Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

ثابت و  منقول نہ ہو۔

 حکم و مرتبہ :۔ موضوع  کے بعد اسکا مرتبہ  ہے ، اسکی  یہ روایت  مقبول نہیں ہاں جب   توبہ 

کرلے اور امارات صدق ظاہر  ہو جائیں  تو اسکی حدیث مقبول ہوگی ،  اور جس  شخص سے  نادراً اپنے کلام میں کذب  صادر ہو اور حدیث میں کبھی نہ ہو تو اسکی  حدیث کو موضوع یا متروک  نہیں  کہتے ۔

        پھر بھی  پہلی  صورت میں مردود رہے گی۔

 مثال:۔ عن عمرو بن  شمر ،  عن جابر،  عن ابی الطفیل ،  عن علی و عمار قالا : کان النبی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم یقنت فی الفجر ویکبر یوم عرفۃ من صلوۃ الغداۃ ،و یقطع صلوۃ العصر آخر ایام  التشریق۔ (۷۱)

        حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی  علیہ وسلم  فجر  میں قنوت پڑھتے، اور تکبیر تشریق نویں  ذی الحجہ کی فجر سے  تیرہوی کی عصر  تک کہتے  تھے۔

        اس حدیث کی سند میں  عمر وبن  شمر  جعفی  شیعی  کوفی  ہے،  ابن حبان  نے کہا: یہ رافضی  تبرائی تھا۔

 ؁       یحیی بن معین نے  فرمایا: اسکی  حدیث نہ لکھی جائے۔

       امام بخاری نے فرمایا:   منکر الحدیث ہے ۔

       امام نسائی  اور دار قطنی  نے متروک  الحدیث کہا۔( ۷۲)

 منکر

 تعریف:۔ جسکی  سند میں  کوئی  راوی   فسق یاکثرت غلط یا فرط غفلت سے  متصف ہو ۔

 حکم و مرتبہ :۔ یہ حدیث ضعیف کہلا تی  ہے، اور تعریف  میں جن  تین  اوصاف کا تذکرہ  ہوا

ضعف میں بھی  اسی ترتیب کا لحاظ ہو تاہے، یعنی  بدتر سے کمتر کی طرف۔  لہذا زیادہ قابل   رد   بر بنائے فسق ہوگی ،  و علی ہذا۔

 مثال :۔  حدثنا ابو البشر بکر بن خلف،  ثنا یحیی بن محمد قیس المدنی ،  ثنا ہشام  بن  عروۃ  عن ابیہ  عن عائشۃ  قالت: قا ل رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم :کلوا البلح بالتمر ،کلوا الخلق بالجدید فان  الشیطان یغضب۔ ( ۷۳)

 



Total Pages: 604

Go To