$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

جرح کی جائے۔

                     اسباب طعن دس ہیں :۔

       ٭پانچ عدالت سے  متعلق               ٭پانچ ضبط  سے متعلق

                     عدا لت  میں   طعن کے وجوہ یہ  ہیں ۔

 Xکذب      Xاتہام کذب   X فسق               Xبدعت      X جہالت

                     ضبط میں  طعن  کے وجوہ یہ ہیں ۔

Xفرط غفلت   Xکثرت غلط  X  سوء حفظ    Xکثرت وہم X  مخالفت ثقات 

       اب بدتر سے کم تر کی طرف  ترتیب ملاحظہ ہو۔

 موضوع

 تعریف:۔ وہ  مضمون  جسکو  بصورت حدیث  حضور نبی کریم صلی اللہ تعالیٰ  علیہ وسلم کی طرف 

کذب بیانی سے منسوب کیا جائے۔

       اسکی تین  صورتیں  ہوتی ہیں ۔

 ٭     کبھی محض اپنی طرف سے گڑھ کر کوئی  بات حضور کی طرف منسوب کی جاتی ہے۔

 ٭    کبھی کسی کی کوئی   بات حضور کی طرف منسوب کی جاتی ہے۔

٭    کبھی  ضعیف حدیث کے ساتھ قوی  سند  لگا کر۔

        اس آخری  صورت  میں اصل  نسبت تو جھوٹی نہیں  ہوتی لیکن حتمی و یقینی  شکل  بنا کر  پیش کرنا واقعی  جھوٹ ہے ۔

 حکم و مرتبہ :۔ اسکو  حدیث مجازاکہتے ہیں  ورنہ  در حقیقت یہ حدیث ہی نہیں ، اور جس  حدیث

کی وضع کا علم  ہو اس میں وضع کی صراحت کے  بغیر   اسکی  روایت کرنا جائز   نہیں ۔

       بعض صوفیہ  اور فرقہ کرامیہ   ترغیب و ترہیب  میں ایسی  روایت  کے جواز کے قائل  ہیں  مگر جمہور اسکے خلاف ہیں ،  امام  الحرمین نے تو واضع حدیث کو کا فرتک کہا ہے۔

       یہ جرم  اتنا   قبیح ہے کہ کسی سے متعلق  ایک مرتبہ بھی  یہ حرکت ثابت ہو جائے تو پھر کبھی  اسکی  روایت



Total Pages: 604

Go To
$footer_html