر عطر بیزحجت)

 

بسم اﷲ الرحمن الرحیم

مسئلہ ۱۸۳ :

سوم ودہم وچہلم وششماہی وسالیانہ کہ دریں دیار ہند مروہ ست ، اور بعض علماء بدعت شنیعہ مکروہہ گویند واقوال چند بردرستی اوست وطعامے کہ بعد موتے بہ نیت ثواب می پژند وہردودست برداشتہ فاتحہ ہندآں راعلماء ظواہر غیر مقلدین بباعث فاتحہ، مردار وحرام دارنستہ گویند ، ایں طریقہ درزمانہ نبوی واصحاب کبار مصطفوی وتابعین واتباع تابعین رضوان اﷲ تعالٰی علیہم اجمعین بنود بلکہ طعام وشیرینی کہ نیاز بزرگان دین است مثل مردار پس

تیجہ ، دسواں ، چالیسواں، چھ ماہی، برسی جو دیار ہند میں رائج ہے اسے بعض علماء مکروہ بدعت شنیعہ کہتے ہیں، اور کچھ کے اقوال یہ ہیں کہ وہ درست ہے۔ اور کسی موت کے بعد ثواب کی نیت سے جوکھانا پکاتے ہیں اور دونوں ہاتھ اٹھا کر فاتحہ دیتے ہیں اس کو غیر مقلد ظاہری علماء فاتحہ کی وجہ سے مردار اور حرام جانتے ہیں، وہ کہتے ہین کہ یہ طریقہ حضور بنی اکرم صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم ،ان کے بزرگ اصحابہ ، تابعین ا ور اتباع تابعین رضوان اﷲ تعالٰی اجمعین کے زمانے میں

 


 

 



Total Pages: 948

Go To