Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

              اس حدیث میں یہ جملہ  ’ثم  أتیتہم  فرأیتہم الخ‘ عاصم کے نزدیک  اس سند سے نہیں  بلکہ  دوسری  سند سے ثابت  تھا مگر انکے شاگرد ’شریک ‘  نے اسے  اول متن  کے ساتھ  ملا کر  مجموعہ  کو  اس سند کے ساتھ  عاصم  سے روایت کر دیا۔

       دوسری سند یوں ہے ۔

       حدثنا محمد  بن سلیمان  الانباری ، اخبر نا وکیع  عن  شریک  عن عاصم  بن کلیب  عن  علقمۃ  بن وائل عن وائل بن حجر قال :اتیت النبی صلی  اللہ تعالیٰ علیہ وسلم فی الشتاء فرأیت اصحابہ یرفعون ایدیہم فی ثیا بہم  فی

 الصلوۃ ۔

        حضرت وائل  بن حجر رضی اللہ  تعالی  عنہ سے روایت ہے کہ  میں  حضور نبی کریم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی خدمت  میں موسم  سرما میں  حاضر ہوا  تو میں نے آپکے  صحابہ کو دیکھا  کہ نماز  میں اپنے  ہاتھوں کو کپڑوں  کے  اندر  ہی  اٹھاتے  ہیں ۔

        پہلی سند  میں  عاصم  نے اپنے  والد کلیب   سے روایت کی  ہے اور انہوں نے وائل  بن حجر   سے ،۔ جبکہ  اس دوسری  سند میں عاصم کی روایت  علقمہ  بن وائل  سے ہے ۔

٭      ایک شیخ  کے نزدیک  دو متن  دو مختلف سندوں  سے مروی  تھے مگر  انکے  شاگرد نے دونوں  کو ایک  سند سے روایت کر دیا ۔  جیسے  یہ  دو حدیثیں  امام  مالک نے  روایت کیں۔

       مالک  عن  ابن  شہاب  عن انس  بن مالک  ان رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم  قال:  لا تبا غضوا و لا  تحاسدوا و لا تدا بروا، و کونوا عباد اللہ  اخوانا، ولا یحل لمسلم ان  یہجر اخاہ فوق  ثلث لیال ۔(۷۷)

        حضرت انس  بن  مالک  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے  ارشاد فرمایا :  آپس  میں بغض نہ رکھو ،  حسد نہ کرو ،  قطع تعلق نہ کرو ،  اللہ تعالیٰ  کے فرمانبردار  بندے  بنکر آپس میں بھائی چارگی  کے ساتھ  رہو ، کسی مسلمان  کو  جائز نہیں کہ  وہ اپنے بھائی   کو تین  دن سے زیادہ  چھوڑے  رہے ۔

       مالک  عن ابی  الزناد عن الاعرج عن ابی ہریرۃ  ان رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم قال :  ایاکم  و الظن،  فان الظن اکذب الحدیث،  ولا تجسسوا ولا تحسسوا ولا  تنافسوا ولا  تحاسدوا ولا تبا غضوا ولا تدا  بروا، وکونوا عباد اللہ اخوانا۔(۷۸)

       حضرت  ابو ہریرہ  رضی اللہ  تعالی عنہ  سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے  ارشاد فرمایا



Total Pages: 604

Go To