Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

علیہ التحیۃ والثناء ۔

        لہذا زندگی کے ہر موڑ پر آپکی سنت وسیرت نے لوگوں کیلئے آسانی کی شاہراہیں قائم فرمائیں اور ہر قرن وصدی میں اسلام کی اس عظیم دولت سے لوگ سرفراز رہے ۔رشدوہدایت کیلئے ہر دور میں سنت رسول کی ضرورت کو محسوس کیا گیا اور گمرہی وبے دینی سے نجات حاصل کرنے کیلئے کتاب اللہ کے ساتھ سنت کو خاص اہمیت دی جاتی رہی ۔اور حقیقت یہ ہے کہ خود نبی کریم صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم نے اپنی سنت کریم کودین اسلام میں اسی حیثیت  سے اجاگر فرمایا، فرمان رسول ہے ۔

                               ترکت فیکم امرین لن تضلوا ماتمسکتم بھما ،کتاب اللہ وسنۃ ر سولہ  ۔(۱۱)

        میں تم میں دوچیزیں چھوڑرہاہوں ،جب  تک ان دونوں پر عمل پیرا  رہوگے ہرگز ہلاک نہیں ہوگے ،اللہ کی کتاب ، اور اسکے رسول کی سنت ۔

        جن لوگوں نے حضور سید عالم  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کو اللہ عزوجل کا رسول بر حق تسلیم کیاہے انکے لئے اس بات کی گنجائش نہیں رہ جاتی کہ آپکے فرامین کو بحیثیت فرمان رسول نشانۂ تنقید بنائیں اور اسکے انکار کی کوئی راہ پیداکریں ۔اللہ کے رسول  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم نے ان تمام چیزوں کی مذمت خود اپنی حیات مقدسہ میں فرمائی اور منکرین حدیث  وسنت کی واضح الفاظ میں تردید فرماکر قیامت تک آنے والے لوگوں کو خبردار کردیا ۔فرماتے ہیں ۔

        لاالفین احدکم متکئا علی اریکتہ یاتیہ الامرمما امرت بہ اونہیت عنہ  فیقول : لاادری، ماوجدنا فی کتاب اللہ اتبعناہ ۔(۱۲)

       میں تمہیں اس حالت میں نہ پائوں کہ تم میں سے کوئی اپنی مسہری پر تکیہ لگائے بیٹھا ہو اور اس کے پاس میرا کوئی حکم یا میری جانب سے کوئی ممانعت پہونچے تووہ اس کے جواب میں یہ کہے : ہم نہیں جانتے،ہم تو اس کی پیروی کریں گے  جو اللہ کی کتاب میں پائیں گے۔

       نیز فرماتے ہیں: ۔

       یوشک الرجل متکئا علی اریکتہ یحدث بحدیث من حدیثی فیقول : بیننا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۱۔    الموطا لمالک                                                     ۸۹۹

 ۱۲۔    السنن لا بن ماجہ، عن ابی  رافع ، رضی اللہ تعالیٰ عنہ                  ۱/۳

 



Total Pages: 604

Go To