$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

       اور دوبہنیں اکٹھی کرنا نکاح میں حرام۔

        حضور نبی کریم   صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم نے واضح فرمادیا کہ پھوپھی بھتیجی اور خالہ بھانجی

بھی اسی حکم میں داخل ہیں ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۲۔    پارہ      ۶        ع          ۵       المائدۃ،   ۳

 ۲۳۔     پارہ       ۸        ع         ۱۱      الاعراف           ۳۲

۲۴۔     پارہ       ۴        ع       ۱۵     النسائ  ۲۳

        غرض کہ وضووغسل کی تفصیل ہو یانماز روزہ کے مسائل ،حج وزکوۃ کے احکام ہوں یانکاح ووراثت کے قوانین ، سب کے تفصیلی مباحث میں آپکو سنت رسول کی جلوہ گری نمایاں

ملے گی ۔

       ان حقائق کو تسلیم کرلینے کے بعد یہ بات روزروشن کی طرح  عیاں ہوجاتی ہے کہ اللہ تبارک و تعالی نے آپکو محض قانون داں ہی نہیں بنایا بلکہ تبلیغ شرائع کیلئے مکمل اختیار بھی مرحمت

فرمایا اور سب کو حقیقی طور پر اپنی طرف منسوب فرماکر یوں ارشاد فرمایا ۔

        وماینطق عن الہوی ،ان ہوالاوحی یوحی ،(۲۵)

        پس ازروئے نص قرآنی جوذات اس درجہ موٗقر ومعتبرہوئی کہ قرآن عظیم کی شارح ومفسر قراردی گئی ،اسکے خاص کو عام اورعام کوخاص کرنے والی بتائی گئی ، مطلق کو مقید اور مقید کو مطلق فرمانے والی مانی گئی ،حد یہ کہ وہ صرف قانون دان ہی نہیں ،قانون سازی کے درجہ  پر فائز ہوئی۔ اسکی زبان اور اسکا کلام اس درجہ بے اعتبار وغیر معتبر ہوگا کہ اسکو ردی کی ٹوکری میں ڈالدیا

جائے ،کون انسان اسے باورکریگا ۔مگر افسوس کہ ۔

 خود بدلتے نہیں  قرآں کو  بدل دیتے ہیں    ٭        ہوئے کس درجہ فقیہان حرم بے توفیق  

            منکرین حدیث کے شبہات اورانکا ازالہ

       منکرین حدیث قرآن کے سوا تمام سرما  یۂ شریعت کو مہمل قرار دیتے ہیں ۔انکار حدیث کا شوشہ زمانۂ قدیم میں معتزلہ وخوارج نے چھوڑاتھا لیکن ایک دو صدی کے بعد وہ خود ہی اس

دنیا سے ناپید ہوگئے اور ان کا یہ فتنہ بھی اپنی موت آپ مرگیا تھا ۔

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html