$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

کہ راوی استاذ و شیخ کے بجائے کتب  و صحائف سے حدیث حاصل کرتا تھا جس کے متعلق ایک  زمانہ تک  یہ نظر یہ رہا کہ اس طرح تحصیل حدیث منع ہے ، لیکن جب مدون ہوگیا اور محض زبانی یاد داشت پر تکیہ نہ رہا تو وہ ممانعت بھی نہ رہی ۔

مشہور تصانیف فن

  ٭    التصحیف للدار قطنی                م ۳۸۵ھ

٭     اصلاح خطاء المحدثین للخطابی     م ۳۲۸ھ

٭     تصحیفات المحدثین للعسکری       م ۳۸۲ھ

شاذ و محفوظ

 تعریف :- وہ حدیث جسے کوئی مقبول عادل راوی ایسے راوی کے خلاف روایت کرے جومرتبہ میں اس سے فائق ہے ۔

        اس کے مقابل کو محفوظ کہتے ہیں: ۔

               شاذ کی دو قسمیں ہیں :۔

       X  شاذ السند                  Xشاذ المتن   

 شاذ السند : -  وہ حدیث جس کی سند میں شذوذ ہو ۔ جیسے:۔

        عن سفیان بن عینیۃ عن عمر و بن دینار عن عوسجۃ عن ابن عباس  رضی اللہ تعالیٰ عنہما  ان رجلا توفی علی  عہد رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم و لم یدع و ارثا الا مولی ہو ا عتقہ ۔(۱۰۴)

          حضرت  عبد اللہ  بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ  رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے عہد پاک میں ایک شخص کا انتقال ہوا اور اس نے اپنے آقا کے سوا جس نے اسے آزاد کیا تھا کسی دوسرے کو وارث نہ چھوڑا ۔

        یہ حدیث متصل ہے ، سفیان کی طرح ابن جریج نے بھی  اسے موصولا روایت کیا ہے ۔ لیکن حماد بن زید نے مرسلا روایت کیا ۔ یعنی حضرت ابن عباس کو واسطہ نہیں بنایا ۔

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html