Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

۱۴۔     پارہ  ۱۴  ع  ۱۲ النحل                                               ۴۴

        اسی طرح معانی ومراد کلام الہی کی وضاحت کیلئے ضرورت تھی کہ آپ انتظام فرماتے، چنانچہ آپ نے ان تمام چیزوں کو جنکی امت کو ضرورت تھی مختلف مواقع پر اپنے اقوال وافعال اور تقریرات سے بیان فرمادیا ۔اس طرح کبھی آپ مجمل کی تفسیر فرماتے اور عام کو خاص اور مطلق کو مقید فرماتے جسکی بے شمارمثالیں آج بھی کتابوں میں موجود پائیں گے ۔ چندمثالیں ہدیہ ناظریں ہیں ۔

       قرآن کریم میں ہے :۔

       والسارق والسارقۃ فاقطعواایدیہما جزاء بما کسبا ۔(۱۵)

        اور جو مرد یاعورت چو ر ہوتو انکا ہاتھ کاٹو ان کے کئے کا بدلہ۔

       اس آیت میں لفظ ’سارق ،اور، ید، دونوں مطلق وارد ہوئے ہیں،ان دونوں کی وضاحت  احادیث نبویہ کے بغیر مشکل ہے کہ افراط وتفریط میں پڑنے کا اندیشہ ہے ،لہذاحدیث

نے ہماری اس طرح رہنمائی فرمائی ۔

       لاتقطع الید الافی ثمن المجن وثمنہ یؤمئذدینار ۔(۱۶)

       چور کا ہاتھ ایک ڈھال کی قیمت میں ہی کاٹاجاتاتھا اور ڈھال کی قیمت اس زمانہ اقدس

میں ایک دینار تھی ۔

       دوسری روایت میں ہے ۔

        کان ثمن المجن علی عہد رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم یقوم

عشرۃ دراہم ۔(۱۷)

       ڈھال کی قیمت حضور اقدس   صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کے عہد پاک میں دس درہم تھی اسی طرح مقدار’ ید‘ کی تشریح میں ہے کہ حضور اکرم   صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کے زمانہ میں

پہونچے سے ہاتھ کاٹاجاتاتھا۔

       اگر اس طرح کی تشریحات نہ ہوتیں تو یہ فیصلہ نہ ہوپاتا کہ کتنی رقم کی چیز پر ہاتھ

کاٹاجائے اور کہاں سے کاٹاجائے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۵۔    پارہ ۶ ع  ۱۰ المائدۃ،

 



Total Pages: 604

Go To