Book Name:Fatawa Razawiyya jild 3

کہ وہ زمین مسجد ہی کے درجہ میں ہے۔ (ت)

جب یہ جمع کی ہوئی مٹّی کہ خودزمینِ مسجد پر ہے جواصل مسجد ہے جس کاتعلق مسجد سے ابھی بالکلیہ منقطع بھی نہ ہوا اس سے کیچڑ کے پاؤں پونچھنا کہ فی الحال تقذیر ہے مکروہ نہ ہوا تویہ مٹّی کہ دیوارِ مسجد پرتھی جوفرع مسجد اور حکم مسجد میں ہے اورہاتھوں میں لگ کردیوارمسجد سے بھی یکسر منقطع ہوگئی ، منہ اورہاتھوں پرپھیرنا کہ فی الحال موجبِ استعمال بھی نہیں کیونکر مکروہ ہوسکتاہے۔

دوم : دیوارِ مسجد وقف ہے اور وقف اسی کام میں لایاجاسکتاہے جس غرض کے لیے وقف کیاگیا۔ دوسرے کام میں لانا منع ہے خصوصًا مسجد کہ اس کامعاملہ عامہ اوقاف سے بھی تنگ ترہے اور تیمم دوسراکام ہے کہ دیوارِ مسجد اس غرض کے لیے نہیں بنائی جاتی۔ شاید گنگوہی خیال میں تووہی پانی پرقیاس باطل ہوگا کہ مسجد میں وضو کے ساتھ اسے ذکرکیا اور ایسے اذہانِ سافلہ وعقولِ ناقصہ سے کچھ مستبعد نہیں کہ یہ شبہہ بھی گزرے جواوّل سے افسد ہے تیمم جوکچھ تصرف ہے اپنے چہرہ ودست پرہے دیوار سے صرف چھونے ہاتھ لگانے کاتعلق ہوگایہ دیوار۱  میں کوئی تصرف نہ کہلائے گا ورنہ مکروہ نہیں ، بلکہ حرام ہوتااور نہ صرف دیوارِ مسجد بلکہ دیوارہروقف بلکہ دیوار یتیم بلکہ ہرنابالغ بلکہ بے اذن مالك ہردیوارمملوك سے تیمم کرنا بلکہ اس پرہاتھ لگانایاانگلی سے چھونا یادیوارِ مسجد سے پیٹھ لگانا سب حرام ہوتا اور اس کاقائل نہ ہوگا مگرسخت جاہل ، ہاتھ لگانے سے دیوار کاکچھ خرچ نہیں ہوتاچراغ میں تیل بتّی کاخرچ ہے پھر بھی مسجد۲  کے چراغ سے کہ مسجد کے لیے روشن ہے خط پڑھنا یاکتاب دیکھنا یاسبق پڑھنا پڑھانابلاشبہہ رَوا ہے ، فتاوٰی خانیہ و فتاوٰی ہندیہ میں ہے :

ان ارادانسان ان یدرس کتابابسراج المسجد ان کان سراج المسجدموضوعا فی المسجد للصلاۃ قیل لاباس بہ و ان کان موضوعًا فی المسجد لاللصلاۃ بان فرغ القوم من صلاتھم وذھبوا الی بیوتہم وبقی السراج فی المسجد قالوا لاباس بان یدرس بہ الی ثلث اللیل و فی مازاد علی الثلث      

اگرکوئی آدمی مسجد کے چراغ سے کسی کتاب کاسبق پڑھنا چاہے تواگرمسجد کاچراغ مسجد کے اندر نماز کے لیے رکھاگیا ہے توکہاگیا کہ اس میں حرج نہیں اور اگرمسجد کے اندر نماز کے لیے نہیں رکھاہے اس طرح کہ لوگ اپنی نماز سے فارغ ہوکر گھروں کوچلے گئے اور چراغ مسجد میں رہ گیا توعلمانے فرمایا ہے کہ تہائی رات تك اس سے درس دینے میں حرج نہیں اور تہائی سے زیادہ

لایکون لہ حق التدریس[1]۔

میں اسے حق تدریس نہ ہوگا۔ (ت)

ضرب دوم : کتب معتمدہ میں زعم گنگوہی کاخلاف۔

اوّلًا :  یہی۱  پاؤں پونچھنے کامسئلہ کہ تین ۳ وجہ سے بحکم دلالۃ النص دیوارمسجد سے جوازتیمم پردلیل صاف کما مر تقریرہ (جیسا کہ اس کی تقریر گزرچکی۔ ت)

ثانیًا : نمبر۱۴۲ ۲ میں گزرا کہ مسجد میں احتلام واقع ہواور نکلناچاہے توبہت اکابر نے بے تیمم کیے فورًا نکل جانے کی اجازت دی اور تیم کرکے نکلنا صرف مستحب رکھا ۱ذخیرہ و۲حلیہ و۳ہندیہ و۴تاتارخانیہ و۵خانیہ موجبات الغسل و۶خزانۃ المفتین و۷نہرالفائق و۸سراج وہاج و۹درمختار و۱۰ردالمحتار و۱۱طحطاوی علی مراقی الفلاح و۱۲ابوالسعود و۱۳طحطاوی علی الدرالمختار میں اسی پرجزم واعتماد فرمایاظاہر ہے کہ یہ تیمم غالبًا نہ ہوگا مگر دیورا یازمین مسجد سے اگر ان سے تیمم مکروہ ہوتاتوایك امرجائز سے بچنے کے لیے ہرگز اس کی اجازت بھی نہ ہوتی نہ کہ مستحب قرارپاتا یہ استحبابِ علماکراہت گنگوہی کاصریح دافع ہے۔

ولله الحمد والله تعالٰی اعلم٭ وصلی الله تعالٰی وبارك وسلّم٭علی الحبیب الاکرم٭والشفیع الاعظم٭ھادی الامم٭الی الطریق الامم٭واٰلہٖ وصحبہ ذوی الجود والکرم٭والحمدلله ربّ العٰلمین علی ماھدی وعلم٭وعلمہ عز شانہ اتم٭وحکمہ جل مجدہ احکم٭

اور خداہی کے لیے حمد ہے ، اور خدائے برترہی خوب جانتا ہے ۔ اورالله تعالی رحمت وبرکت وسلامتی نازل فرمائے کریم تر حبیب ، عظیم تر شفیع ، راہ راست کی طرف امتوں کے ہادی پر ، اور جُودوکرم والی ان کی آل واصحاب پر ، اور سارے جہانوں کے مالك خداہی کے لیے حمد ہے اس پر جو اس نے ہدایت وتعلیم فرمائی اور اس شان غالب والے کاعلم تام اور اس مجدبزرگی والے کاحکم محکم ہے۔ (ت)

____________________

 

(نوٹ : باب العقائد کویہاں سے نکال لیاگیا ہے اسے عقائد والی جلد میں لایاجائے گا)

مآخذومراجع

نام                                                           مصنف                                     سن وفات ہجری

ا

۱۔              الاجزاء فی الحدیث                                              عبدالرحمن بن عمربن محمد البغدادی المعروف بالنحاس                   ۴۱۶

۲۔             الاجناس فی الفروع                                             ابوالعباس احمد بن محمد الناطفی الحنفی                                           ۴۴۶

۳۔             الاختیارشرح المختار                                        عبداللہ بن محمود (بن مودود) الحنفی                                          ۶۸۳

۴۔             الادب المفرد           للبخاری                                        محمد بن اسمٰعیل البخاری                                                         ۲۵۶

۵۔             ارشاد الساری شرح البخاری                                 شہاب الدین احمد بن محمد القسطلانی                                            ۹۲۳

 



[1]   فتاوٰی قاضی خان باب الرجل یجعل دارہ مسجداالخ مطبوعہ نولکشورلکھنؤ ۴ / ۷۱۶



Total Pages: 232

Go To